Friday , September 22 2017
Home / دنیا / اسرائیل غزہ پٹی کے اطراف دیوار تعمیر کرنے کوشاں

اسرائیل غزہ پٹی کے اطراف دیوار تعمیر کرنے کوشاں

حماس کی جانب سے یہودیوں پر بڑھتے حملوں کے پیش نظر اقدامات
یروشلم ۔ 10 اگست (سیاست ڈاٹ کام) اسرائیل نے غزہ پٹی کے اطراف ایک مضبوط دیوار تعمیر کرنے کے پراجکٹ کو روبہ عمل لانے کا فیصلہ کیا ہے۔ حماس کی جانب سے یہودیوں پر بڑھتے حملوں کو روکنے کیلئے یہ دیوار تعمیر کی جارہی ہے۔ غزہ پٹی میں سرنگوں کی مدد کے ذریعہ حماس اسرائیل پر حملے کررہا ہے۔ حماس نے 2014ء کی غزہ جنگ میں ان سرنگوں کا استعمال کیا تھا جس کے بعد ہی حماس پر شدید تنقیدیں کی گئیں اور اسرائیل کی حکومت کو پراجکٹ تیار کرنا پڑا۔ اسرائیل کی تحقیقاتی کمیٹی نے وزیراعظم بنجامن نتن یاہو اور فوج پر پر الزام عائد کیا تھاکہ انہوں نے حماس کے خطرات سے بچنے کی کوئی تیاری نہیں کی۔ میجر جنرل ایال زیمر نے صحافیوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ آئندہ مہینوں میں ہم غزہ پٹی کے اطراف رکاوٹیں کھڑی کرتے ہوئے دیوار کی تعمیر کو تیز کردیں گے۔ ہمیں توقع ہیکہ یہ دیوار آنے الے برسوں میں مکمل کرلی جائے گی۔ فوجی ریڈیو نے اطلاع دی ہیکہ یہ دیوار کنکریٹ اور لوہے کی شیٹ پر مشتمل ہوگی جس کی لمبائی 64 کیلو میٹر ہوسکتی ہے۔ 20 فیٹ اونچائی اور 40 میٹر موٹی دیوار پر 834 ملین امریکی ڈالر خرچ آئے گا۔ اسرائیل کے وزیرتعمیرات یووگیلنٹ نے کہا کہ یہ دیوار فلسطین کے علاقہ کو مہربند کرتے ہوئے لگائی گئی سرحدی خاردار تار سے متصل اسرائیلی علاقہ میں تعمیر کی جائے گی۔ یہاں پر اسلامی تحریک حماس کی جانب سے کارروائیاں کی جاتی رہی ہیں۔ درحقیقت دیوار کی تعمیر کا کام ہم نے اپنے علاقائی قواعد کے مطابق شروع کیا ہے اور وہاں کام کرنے والوں کے خلاف کوئی حملے نہیں کئے جائیں گے۔ سرنگوں پر حملہ کرنا حماس کا اصل ہتھیار تھا۔ حماس نے 2014ء کی غزہ جنگ کے دوران ان سرنگوں کو نشانہ بنایا تھا۔ حماس نے مصر سے متصل غزہ کی سرحد کے اندر سرنگوں کا بڑا نیٹ ورک تعمیر کیا ہے۔

 

TOPPOPULARRECENT