Saturday , August 19 2017
Home / شہر کی خبریں / اسمبلی میں وقفہ سوالات

اسمبلی میں وقفہ سوالات

گڈی انارم فروٹ مارکٹ کی منتقلی
شہر میں ٹریفک کے مطابق سڑکیں نہیں
وجئے ڈیری کو عصری بنانے کا فیصلہ
سیول معاملات میں مداخلت کرنے پر پولیس کے خلاف کارروائی
فوڈ سکیوریٹی کارڈ کی تفصیلات عوام کے لیے دستیاب
حیدرآباد۔22 مارچ (سیاست نیوز) وزیر آبپاشی و مارکٹنگ ہریش رائو نے کہا کہ حکومت گڈی انارم فروٹ مارکٹ کو منتقل کرنے کا منصوبہ رکھتی ہے۔ ایم کشن ریڈی اور دوسروں کے سوال پر ہریش رائو نے بتایا کہ پیدا عنبر پیٹ منڈل میں سروے نمبر 502 اور 548 کے تحت 178.09 ایکڑ اراضی کی نشاندہی کی گئی ہے۔ ریونیو حکام نے حال ہی میں یہ اراضی حوالے کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ نئی مارکٹ میں بہتر سہولتوں کی فراہمی کے سلسلہ میں حکومت جلد ہی بجٹ مختص کرے گی۔ انہوں نے بتایا کہ موجودہ مارکٹ صرف 22 ایکڑ پر محیط ہے جس کے باعث کسانوں اور عوام کو مشکلات کا سامنا ہے۔ مارکٹ کے اطراف ٹریفک میں بار بار رکاوٹ پیدا ہورہی ہے لہٰذا حکومت نے آئوٹر رنگ روڈ پر اس مارکٹ کو منتقل کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ ٹی آر ایس ارکان نے موجودہ مارکٹ میں درپیش مسائل کا حوالہ دیا اور کہا کہ نئی مارکٹ میں کسانوں کی سہولت کے لیے فوری طور پر عارضی شیڈ تعمیر کیئے جائیں ۔
ll    وزیر بلدی نظم و نسق کے ٹی راما رائو نے بتایا کہ اگرچہ حیدرآباد اور سکندرآباد میں ٹریفک میں اضافے کے اعتبار سے موجودہ سڑکوں کا نظام ناکافی ہے، پھر بھی ٹریفک کے مسائل سے نمٹنے کے لیے اقدامات کیئے جارہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ بہتر ٹریفک مینجمنٹ ٹیکنیکس کے ذریعہ ٹریفک کے مسائل پر قابو پایا گیا ہے۔ مجلسی ارکان اسمبلی کے سوال کے تحریری جواب میں کے ٹی آر نے بتایا کہ ریاستی حکومت کے عہدیداروں نے مختلف ممالک کا دورہ کرتے ہوئے ٹریفک سے نمٹنے کے طریقہ کار کا جائزہ لیا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ ڈائرکٹر جنرل پولیس اور وزارت داخلہ اور فینانس کے پرنسپل سکریٹریز کی قیادت میں عہدیداروں نے نیویارک سٹی، واشنگٹن ڈی سی اور لندن کا دورہ کرتے ہوئے وہاں پولیس کی جانب سے ٹریفک بہتر بنانے کے اقدامات کا جائزہ لیا۔ انہوں نے کہا کہ سی سی ٹی وی کیمروں کے ذریعہ نگرانی، ٹریفک مینجمنٹ سسٹم اور لاانفورسمنٹ کمانڈ کنٹرول سنٹرس کا دورہ کیا گیا۔ انہوں نے بتایا کہ دونوں شہروں میں سی سی ٹی وی کے ذریعہ نگرانی کا کام شروع کیا گیا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ گریٹر حیدرآباد میونسپل کارپوریشن سڑکوں کی ترقی کے پراجیکٹ پر کام کررہا ہے۔
