Tuesday , September 26 2017
Home / شہر کی خبریں / آن لائن انٹرویو میں منسوبہ بیان سے لاتعلقی

آن لائن انٹرویو میں منسوبہ بیان سے لاتعلقی

گواہوں کے بیانات بھی غلط ، محمد پہلوان کا عدالت میں بیان
حیدرآباد۔ 17 مارچ (سیاست نیوز) متنازعہ آن لائن انٹرویو مقدمہ میں محمد بن عمر یافعی المعروف محمد پہلوان نے خود کو منسوبہ انٹرویو سے لاتعلق قرار دیا۔ آج عدالت میں مقدمہ کی سماعت ہوئی اور محمد پہلوان کا بیان قلمبند کیا گیا۔ جج کے پوچھے جانے پر انہوں نے بتایا کہ آن لائن انٹرویو میں ان سے جو منسوبہ بیان جاری کیا گیا، وہ بالکلیہ غلط ہے اور اس سے ان کا کوئی تعلق نہیں ہے۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ اس انٹرویو کے بارے میں جو بیانات قلمبند کروائے ہیں، وہ بھی بالکلیہ غلط ہیں۔ محمد پہلوان سے منسوب آن لائن انٹرویو میں کہا گیا تھا کہ اکبر اویسی رکن اسمبلی چندرائن گٹہ پر حملے کے وقت وہ (محمد پہلوان) وہاں موجود ہوتے تو صورتحال کچھ اور ہوتی تھی۔ عدالت نے آئندہ سماعت 24 مارچ کو مقرر کی ہے اور وکیل دفاع سینئر ایڈوکیٹ محمد مظفراللہ خاں شفاعت بحث کریں گے۔ واضح رہے کہ 25 اپریل 2012ء کو آن لائن نیوز (برق نیوز) کو دیئے گئے ایک مبینہ متنازعہ انٹرویو کے بعد بنجارہ ہلز میں محمد پہلوان کے خلاف ایک مقدمہ کرائم نمبر 645/2012 دفعہ 506 (دھمکی دینا) درج کیا تھا۔ مقدمہ کی سماعت نامپلی کریمنل کورٹ کے تیسرے ایڈیشنل چیف میٹروپولیٹن مجسٹریٹ کے اجلاس پر شروع ہوئی تھی جس میں رکن اسمبلی چندرائن گٹہ اکبر اویسی نے اپنا بیان قلمبند کروایا تھا اور ’’برق نیوز‘‘ کے نمائندہ مجتبیٰ حسین اور بنجارہ ہلز پولیس اسٹیشن سے وابستہ دو سب انسپکٹران نے بھی عدالت میں گواہی دی تھی جن پر ایڈوکیٹ مظفراللہ خاں شفاعت نے جرح کی تھی۔

TOPPOPULARRECENT