Sunday , August 20 2017
Home / شہر کی خبریں / ادارہ ادبیات اردو میں فن خطاطی کی نمائش کا کل آخری دن

ادارہ ادبیات اردو میں فن خطاطی کی نمائش کا کل آخری دن

محترمہ انورادھا ریڈی ، جناب زاہد علی خاں اور دیگر کا دورہ اور فن پاروں کی ستائش
حیدرآباد ۔ 4 ۔ اپریل : ( پریس نوٹ ) :  قومی کونسل برائے فروغ اردو اردو زبان حکومت ہند کے تعاون سے چلائے جانے والے دو سالہ ڈپلوما کورس خطاطی و گرافک ڈیزائن ادارہ ادبیات اردو مشن 2014-16 کے طلباء و طالبات کی جانب سے تیار کردہ فن پاروں کی نمائش بہ مقام ’ ایوان اردو ‘ ادارہ ادبیات اردو پنجہ گٹہ حیدرآباد میں افتتاح بہ دست محترمہ انورادھا ریڈی اینٹک گورننگ کونسل و معاون اینٹک تلنگانہ کنوینر حیدرآباد نے کیا ۔ اس تقریب میں مہمان خصوصی کی حیثیت سے جناب زاہد علی خاں صدر ادارہ و ایڈیٹر روزنامہ سیاست اور ڈاکٹر محمد انور الدین پرنسپل انوارالعلوم کالج ، سید محی الدین قادری مبشر پاشاہ ( نبیرہ ڈاکٹر زور) کے علاوہ شہر کی گئی معزز شخصیتیں و اسکول کالج ، یونیورسٹیز کے اساتذہ طلباء وطالبات کی کثیر تعداد نے شرکت کی ۔ جناب زاہد علی خاں نے فن خطاطی کی وجہ تسمیہ و پس منظر پیش کرتے ہوئے کہا کہ فنون لطیفہ میں فن خطاطی اتنا ہی قدیم فن ہے جتنے کہ لوح و قلم برصغیر ہند میں مشہور خطاط کثرت سے گذرے ہیں ۔ حیدرآباد بھی خطاطی کے معاملے میں کسی سے پیچھے نہیں رہا ۔ قطب شاہی سلاطین کے زمانے میں فنون لطیفہ کو ترقی ہوئی اچھے خطاط بھی وہاں جمع ہوئے ۔ قطب شاہی سلاطین کے بعد سلاطین آصفیہ نے بھی خطاط حضرات کی بھی سرپرستی کی اور جس طرح شہر حیدرآباد میں فن خطاطی کا فروغ ہورہا ہے ۔ شاید ہی ملک کے کسی اور شہر میں ہورہا ہوگا۔ پروفیسر ایس اے شکور معتمد عمومی اور سید رفیع الدین قادری شریک معتمد ( فرزند ڈاکٹر زور بانی ادارہ ادبیات اردو ) کی سرپرستی میں یہ نمائش منعقد کی گئی ہے جو دیکھنے سے تعلق رکھتی ہے ۔ معتمد عمومی نے فن خطاطی کی اہمیت اور دو سالہ ڈپلوما کورس کی افادیت پر روشنی ڈالی ۔یہ نمائش ایوان اردو میں 6 اپریل صبح 9-30 سے شام 5 بجے تک شائقین کے مشاہدے کے لیے کھلی رہے گی ۔ داخلے کی عام اجازت ہے ۔ اس نمائش خطاطی میں مختلف وضع کے طغرے ، قرآنی آیات ، نعتیں ، نظمیں ، رباعی ، قطعہ اور اشعار وغیرہ کو مختلف خطوط مثلا خط نسخ ، خط ثلث ، خط دیوانی اور خط نستعلیق کو مختلف رنگوں سے Back ground سے مزین کر کے تحریر کیا گیا ہے ۔پروفیسر ایس اے شکور کی سرپرستی میں استاذ عبدالغفار کو اس سالانہ نمائش کے انعقاد پر میں مبارکباد پیش کرتا ہوں جن کی کوششیں فن کے لیے قابل ستائش ہیں ۔۔

TOPPOPULARRECENT