Friday , September 22 2017
Home / ہندوستان / آکسیجن کی قلت سے کوئی بھی موت گھناؤنا جرم

آکسیجن کی قلت سے کوئی بھی موت گھناؤنا جرم

یوپی کے ریاستی وزیر صحت کا گورکھپور ہاسپٹل میں بچوں کی اموات پر ردعمل
لکھنؤ۔ 16 اگست (سیاست ڈاٹ کام) گورکھپور ہاسپٹل میں آکسیجن سلنڈرس کی قلت کی وجہ سے بچوں کی اموات پیش آنے کے الزام کے پس منظر میں وزیر صحت یوپی سدھارتھ ناتھ سنگھ نے آج کہا کہ ایسی وجہ سے انسانی جانوں کا ضائع ہونا کسی گھناؤنی جرم سے کم نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ سرکاری زیرانتظام بی آر ڈی میڈیکل کالج ہاسپٹل میں بچوں کی اموات کے تمام پہلوؤں کا جائزہ لیا جارہا ہے۔ ایک کمیٹی جس کی قیادت چیف سیکریٹری یوپی کررہے ہیں، جائزہ لے رہی ہیں اور وہ تیقن دیتے ہیں کہ جو افراد خاطی ثابت ہوں، ان کو سزا دی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ آکسیجن کی قلت سے کوئی بھی موت ایک گھناؤنا جرم ہے۔ اس شعبہ میں قلت ایک جرم ہے۔ یوپی کے وزیر صحت ایک پریس کانفرنس سے خطاب کررہے تھے۔ انہوں نے کہا کہ ریاستی چیف سیکریٹری کی زیرقیادت ایک کمیٹی گورکھپور ہاسپٹل میں اموات کی تحقیقات کررہی ہے۔ تمام مسائل جو رقمی تبادلے کے بارے میں منظر عام پر آرہے ہیں، ان کی تحقیقات کی جارہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ادائیگی نہ کرنے کے الزامات کی بناء پر کمیشن کے قیام کا مطالبہ ایسے وقت بالکل غلط ہے جبکہ تحقیقات جاری ہیں۔ تین ماہر ڈاکٹروں کی جو دہلی سے تعلق رکھتے ہیں، ایک ٹیم اس معاملے کا جائزہ لے رہی ہے اور اگر یہ پتہ چلا کہ آکسیجن کی سربراہی میں کوئی کوتاہی تھی تو خاطی پائے جانے والے تمام افراد کو سزا دی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ ابتدائی تحقیقات کی بنیاد پر کارروائی کالج کے پرنسپل کے خلاف کی جاچکی ہے۔ ایک اور سوال کا جواب دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ایک رپورٹ میڈیکل کالجوں اور ہاسپٹلوں سے طلب کی گئی ہے جو آکسیجن کی دستیابی کے بارے میں ہے اور ادائیگی کے مسائل دریافت کئے گئے ہیں اور ہر چیز باقاعدہ پائی گئی ۔ ایک اور سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ ہسپتال اور علاقائی کمیونٹی سنٹرس کو تمام ضروری سہولتیں فراہم کی جارہی ہیں تاکہ ان کی کارکردگی بہتر ہوسکے اور وہ اچھی طرح آراستہ رہیں، مریضوں کی بہترین خدمات کریں۔

TOPPOPULARRECENT