Friday , August 18 2017
Home / شہر کی خبریں / آلیر انکاؤنٹر کی عدالتی یا سی بی آئی تحقیقات نہ کرانے پر سخت ناراضگی

آلیر انکاؤنٹر کی عدالتی یا سی بی آئی تحقیقات نہ کرانے پر سخت ناراضگی

تلنگانہ میں مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات کے لئے حکومت پر دباؤ بڑھانے کا اعلان: جمعیۃ العلماء
حیدرآباد /13 اگست (سیاست نیوز) جمعیۃ العلماء تلنگانہ و آندھرا پردیش نے آلیر انکاؤنٹر کی عدالتی یا سی بی آئی تحقیقات نہ کرانے پر سخت ناراضگی کا اظہار کیا۔ آج جمعیت کے ارکان عاملہ کا ایک اجلاس منعقد ہوا، جس کی صدارت تلنگانہ و آندھرا پردیش کے جمعیۃ العلماء صدر حافظ پیر شبیر احمد نے کی۔ اجلاس میں تازہ حالات کا جائزہ لیا گیا اور مستقبل کی حکمت عملی تیار کی گئی۔ بعد ازاں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے حافظ پیر شبیر احمد نے کہا کہ آلیر انکاؤنٹر کی جتنی مذمت کی جائے کم ہے، کیونکہ زیر دریافت قیدیوں کو پولیس نے قتل کیا ہے۔ انھوں نے کہاکہ مختلف سیاسی جماعتوں اور تنظیموں کی جانب سے اس انکاؤنٹر کی عدالیتی یا سی بی آئی تحقیقات کا مطالبہ کیا گیا، مگر تلنگانہ حکومت نے کوئی مثبت ردعمل ظاہر نہیں کیا۔ انھوں نے بتایا کہ جمعیۃ العلماء اس مسئلہ کو عدالت سے رجوع کرتے ہوئے قانونی لڑائی لڑ رہی ہے۔ انھوں نے کہا کہ ٹی آر ایس نے اپنے انتخابی منشور میں مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات فراہم کرنے کا وعدہ کیا تھا، لیکن اقتدار کے 15 ماہ مکمل ہونے کے باوجود مسلمانوں کو تحفظات فراہم کرنے میں ٹال مٹول کی پالیسی اپنا رہی ہے اور تازہ سروے کے نام پر وقت برباد کر رہی ہے، جب کہ مسلمانوں کی معاشی اور تعلیمی پسماندگی پر کئی رپورٹس موجود ہیں۔ انھوں نے بتایا کہ اس سلسلے میں جمعیۃ العلماء حکومت پر دباؤ ڈالنے کی حکمت عملی تیار کر رہی ہے اور اضلاع کے صدور کا اجلاس طلب کرکے مسلمانوں میں شعور بیداری پروگرام کا آغاز کیا جائے گا۔ علاوہ ازیں نظام کالج گراؤنڈ پر ایک جلسہ عام بھی منعقد کیا جائے گا۔ انھوں نے کہا کہ جمعیۃ العلماء نے ہر سال کی طرح اس سال بھی امت مسلمہ کی اصلاح کے لئے تلنگانہ اور آندھرا پردیش میں ماہ ستمبر اور اکتوبر کے دوران اصلاح معاشرہ اور سیرت النبی کے جلسے منعقد کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ اجلاس میں مولانا سید اکبر مفتاحی بھونگیر، مولانا سمیع الدین میدک، مولانا شیخ خالد امام محبوب نگر، مولانا سید ولی اللہ نظام آباد، مولانا عبد القوی، مفتی عبد المغنی مظاہری، حافظ پیر خلیق احمد صابر، مولانا عبد الستار ورنگل، مولانا عبد العظیم ورنگل، مولانا مصدق قاسمی، مفتی امان اللہ مریال گوڑہ، حافظ نصیر الدین ورنگل، عبد العظیم ورنگل، مولانا قطب الدین، مولانا مقصود احمد رنگاریڈی، مفتی الیاس نرمل، مولانا عباس رنگاریڈی، مفتی نعمان، مولانا عبد الحکیم، مولانا سید مظفر سوریا پیٹ اور دیگر علماء نے شرکت کی۔

TOPPOPULARRECENT