ll    وزیر افزائش مویشیان ٹی سرینواس یادو نے کہا کہ حکومت وجئے ڈیری کو عصری بنانے اور اس کی توسیع کا منصوبہ رکھتی ہے۔ سابقہ حکومتوں نے وجئے ڈیری کو نظرانداز کردیا تھا اور خانگی ڈیریز کی حوصلہ افزائی کی گئی۔ انہوں نے کہا کہ وجئے ڈیری کی ترقی کے سلسلہ میں پراجیکٹ کو قطعیت دی جارہی ہے۔ مالیاتی سال 2017-18ء میں ڈیری ڈیولپمنٹ کے لیے 13 کروڑ 55 لاکھ روپئے مختص کئے گئے ہیں۔ ایس رام لنگا ریڈی اور دوسروں کے سوال پر سرینواس یادو نے کہا کہ سابقہ حکمرانوں کی غلط پالیسیوں کے نتیجہ میں وجئے ڈیری بند ہونے کی منزل تک پہنچ چکی تھی تاہم ٹی آر ایس حکومت نے اس کے احیاء اور استحکام کا فیصلہ کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ وجئے ڈیری کے پراڈکٹس دیگر پراڈکٹس سے کافی بہتر ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ حکومت نے وجئے ڈیری کے مختلف پراڈکٹس کا نمونہ عوامی نمائندوں اور اعلی عہدیداروں کو روانہ کیا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ وجئے ڈیری صرف دودھ ہی نہیں بلکہ اس سے مربوط دیگر اشیاء بھی تیار کرتی ہے جن میں دہی، گھی، بٹر ملک، لسی، اور مٹھائی شامل ہیں۔ ٹی آر ایس حکومت نے 2016 ء میں وجئے ڈیری کا نام تلنگانہ وجئے ڈیری رکھا۔ انہوں نے بتایا کہ حیدرآباد میں روزانہ 22 لاکھ لیٹر دودھ کی طلب ہے اور وجئے ڈیری اس طلب کے مطابق دودھ سربراہ کررہی ہے۔ وجئے ڈیری کے پراڈکٹس کی مناسب تشہیر نہ ہونے کے سبب خانگی ڈیریز کا غلبہ برقرار ہے۔ انہوں نے نام لیئے بغیر تلگودیشم حکومت پر خانگی ڈیری کی حوصلہ افزائی کا الزام عائد کیا۔ انہوں نے کہا کہ کسانوں کو دودھ کی قیمت فوری طور پر ادا کی جارہی ہے۔ ایک لیٹر پر 4 روپئے کی امدادی قیمت زائد ادا کی جارہی ہے جس سے سالانہ 72 کروڑ روپئے کا بوجھ پڑا ہے۔ انہوں نے کہا کہ دودھ میں ملاوٹ کی شکایات کی جانچ کے لیے محکمہ میڈیکل اینڈ ہیلتھ کے تعاون سے اقدامات کئے  جائیں گے۔ سرینواس یادو نے ممنوعہ کیمیکل انجکشنس کے ذریعہ اضافہ دودھ حاصل کرنے پر روک لگانے کا تیقن دیا۔ انہوں نے کہا کہ دودھ کو زہریلا بنانے والوں کے خلاف سخت کارروائی کی جائے گی۔
ll    وزیر داخلہ این نرسمہا ریڈی نے کہا کہ ایسے پولیس عہدیدار جو سیول تنازعات میں مداخلت کررہے ہیں ان کے خلاف کارروائی کی جارہی ہے۔ کانگریس کے سمپت کمار اور دوسروں کے سوال پر وزیر داخلہ پر نے بتایا کہ بعض پولیس عہدیدار سیول اور اراضی کے معاملات میں مداخلت کرتے ہوئے پائے گئے ہیں۔ ایسے بعض عہدیداروں کا تبادلہ کردیا گیا یا پھر ان کے خلاف تادیبی کارروائی کرتے ہوئے معطل کیا گیا ہے۔ بعض معاملات میں فوجداری مقدمات درج کرتے ہوئے تحقیقات شروع کی گئی۔
ll    وزیر سیول سپلائز ای راجندر نے بتایا کہ نیشنل فوڈ سکیوریٹی ایکٹ اور اسٹیٹ فوڈ سکیوریٹی کارڈ کی تمام تفصیلات عوام کے لیے دستیاب ہیں جس کے ذریعہ بآسانی راشن کارڈ ڈائونلوڈ کیا جاسکتا ہے۔ جے وینگل رائو اور دوسروں کے سوال پر وزیر سیول سپلائز نے بتایا کہ 31 اضلاع کی تفصیلات عوام کے لیے دستیاب ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ 10 اضلاع میں 891 فیرپرائس شاپس کی خدمات کو بہتر بنانے کے اقدامات کئے گئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ 1545 فیر پرائز شاپس جو گریٹر حیدرآباد کے حدود میں ہیں، ان میں کمپیوٹرائزیشن کو متعارف کیا گیا ہے۔

TOPPOPULARRECENT