Sunday , August 20 2017
Home / کھیل کی خبریں / اسپین کی ماہر ہندوستانی ٹیم کاحالیہ اسپین ریکارڈ مایوس کن

اسپین کی ماہر ہندوستانی ٹیم کاحالیہ اسپین ریکارڈ مایوس کن

نئی دہلی ۔17مارچ ( سیاست ڈاٹ کام ) آئی سی سی ٹوئنٹی 20ورلڈ کپ کے افتتاحی مقابلہ میں نیوزی لینڈ کے خلاف ناگپور کی اسپین کیلئے سازگار وکٹ پر ہندوستان کی شکست حیران کن ہے ‘ کیونکہ کرکٹ ماہرین اور شائقین جہاں مہندر سنگھ دھونی کی زیر قیادت ہندوستانی ٹیم کو خطاب کی مضبوط دعویدار تصور کرنے کے علاوہ نیوزی لینڈ کے خلاف ایک جامع کامیابی کی امید کررہے تھے وہیںحیران کن طور پر میزبان ٹیم 79 رنز پر ڈھیرہوگئی۔ ناگپور میںہندوستانی ٹیم کو جس شرمناک شکست کا سامنا کرنا پڑا یہ پہلا موقع نہیں ہے ‘جب نشانہ کے تعاقب میں بہتر موقف میں رہنے کے باوجود ہندوستانی ٹیم کو شکست ہوئی ہو ۔ ہندوستانی ٹیم جس کی اصل طاقت اس کا بیٹنگ شعبہ ہے اور مانا جاتا ہے کہ ہندوستانی کھلاڑی اسپین کے ماہر ہیں لیکن چند مواقع پر اسپین کی ماہر تصور کی جانے والی ہندوستانی ٹیم اسپنرس کے خلاف تاش کے پتوں کی طرح بکھر گئی ۔ ناگپور میں میچل سنٹنر‘ نیتھن مکالم اور ایش سودھی ورلڈ کپ کے افتتاحی مقابلے میں ہندوستانی ٹیم کو 79 رنز پر بکھیر دیا ۔ اس سے قبل جولائی 2015ء میں زمبابوے کے خلاف جب ہندوستانی ٹیم 147رنز کا تعاقب کررہی تھی

اس موقع پر اسپنرس کی جوڑی گرائم کریم (3/18) ‘ شان ولیم (1/31) نے اندرون 9اوورس میں آدھی ہندوستانی ٹیم کوپویلین لوٹا دیا تھا اور ہرارے میں مہمان ٹیم کو دوسرے ٹوئنٹی 20میں 10رنز کی شکست برداشت کرنی پڑی ۔ 2009ء ورلڈ کپ میں جنوبی افریقہ نے ایک مشکل وکٹ پر اے بی ڈی ولیئرس کی ذمہ دارانہ بیٹنگ کی بدولت 130رنز اسکور کئے تھے لیکن ٹرینٹ برج کی اسپین وکٹ پر جو ہان بوتھا (3/16) رولف ونڈرمروی (1/13) اور جے پی ڈومینی (1/3) کی بولنگ کے خلاف ہندوستانی ٹیم کو 12رنز کی شکست برداشت کرنی پڑی تھی۔ ٹوئنٹی 20مقابلہ کے علاوہ ٹسٹ مقابلوں میں بھی اسپین کی ماہر ہندوستانی ٹیم کو اسپنرس کے خلاف ہزیمت برداشت کرنی پڑی ہے ۔ سری لنکا کے خلاف 2015ء میں گال کا پہلا ٹسٹ جہاں کامیابی کیلئے ہندوستان کو 176رنز بنانا تھا وہاں ہندوستانی ٹیم 112رنز پر ڈھیر ہوگئی اوراس مرتبہ رنگانا ہیراتھ 48 رنز کے عوض 7کھلاڑیوں کو آوٹ کرتے ہوئے ہندوستان کو پریشان کیاتھا ۔ آسٹریلیا کے خلاف 2014ء میں اوول میں کھیلا گیا پہلا ٹسٹ جہاں میزبان ٹیم 364 رنز کا دفاع کررہی تھی اور ایک موقع پر ویراٹ کوہلی کی شاندار بیٹنگ کی بدولت ہندوستانی ٹیم نشانہ کے تعاقب میں 205/2 کے طاقتور موقف میں تھی لیکن میزبان اسپنر نیتھن لیان نے 152رنز دے کر 7کھلاڑیوں کو آؤٹ کیا اور آسٹریلیا 48رنز سے کامیاب رہا ۔ چائے کے وقفہ کے وقت ہندوستان کوکامیابی کیلئے 37اوورس میں 158 رنز بنانے تھے اور 8وکٹیں محفوظ تھیں جو 73رنز کے اضافہ  پر ہی پویلین لوٹ گئیں ۔ 2014ء کا دورہ انگلینڈ جہاں پہلے ٹسٹ میں کامیابی کے بعد ہندوستان کو ریکارڈ سیریز کامیابی کیلئے پسندیدہ موقف حاصل ہوچکا تھا لیکن تیسرے اور چوتھے ٹسٹ میں معین علی نے ہندوستانی خیمہ میں تباہی مچائی تھی۔ تیسرے ٹسٹ کے آخری دن  ہندوستان کومقابلہ ڈرا کرنے کیلئے صرف دن کا کھیل ختم کرنا تھا اور اس کے پاس 6وکٹیں محفوظ تھیں لیکن معین علی نے ساؤتھمپٹن کی وکٹ پر 6/67 کی بولنگ کے ذریعہ ہندوستان کو 266 رنز کی شکست برداشت کرنے پر مجبور کیا ۔

TOPPOPULARRECENT