Wednesday , August 16 2017
Home / شہر کی خبریں / آئندہ 50 دنوں میں 2500 ٹیچرس کے تقررات ، امیدواروں کو بہتر مواقع

آئندہ 50 دنوں میں 2500 ٹیچرس کے تقررات ، امیدواروں کو بہتر مواقع

سی ای ڈی ایم میں ٹیٹ کوچنگ کا افتتاح ، اے کے خاں ، پروفیسر ایس اے شکور و دیگر کا خطاب
حیدرآباد۔ 11۔ اپریل ( سیاست نیوز) ڈائرکٹر جنرل اینٹی کرپشن بیورو اے کے خاں نے ٹیچرس ٹریننگ کی طالبات کو مشورہ دیا کہ وہ محنت اور جستجو کے ساتھ ٹریننگ حاصل کریں تاکہ وہ ایک قابل ٹیچر بنتے ہوئے سماج میں ذمہ دار شہری تیار کریں۔ اے کے خاں آج سنٹر فار ایجوکیشنل ڈیولپمنٹ آف میناریٹیز (CEDM) نظام کالج میں تلنگانہ ٹیٹ کے اسٹڈی میٹریل کی اجرائی تقریب سے خطاب کر رہے تھے۔ انہوں نے کہا کہ پبلک سرویس کمیشن کے ذریعہ آئندہ 50 دن میں مختلف اقامتی اسکولس کیلئے 2500 ٹیچرس کے تقررات کئے جائیں گے۔ اس طرح اقلیتی طبقہ سے تعلق رکھنے والے امیدواروں کیلئے بہتر مواقع موجود ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اقلیتوں کے اقامتی اسکولس کے علاوہ ایس سی ، ایس ٹی اور بی سی طبقات کے اقامتی اسکولس میں تقررات کا اعلامیہ پبلک سرویس کمیشن کی جانب سے جاری کردیا گیا ہے۔ اقلیتی اقامتی مدارس میں پرنسپل اور ٹیچرس سمیت 700 رکنی عملہ کا پہلے مرحلہ میں تقرر کیا جائے گا ۔ انہوں نے کہا کہ دیگر طبقات کے اقامتی مدارس میں بھی تقررات کے موقع پر 4 فیصد مسلم تحفظات کے ذریعہ اقلیتی طلبہ کو مواقع موجود ہوں گے۔ اے کے خاں نے کہا کہ اقلیتوں کی تعلیمی اور معاشی ترقی کیلئے چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ کی خصوصی دلچسپی سے 120 انگلش میڈیم اقامتی اسکولس کے قیام کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ ان اسکولوں کیلئے 2500 ٹیچرس کی ضرورت پڑے گی اور یہ خوش آئیند بات ہے کہ سی ای ڈی ایم کے ذریعہ 2000 طلبہ و طالبات کوچنگ حاصل کر رہے ہیں۔ انہوں نے امید ظاہر کی کہ ٹیٹ میں کامیابی کے بعد طلبہ دیگر درکار امتحانات میں بھی بہتر مظاہرہ کرتے ہوئے اپنے لئے روزگار کو یقینی بنائیں گے۔ اے کے خاں نے کہا کہ اقامتی اسکولس کے لئے پرنسپلس کے تقررات راست طور پر ہوں گے۔ اس طرح اگر موجودہ امیدوار پرنسپل کیلئے منتخب ہوتے ہیں تو آئندہ 20 تا 25 برسوں تک وہ برقرار رہیں گے۔ پرنسپل کے عہدہ کیلئے تنخواہ 60 تا 70 ہزار ہوگی جبکہ ٹیچرس کی تنخواہ 40,000 تک حاصل ہوگی۔ انہوں نے کہا کہ آنے والے دنوں میں تلنگانہ میں اساتذہ کے عہدوں کیلئے بہتر مواقع موجود ہیں کیونکہ حکومت کے جی تا پی جی مفت تعلیم کی اسکیم پر عمل کرنے کا منصوبہ رکھتی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اسلام میں حصول تعلیم کے سلسلہ میں لڑکے اور لڑکیوں میں کوئی امتیاز نہیں ہے ۔ حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی حیات طیبہ اور کئی احادیث میں اس کا ثبوت ملتا ہے۔ قرآن کی پہلی وحی میں تعلیم کی اہمیت کو اجاگر کیا گیا۔ اسلامی غزوات کے موقع پر غیر مسلم قیدیوں میں اگر کوئی تعلیم یافتہ ہوتا تو اس کی رہائی کیلئے ایک شخص کو تعلیم دینا شرط مقرر کی جاتی۔ انہوں نے بتایا کہ اقلیتوں کے انگلش میڈیم اقامتی اسکولس میں ہر اسکول پانچ ایکر اراضی پر مشتمل ہوگا اور حکومت نے اسکولس کی تعمیر کیلئے 20 کروڑ روپئے مختص کئے ہیں۔ ہر اسکول میں پانچویں تا انٹرمیڈیٹ تعلیم کا اہتمام کیا جارہا ہے اور پہلے مرحلہ میں پانچویں تا ساتویں جماعت تک کلاسس ہوں گی۔ ہر طالب علم پر سالانہ 80,000 روپئے خرچ کئے جارہے ہیں۔ داخلوں کیلئے سرپرستوں کو ایک پیسہ بھی خرچ کرنے کی ضرورت نہیں۔ ایسے افراد جن کی آمدنی شہری علاقوں میں دو لاکھ سالانہ اور دیہی علاقوں میں دیڑھ لاکھ روپئے ہو، ان کے بچے اسکولوں میں داخلہ کیلئے اہل ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ حکومت اقلیتی طلبہ کو سیول سرویس کی معیاری کوچنگ کا اہتمام کر رہی ہے۔ معیاری اداروں میں یہ ٹریننگ دی جائے گی۔ ڈائرکٹر سی ای ڈی ایم پروفیسر ایس اے شکور نے بتایا کہ حیدرآباد میں دو ہزار طلبہ ٹیٹ کی کوچنگ حاصل کر رہے ہیں، جن میں 1700 لڑکیاں ہیں۔ 10 اضلاع میں اس کوچنگ کا اہتمام کیا گیا ہے۔ حیدرآباد کے علاوہ محبوب نگر ، ظہیر آباد ، سنگاریڈی ، نظام آباد ، کریم نگر ، جگتیال ، ورنگل ، عادل آباد ، نلگنڈہ اور کھمم میں ٹریننگ سنٹرس قائم کئے گئے۔ اضلاع میں 2000 سے زائد طلبہ اس کوچنگ میں حصہ لے رہے ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ سی ای ڈی ایم کے ذریعہ ریاست کے پانچ مراکز پر ایمسیٹ کی کوچنگ کا اہتمام کیا گیا جس میں 450 طلبہ حصہ لے رہے ہیں۔ نظام کالج کے پرنسپل پروفیسر ٹی ایل این سوامی نے مخاطب کرتے ہوئے طلبہ کو مشورہ دیا کہ وہ پوری جستجو کے ساتھ ٹریننگ حاصل کریں کیونکہ زندگی میں کوئی چیز ناممکن نہیں ہے۔ مقصد کے حصول کیلئے صرف جذبہ چاہئے۔ انہوں نے نظام کالج کی جانب سے ہر ممکن سہولت کی فراہمی کا تیقن دیا۔ شیخ چاند ساجد سینئر پراجکٹ آفیسر نے خیرمقدم کیا جبکہ سید اسرار احمد پراجکٹ آفیسر نے شکریہ ادا کیا۔

TOPPOPULARRECENT