Wednesday , August 16 2017
Home / شہر کی خبریں / اسکولس میں کتب اور نصاب کی منصوبہ بندی

اسکولس میں کتب اور نصاب کی منصوبہ بندی

بیاگس کے وزن کی کمی پر حکومت کے احکامات سے محکمہ تعلیمات کی چاندی
حیدرآباد۔21جولائی (سیاست نیوز) حکومت نے اسکولی طلبہ کی سہولت کے لئے احکامات کی اجرائی کے ذریعہ بیاگ کے وزن میں کمی کے ساتھ اول تا پانچویں جماعت کے طلبہ کو ہوم ورک سے استثنی دے دیا ہے لیکن حکومت کے ان احکامات سے کیا واقعی طلبہ کو فائدہ ہوگا یا خانگی اسکول انتظامیہ کی جانب سے ان احکامات پر عمل آوری کروائی جائے گی؟ احکامات کی اجرائی کے بعد سے خانگی اسکولوں کے ذمہ دارو ںکا کہنا ہے کہ حکومت کی جانب سے جاری کردہ احکام دراصل محکمہ تعلیم کے عہدیداروں کو رشوت کی راہ ہموار کی ہے کیونکہ احکامات ایسے وقت جاری کئے گئے ہیں جس وقت تعلیمی سال شروع ہوئے 2ماہ کا عرصہ گذر چکا ہے اور تمام اسکولوں میں اسکولی کتب اورنصاب کی منصوبہ بندی کو قطعیت دیدی گئی ہے۔ محکمہ تعلیم کے عہدیداروں نے بتایا کہ حکومت کی جانب سے جاری کردہ احکام پر فوری اثر کے ساتھ عمل آوری کو ممکن بنایا جانا چاہئے ایسا نہ کرنے والے تعلیمی اداروں کے خلاف محکمہ تعلیم کی جانب سے سخت کاروائی کی جائے گی تاکہ معصوم طلبہ کو راحت پہنچانے کیلئے کئے گئے اقدامات کو عملی جامہ پہنایا جا سکے۔ شہر حیدرآباد کے ایک سرکردہ تعلیمی ادارہ کے ذمہ دار کا کہنا ہے کہ ریاستی حکومت کی جانب سے جاری کردہ احکامات پر عمل آوری ممکن نہیں ہے کیونکہ احکامات کی اجرائی میں تاخیر کے علاوہ تعلیمی کیلنڈر ترتیب دیا جا چکا ہے اس میں تبدیلی تعلیمی سال کو برباد کرنے کا موجب بن سکتی ہے۔ اولیائے طلبہ و سرپرستو ںکا کہنا ہے کہ حکومت کے احکامات کی اجرائی کے بعد بیاگ کے وزن میں تخفیف کے علاوہ اول تا پانچویں جماعت کے بچوں کو ہوم ورک سے استثنی دیا جانا چاہئے کیونکہ اسکول کے اوقات کے بعد طلبہ کو کھیلنے کیلئے وقت ہی دستیاب نہیں ہوتا بلکہ وہ اسکول سے واپس ہونے کے بعد تھک جاتے ہیں اور کچھ دیر آرام کے فوری بعد انہیں ہوم ورک اور اسکول کی جانب سے دیئے گئے پراجکٹ ورک کیلئے پریشان رہنے لگتے ہیں اس طرح بچوں سے ان کا بچپن چھینا جانے لگا ہے اور والدین اس بات کو محسوس کر رہے ہیں۔ اسی لئے ان کا کہنا ہے کہ حکومت کا فیصلہ درست ہے لیکن اسکول انتظامیہ یہ استدلال پیش کر رہے ہیں کہ ریاستی حکومت کا فیصلہ مسابقتی دوڑ میں ریاست کے طلبہ کو پیچھے کرنے کا سبب بن سکتا ہے کیونکہ طلبہ میں تخلیقی اور تحقیقی صلاحیتیں پیدا کرنے کیلئے یہ اسکول اپنے طور پر پراجکٹس اور ہوم ورک کی ذمہ داری تفویض کرتا ہے جس کے نتیجہ میں طلبہ میں دلچسپی پیدا ہوتی ہے۔

TOPPOPULARRECENT