Saturday , September 23 2017
Home / سیاسیات / اروند کجریوال انتخابی وعدوں کی تکمیل میں بالکل ناکام

اروند کجریوال انتخابی وعدوں کی تکمیل میں بالکل ناکام

مایوسی چھپانے اقلیتوں و دلتوں پر حملوں کے تبصرے ۔ مرکزی وزیر قانون سدانند گوڑا کا بیان
بنگلورو 11 جون ( سیاست ڈاٹ کام ) چیف منسٹر دہلی اروند کجریوال کی جانب سے صدر جمہوریہ ہند سے یہ شکایت کی مرکز میں نریندر مودی حکومت کے اقتدار پر آنے کے بعد ملک میں اقلیتوں اور دلتوں پر حملوں کے واقعات میں اضافہ ہوگیا ہے در اصل اپنے وعدوں کی تکمیل میں ناکام ایک چیف منسٹر کا اظہار مایوسی ہے ۔ مرکزی وزیر ڈی وی سدانند گوڑا نے یہ بات بتائی ۔ مسٹر گوڑا نے کہا کہ کجریوال اس بات سے مایوس اور اپ سیٹ ہیں کہ وہ دہلی کے عوام سے کئے گئے انتخابی وعدوں کو پورا کرنے میں ناکام رہے ہیں۔ ایسے میں وہ دلتوں اور اقلیتوں پر حملوں کے واقعات میں اضافہ جیسے بے بنیاد تبصرے کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ کجریوال اس بات پر بھی مایوسی کا شکار ہیں کہ ان کے کچھ ساتھی فوجداری مقدمات میں ملوث ہیں اور کچھ ساتھیوں کو جیل بھیجا جاچکا ہے ۔ گوڑا نے کہا کہ خود کجریوال کی پارٹی کے قائدین فوجداری مقدمات میں ملوث ہیں اور کئی ایک کو جیل بھیج دیا گیا ہے ۔ چیف منسٹر دہلی کجریوال نے کل صدر جمہوریہ پرنب مکرجی سے ملاقات کی تھی اور دلتوں اور اقلیتوں پر حملوں کے واقعات میں اضافہ کے خلاف ان سے مداخلت کی خواہش کی تھی ۔ سدانند گوڑا نے کہا کہ جو لوگ ذمہ دار عہدے رکھتے ہیں انہیں اپنے خیالات دستاویزی ثبوت کے ساتھ ظاہر کرنا چاہئے ۔ گوڑا نے کہا کہ جو لوگ ذمہ دار عہدے رکھتے ہیں انہیں اپنے خیالات ایسے انداز میں ظاہر کرنے کی ضرورت ہے کہ وہ دستاویزی ثبوت کے مماثل ہوں۔ حالیہ جاری کردہ قومی کرائم بیورو رپورٹ کا حوالہ دیتے ہوئے سدانند گوڑا نے کہا کہ گذشتہ دو سال میں دلتوں اور اقلیتوں پر حملوں کے واقعات میں کمی واقع ہوئی ہے اور اروند کجریوال اپنے اعداد و شمار نہیں پیش کرسکتے جو ان کی عادت بن گئی ہے ۔ کانگریس نائب صدر راہول گاندھی کے دورہ پنجاب اور ڈرگ مسئلہ پر نمائندگی کے تعلق سے استفسار پر انہوں نے کہا کہ یہ خود کانگریس کیلئے نقصاندہ ہوگا ۔ انہوں نے کہا کہ جہاں کہیں راہول گاندھی نے دورے کئے ہیں وہاں پارٹی کو نقصان ہوا ہے ۔ اس سلسلہ میں انہوں نے آسام ‘ کیرالا ‘ ٹاملناڈو اور مغربی بنگال کی مثال پیش کی ۔ سدانند گوڑا نے کہا کہ پنجاب کے عوام بھی راہول گاندھی کو مسترد کردینگے اور اگر انہیں پارٹی صدر بنایا جاتا ہے تو اس سے پارٹی کوہی نقصان ہوگا ۔

TOPPOPULARRECENT