Sunday , June 25 2017
Home / ہندوستان / اسقاط حمل سے سالانہ 20 لاکھ خواتین کی موت:رپورٹ

اسقاط حمل سے سالانہ 20 لاکھ خواتین کی موت:رپورٹ

نئی دہلی ؍ اجمیر، 15مئی (سیاست ڈاٹ کام ) ایک تازہ سروے کے مطابق ہر سال اسقاط حمل کرانے والی ڈیڑھ کروڑ خواتین میں سے تقریباً 13 فیصد یعنی 20 لاکھ خواتین کی موت ہو جاتی ہے ۔خواتین کے مفاد اور خاندانی منصوبہ بندی کے شعبہ میں کام کرنے والی اہم غیر سرکاری تنظیم ”پاپولیشن فاؤنڈیشن آف انڈیا”کی ایگزیکٹو ڈائریکٹر پونم مٹریجا نے یواین آئی سے خصوصی بات چیت میں آج کہا کہ انٹرنیشنل انسٹی ٹیوٹ’ دی گٹماکر ‘اور”انڈین انسٹی ٹیوٹ آف پاپولیشن سائنسز ”نے حکومت کو سونپی گئی اپنی ایک رپورٹ میں یہ معلومات دی ہے ۔ خاندانی منصوبہ بندی میں وسائل کی کمی اور ناخواندگی ان اموات کی اہم وجہ ہے ۔ اس طرح کی اموات کو روکنے کے لئے ملک بھر میں بڑے پیمانے پر کام کرنے کی ضرورت ہے ۔انہوں نے کہا کہ سرکاری اعدادو شمار میں پہلے ہر سال صرف چھ لاکھ خواتین کا اسقاط حمل درج ہوتا تھا جبکہ غیر سرکاری تنظیموں کا اعداد و شمار ایک کروڑ تھا۔لیکن اب حکومت اور دیگر تنظیموں کے اعداد و شمار ایک جیسے ہیں۔ نئے اعداد و شمار فوری جلد آنے والے ہیں۔ ان کے مطابق ہر سال ڈیڑھ کروڑ خواتین اسقاط حمل کرواتی ہیں، جن میں سے 13 فیصد، یعنی تقریباً 20 لاکھ خواتین کی موت ہو جاتی ہے ۔ ان اعداد و شمار میں چوری چھپے کرائے جانے والے غیر قانونی اسقاط حمل کے معاملے بھی شامل ہیں۔ خاندانی منصوبہ بندی کے تئیں بیداری اور ذرائع کی کمی امریکہ جیسے ترقی یافتہ ملک سے لے کر افریقی ممالک تک تشویش ناک حالت میں ہے ۔ بیداری اور وسائل سے سالانہ 50 فیصد سے زیادہ ایسی اموات کو کم کیا جا سکتا ہے ۔زچگی کے دوران دنیا بھر میں سالانہ تین لاکھ 30 ہزار خواتین کی موت ہوتی ہے جن میں 15 فیصد ہندوستانی خواتین شامل ہیں۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT