Friday , September 22 2017
Home / Top Stories / اردو دنیا بھر میں مقبول ترین زبان:زاہد علی خاں

اردو دنیا بھر میں مقبول ترین زبان:زاہد علی خاں

عصری ٹکنالوجی سے مؤثر استفادہ، شکاگو میں سمینار کا انعقاد

شکاگو۔ /25مئی، ( سیاست نیوز) اردو انسٹی ٹیوٹ کے زیر اہتمام شکاگو میں ’’ اردو صحافت آج اور کل ‘‘ کے زیر عنوان سمینار منعقد ہوا۔ جناب زاہد علی خاں ایڈیٹر روز نامہ ’سیاست‘ نے کلیدی خطاب کرتے ہوئے کہا کہ عصری ٹکنالوجی سے مؤثر استفادہ کی وجہ سے آج اردو دنیا کی مقبول ترین زبان ہے۔ انہوں نے بتایا کہ انٹرنیٹ کے سبب یہ پتہ چلا کہ دنیا کے 170ممالک میں تقریباً 3400 ایسے شہر ہیں جہاں کوئی نہ کوئی اردو سے واقف شخص موجود ہے۔ انہوں نے پرنٹ میڈیا کی ترقی اور جدید ٹکنالوجی سے استفادہ کا بھی تذکرہ کیا۔ جناب زاہد علی خاں نے کہا کہ اردو کے تحفظ اور ترقی میں ہم سب کو بڑھ چڑھ کر حصہ لینا چاہیئے۔ قونصل جنرل ڈاکٹر اوصاف سعید نے سمینار کی صدارت کی اور اپنے خطاب میں انہوں نے اردو صحافت کی تاریخ بیان کی اور کہا کہ بنگلہ پریس کے بعد اردو پریس برصغیر کا قدیم ترین صحافتی ادارہ ہے۔ انہوں نے بتایا کہ تقسیم کے وقت اردو کے صرف 415اخبارات و رسائل تھے جبکہ رجسٹرار انڈین نیوز پیپر سوسائٹی کے 2015 اعداد و شمار کے مطابق آج اردو کے 4770 اخبارات و رسائل ہیں۔ ڈاکٹر اوصاف سعید نے بتایا کہ اردو کی مقبولیت کا اندازہ اس حقیقت سے لگایا جاسکتا ہے کہ ملک کے پہلے وزیر اعظم پنڈت جواہر لال نہرو کی شادی کا دعوت نامہ اردو میں تھا۔ سمینار میں جناب زاہد علی خاں، ڈاکٹر اوصاف سعید اور جناب میر محتشم علی کو یادگار ایوارڈز دیئے گئے۔ سمینار کا آغاز جناب ساجد چودھری کی حمد باری تعالیٰ سے ہوا۔ جناب امین حیدر نے افتتاحی خطاب میں اردو انسٹی ٹیوٹ کی کارکردگی کا تذکرہ کیا۔ ڈاکٹر سیف نے مہمانوں، میڈیا، مندوبین اور بالخصوص جناب افتخار شریف کا شکریہ ادا کیا۔ اس سمینار سے جناب افتخار شریف نے خطاب کرتے ہوئے اردو زبان و ثقافت مرکز کے قیام کیلئے بھرپور تعاون کا تیقن دیا۔ پاکستان نیوز کے جاوید رانا اور شکاگو کے قدیم ترین اردو اخبار ’ اردو ٹائمز ‘ کے طارق خواجہ نے بھی خطاب کیا۔ سمینار کے آخر میںڈاکٹر صادق نقوی کی زیر صدارت شعری نشست کا اہتمام کیا گیا تھا۔ حیدرآباد کے مہمان شاعر جناب ممتاز اور شکاگو کے معروف شعراء مسرس حامد امروہی، ساجد چودھری، حشمت سہیل،واصف ملجی، واجد ندیم، لطیف سیف، نذر نقوی، غلام مصطفی انجم، عابد اللہ غازی نے اپنا کلام سنایا۔ جناب افتخار شریف نے حیدرآبادی تہذیب پر نظم پیش کی۔

TOPPOPULARRECENT