Tuesday , September 26 2017
Home / دنیا / اشتعال انگیز بیان بازی کیخلاف نتن یاہو کو امریکہ کا انتباہ

اشتعال انگیز بیان بازی کیخلاف نتن یاہو کو امریکہ کا انتباہ

واشنگٹن ۔23 اکٹوبر (سیاست ڈاٹ کام) امریکی وائٹ ہاؤس نے انتہا پسند اسرائیلی وزیراعظم بنیامین نتن یاہو کو خبردار کیا ہے کہ وہ اشتعال انگیز بیانات جاری کرنے سے گریز کریں۔ وائٹ ہاؤس نے یہ انتباہ صیہونی وزیراعظم کی ایک حالیہ تقریر کے ردعمل میں جاری کیا ہے جس میں انہوں نے یہ بے بنیاد دعویٰ کیا تھا کہ مفتی اعظم فلسطین امین الحسینی نے ایڈولف ہٹلر کو یورپ میں یہود کے قتل عام پر اکسایا تھا۔ نتن یاہو کے اس متنازعہ دعوے کے ردعمل میں وائٹ ہاؤس کے ترجمان ایرک شلز نے نیوز بریفنگ کے دوران کہا ہے کہ ’’میرے خیال میں یہاں وائٹ ہاؤس میں اس بات میں کوئی شک نہیں پایا جاتا ہے کہ ہولو کاسٹ کا کون ذمہ دار تھا جس کے دوران 60 لاکھ یہود کا قتل عام کیا گیا تھا‘‘۔ انہوں نے کہا کہ ’’ہم سرکاری اور نجی طور پر طرفین پر یہ زور دیتے رہیں گے کہ وہ ایسے اشتعال انگیز بیانات، الزامات یا اقدامات سے گریز کریں کہ جن سے تشدد کو شہ مل سکتی ہو‘‘۔ترجمان کا کہنا تھا ’’ہم اس بات میں یقین رکھتے ہیں کہ اشتعال انگیز بیانات کو بند کرنے کی ضرورت ہے‘‘۔ وائٹ ہاؤس کی جانب سے یہ ردعمل برلن میں وزیرخارجہ جان کیری اور نتن یاہو کے درمیان ملاقات کے بعد سامنے آیا ہے۔جان کیری نے فلسطینیوں اور اسرائیلیوں پر زوردیا تھا کہ وہ اشتعال انگیزی کا سلسلہ بند کردیں۔ انتہا پسند نتن یاہو نے گذشتہ منگل کے روز مقبوضہ بیت المقدس میں منعقدہ عالمی صیہونیت کانگریس سے تقریر میں کہا تھا کہ مفتی امین الحسینی اور ہٹلر کے درمیان نومبر1941ء میں ملاقات ہوئی تھی۔

TOPPOPULARRECENT