Saturday , September 23 2017
Home / Top Stories / ’’آج کا دن انتہائی اہم ہے‘‘

’’آج کا دن انتہائی اہم ہے‘‘

موت سے بے خبر سی آر پی ایف کمانڈر کے آخری الفاظ
نئی دہلی۔/16اگسٹ، ( سیاست ڈاٹ کام ) آج کا دن انتہائی اہم ہے… سرینگر میں قومی پرچم لہرانے کے بعد سی آر پی ایف کمانڈر پرمود کمار کے یہ آخری الفاظ تھے جس کے چند منٹوں بعد وہ عسکریت پسندوں کی فائرنگ میں جاں بحق ہوگئے۔ سی آر پی ایف  49ویں بٹالین کے کمانڈنگ آفیسر 44سالہ پرمود کمار کو وادی کشمیر میں متعین کیا گیا تھا۔ انہوں نے صبح8:30 بجے پرچم کشائی کی اور مختصر خطاب میں کہا کہ ہندوستان نے آزادی کے 70 سال مکمل کرلئے ہیں سیکوریٹی فورسیس کی ذمہ داری میں اضافہ ہوگیا ہے اور جموں و کشمیر میں عسکریت پسندوں اور سنگباری کے واقعات سے موثر طریقہ پر نمٹا جارہا ہے۔ اس تقریب کی ویڈیو فلمبندی کی گئی ہے۔ پرمود کمار نے تقریب ختم ہوتے ہی اپنی دستی گھڑی کی طرف دیکھتے ہوئے یہ کہا کہ آج کا دن انتہائی اہم ہے۔ لیکن وہ انتظارمیں کھڑی اپنی موت سے بے خبر تھے۔ پرمود کمار نے 1980 میں نیم فوجی فورس میں شمولیت اختیار کی تھی ۔ یوم آزادی کے موقع پر جن اہلکاروں کو شجاعت مندی کلے میڈلس پیش کئے گئے ہیں ان کے نام بھی پڑھے تھے۔ مذکورہ تقریب کے اختتام کے ساتھ ہی سی آر پی ایف کنٹرول روم سے وائر لیس سیٹ پر یہ اطلاع دی گئی کہ سرینگر کے 4مقامات پر عسکریت پسندوں نے سیکوریٹی فورسیس پر گرینڈ حملہ اور فائرنگ کی ہے جس پر پرمود کمار فی الفور اپنے حفاظتی دستے کے ساتھ بلٹ پروف گاڑی میں جائے وقوع پہنچ گئے۔ عسکریت پسندوں سے مقابلہ آرائی شرو ع کردی لیکن عقب سے فائرنگ کے باعث ان کی گردن میں گولی پیوست ہونے سے شدید زخمی ہوگئے۔ انہیں فی الفور سرینگر میں آرمی بیس ہاسپٹل سے رجوع کیا گیا لیکن وہ زخموں سے جانبر نہ ہوسکے۔ سی آر پی ایف کے ایک سینئر عہدیدار نے بتایا کہ ہم نہیں جانتے کہ پرمود کمار نے یہ جملہ کیوں کہا کہ آج کا دن انتہائی اہم ہے۔

 

نیشنل  کانفرنس کا آج کشمیر پر اجلاس
سرینگر ۔ 16 اگست (سیاست ڈاٹ کام) نیشنل کانفرنس کے کارگذار صدر سابق چیف منسٹر عمر عبداللہ نے کشمیر کی صورتحال پر تبادلہ خیال کا ایک اجلاس آج طلب کیا ہے جس میں پی ڈی پی ۔ بی جے پی مخلوط حکومت کی ناکامی پر بھی غور کیا جائے گا۔ یہ حکومت تشدد کے خاتمہ اور امن کی بحالی سے قاصر رہی ہے۔ نیشنل کانفرنس صدر جمہوریہ پرنب مکرجی سے بھی جاریہ ہفتہ کے اواخر میں ملاقات کرکے ان سے مداخلت کی خواہش کرنے کا منصوبہ بنارہی ہے تاکہ ریاست میں پرتشدد احتجاج اور نفاذ قانون انتظامیہ کی جانب سے جوابی کارروائی کے نتیجہ میں انسانی جانوں کا زیاں بند ہوسکے۔ کل کے اجلاس میں امکان ہیکہ ریاستی قائدین بھی شرکت کریں گے جنہیں کل جماعتی اجلاس میں شرکت کی دعوت دی گئی تھی جو وزیراعظم نریندر مودی کی زیرقیادت منعقد ہوا تھا لیکن ان ارکان نے شرکت نہیں کی تھی۔ صرف ان سیاسی پارٹیوں کے قائدین کو شرکت کی دعوت دی گئی تھی جن کی نمائندگی پارلیمنٹ میں ہے۔ نیشنل کانفرنس پیلٹ بندوقوں کے استعمال پر امتناع عائد کرنے کا بھی مطالبہ کرے گی جس سے کئی افراد اندھے اور دیگر کئی شدید زخمی ہوچکے ہیں۔ مرکزی وزارت داخلہ نے اس کا جائزہ لینے ایک کمیٹی قائم کی ہے۔

TOPPOPULARRECENT