Thursday , September 21 2017
Home / جرائم و حادثات / آن لائین دھوکہ دہی ، قرض کی لاٹریوں کی دیہی سطح تک رسائی

آن لائین دھوکہ دہی ، قرض کی لاٹریوں کی دیہی سطح تک رسائی

انسداد واقعات کے لیے پولیس کا عصری ٹکنالوجی سے استفادہ
حیدرآباد /28 اگست ( سیاست نیوز ) آن لائین دھوکہ دہی قرض کے نام پر لاٹریوں ، انعامات اور آن لائین خریداری میں بڑھتے دھوکہ دہی کے واقعات اب شہری علاقوں تک ہی محدود نہیں رہے بلکہ دیہی علاقوں میںبھی ایسے واقعات میں اضافہ ہوتا جارہا ہے ۔ انٹرنیٹ کے استعمال میں بے پناہ اضافہ اور گھر گھر پہونچ رہی ٹکنالوجی کے استعمال کا دھوکہ باز افراد غلط استعمال کرتے ہوئے عام شہریوں کو دھوکہ دے رہے ہیں ۔ ایسے حالات سے نمٹنے کیلئے تلنگانہ پولیس نے ضلعی پولیس کو جدید ٹکنالوجی سے ہم آہنگ کرنے کا فیصلہ کیا ہے ۔ شہر حیدرآباد کے پولیس کمشنریٹ کے علاوہ سائبرآباد اور رچہ کنڈہ پولیس کی طرز پر ضلع پولیس کمشنریٹ کو جدید ٹکنالوجی فراہم کی جائے گی ۔ سائبر جرائم پر قابو اور روک تھام ہی اس ٹکنالوجی کے استعمال کا اہم مقصد تصور کیا جارہا ہے اور سائبر فارنسک لیاب کے قیام کے نئے کوششوں کا آغاز ہوچکا ہے ۔ پولیس کے اعلی عہدیداروں کا کہنا ہے کہ محکمہ پولیس کو جدید ٹکنالوجی سے جوڑنا ہی اس اقدام کا اہم مقصد ہے ۔ جس کے تحت سائبر فارنسک لیاب قائم کئے جائیں گے ۔ سی سی ٹی وی کیمروں کی تنصیب کے عمل کی شروعات کرنے والے پولیس کے اعلی عہدیداروں نے اب فارنسک اور سائبر لیاب کو اہمیت دی ہے ۔ بتایا جاتا ہے کہ اس پراجکٹ کیلئے بجٹ بھی مختص کیا گیا ہے ۔ اس اقدام کے تحت 150 کروڑ روپئے منظور کئے گئے تاکہ یہ ضلع ہیڈ کوارٹر اور کمشنریٹ میں 3 کروڑ کے مصارف سے ترقیاتی اقدام انجام دئے جاسکیں ۔ ذرائع کے مطابق اور رقم کی اجرائی بھی عمل میں آچکی ہے ۔ اس پراجکٹ کے تحت ہر ضلع ہے, کواٹر اور کمشنریٹ میں سائبر کرائم کا علحدہ شعبہ سائبر کرائم وینگ قائم کیا جائے گا تاکہ سائبر جرائم پر قابو پایا جاسکے اور اس کیلئے مددگار لیاببھی قائم کیا جائے گا ۔ ذرائع کے مطابق ضلع اور کمشنریٹ سطح پر عملہ کا انتخاب کرتے ہوئے انہیں سائبر جرائم پر خصوصی تربیت بھی دی جائے گی تاکہ سائبر جرائم کے اشتراک کو روکنے اور سائبر جرائم پر قابو پایا جاسکے ۔ بتایا جاتا ہے کہ مزید 100 کروڑ روپئے سے سفارشات تیار کی جارہی ہے ۔ حیدرآباد کمشنریٹ میں استعمال کی جارہی ٹکنالوجی سیکوریٹی کو ضلعی سطح پر متعارف کیا جائے گا ۔ اس کے علاوہ سنسنی خیز واقعات اور معاملات میں شواہد کو اکٹھا کرنے اور ثبوت اور سراغ کو اکٹھا کرنے میں اہم رول ادا کرنے والے فارنسک لیاب کو ریجنل سطح پر قائم کرنے کی سفارش کرنے کی تیار کی جارہی ہے ۔ بتایا جاتا ہے کہ محکمہ پولیس کو جدید ٹکنالوجی سے مربوط کرنے کیلئے موبائل فارنسک ادارے کا قیام بھی عمل میں لایا جائے گا ۔ ذرائع کے مطابق پولیس کو جدید ٹکنالوجی سے جوڑنے کے اقدامات کے تحت 150 کروڑ روپئے پہلے مرحلے کے تحت جاری کئے گئے اور 100 کروڑ روپئے مزید جاری کرنے کی سفارش کی گئی ہے ۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT