Wednesday , August 23 2017
Home / Top Stories / اسرائیل کے وعدہ پر بھروسہ نہیں کیا جاسکتا

اسرائیل کے وعدہ پر بھروسہ نہیں کیا جاسکتا

فلسطینی مسلمانوں کا احتجاج جاری، نماز جمعہ کے موقع پر رکاوٹیں ناقابل برداشت : اردغان
یروشلم ۔ 26 جولائی (سیاست ڈاٹ کام) اسرائیل نے فلسطینیوں کی جانب سے شدید پر تشدد احتجاج کے بعد مسجد اقصیٰ کے باب الداخلہ پر نصب کئے گئے میٹل ڈیٹکٹرس کو ہٹالیا تاکہ فلسطینی مسلمانوں نے اب تک احتجاج کا سلسلہ ترک نہیں کیا ہے اور داخلہ سے یہ کہہ کر گریز کررہے ہیں کہ انہیں اب بھی اسرائیلی عہدیداروں کے قول و فعل میں تضاد نظر آرہا ہے کہ نہ جانے آئندہ وہ کون سے غیر قانونی اقدامات کریں ۔ دریں اثناء صدر فلسطین محمود عباس نے کہا کہ اسرائیل کی جانب سے میٹل ڈیٹکٹر ہٹائے جانے کے باوجود اسرائیل اور فلسطین کے تعلقات پر جمود طاری رہے گا ۔ دوسری طرف حکومت اسرائیل کا استدلال ہے کہ وہ اب میٹل ڈیٹکٹرس کی بجائے عصری ٹکنالوجی کا استعمال کرتے ہوئے نگرانی کے دیگر طریقہ کار کو متعارف کرے گی ۔ 14 جولائی کو مسجد اقصیٰ کے قریب ہوئے حملے میں دو اسرائیلی پولیس اہلکاروں کے ہلاک ہوجانے کے بعد میٹل ڈیٹکٹرس نصب کئے جانے کا فیصلہ کیا گیا تھا ۔انقرہ سے موصولہ اطلاع کے بموجب ترکی کے صدر رجب طیب اردوغان نے یروشلم کے انتہائی مقدس و حساس مقام سے میٹل ڈیٹکٹرس ہٹانے اسرائیلی اقدام کا خیرمقدم کیا لیکن کہا کہ یہ کافی نہیں ہے۔ اسرائیل نے 14 جولائی کو عرب اسرائیلیوں کے حملے میں اسرائیل کے دو ملازمین پولیس کی ہلاکت کے بعد مسلمانوں اور یہودیوں کیلئے یکساں طور پر مقدس مقام حرم الشریف کے باب الداخلہ پر میٹل ڈیٹکٹرس نصب کردیا تھا لیکن بے چینی کو ٹالنے کیلئے شدید دباؤ اور سرگرم بین الاقوامی سفارتی مساعی کے درمیان اسرائیلی حکومت اس مقام سے میٹل ڈیٹکٹرس کو ہٹادی تھی۔ اردوغان نے کہا کہ ’’اسرائیل نے کشیدگی میںکمی کیلئے مدد کے طور پر میٹل ڈیٹکٹرس ہٹاتے ہوئے ایک صحیح قدم اٹھایا ہے‘‘ لیکن یہ ہماری خواہشات کے مطابق کافی نہیں ہے‘‘۔ اردوغان یہاں عالم اسلام میں تعلیم کے عنوان پر خطاب کررہے تھے۔ انہوں نے کہا کہ اس مقدس مقام پر نماز جمعہ کے موقع پر رکاوٹوں کو ترکی برداشت نہیں کرسکتا۔

TOPPOPULARRECENT