Sunday , August 20 2017
Home / اضلاع کی خبریں / اصلی چہرہ بے نقاب کرنے پر مجلس کی غنڈہ گردی: کانگریس محمد علی شبیر کے آبائی مقام کاماریڈی پر زبردست احتجاجی مظاہرہ، ایم پی اویسی کے خلاف کارروائی کا مطالبہ

اصلی چہرہ بے نقاب کرنے پر مجلس کی غنڈہ گردی: کانگریس محمد علی شبیر کے آبائی مقام کاماریڈی پر زبردست احتجاجی مظاہرہ، ایم پی اویسی کے خلاف کارروائی کا مطالبہ

کاماریڈی : 3؍ فروری (سیاست ڈسٹرکٹ نیوز)گریٹر میونسپل کارپوریشن حیدرآباد کے انتخابات میں قانون ساز کونسل کے اپوزیشن لیڈر محمد علی شبیر، صدر پردیش کانگریس اتم کمارریڈی پر کئے گئے حملے پر آج کاماریڈی میں محمد علی شبیر کے آبائی وطن میں زبردست احتجاج کرتے ہوئے کانگریسی قائدین نے رکن پارلیمنٹ اسد الدین اویسی کے علامتی پتلہ کو نذرآتش کرنے کے علاوہ صدر مجلس کو گرفتار کرنے اور مجلس پرپابندی عائد کرنے اور الیکشن کمیشن سے مجلس کے خلاف کارروائی کرنے کا مطالبہ کیا ۔ گریٹر میونسپل انتخابات میں میر چوک علاقہ میں قانون ساز کونسل کے اپوزیشن لیڈر محمد علی شبیر، صدر پردیش کانگریس اتم کمارریڈی پر بیرسٹر اسد الدین اویسی کی نگرانی میں منصوبہ بند طریقہ سے حملہ کرتے ہوئے شبیر علی کو زخمی اور اتم کمارریڈی کی کار کو نقصان پہنچانے پر صدرنشین بلدیہ کاماریڈی پیپری سشما، ٹائون کانگریس صدر کے سرینواس رائو، اراکین بلدیہ کے لکشمن، این دامو دھر ریڈی، ایس موہن، بی رامو، جی سرینواس، رام موہن، محمد جمیل کے علاوہ ضلع وقف کمیٹی کے نائب صدر سید انوراحمد صدر وقف کمیٹی کاماریڈی، میرہدایت علی حاجی ، محمد بدر الدین پاشاہ، محمد امجد، محمد ماجد اللہ ، محمد حاجی، محمد واجد علی، جمیل، مولوی الیاس و دیگر نے آج نظام ساگر چوراستہ پر زبردست احتجاج کیا اور راستہ روکو احتجاج کیا۔ کانگریس قائدین کی جانب سے راستہ روکو کی وجہ سے ٹرافک میں زبردست خلل پیدا ہوگیا۔ کانگریسی قائدین نے اسد الدین اویسی کے علامتی پتلہ کو نذرآتش کیا۔ اس موقع پر صدرنشین بلدیہ سشما، صدر ٹائون کانگریس کے سرینواس رائو نے صحافیوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ گریٹر میونسپل انتخابات میں مجلس ہمیشہ دھاندلیاں کرتے ہوئے آرہی ہے اور اس مرتبہ کانگریس کے قائد محمد علی شبیر نے مجلس کی دھاندلیوں کو روکنے میں اور انتخابی مہم کے دوران مجلس کی اصلیت کو واقف کروانے میںاہم رول ادا کیا۔ جس کی وجہ سے مجلس بوکھلاہٹ کا شکار ہوگئی تھی۔

مجلس ہمیشہ پرانے شہر کو ہمیشہ اپنی وارثت سمجھی ہوئی تھی جس کی وجہ سے کوئی بھی پارٹیاں پرانے شہر میں انتخابی مہم چلانے سے گریز کررہے تھے لیکن اس مرتبہ محمد علی شبیر میں پرانے شہر میں جلسوں کے انعقاد کے ذریعہ عوام کو مجلس کی حقیقت سے واقف کراتے ہوئے کانگریس کے حق میں ووٹ دینے اور شہر کی ترقی کے ضامن بننے کی اپیل کی تھی جس کی وجہ سے عوام کا رحجان کانگریس کی طرف ہوگیا تھااور مجلس کی دھاندلیوں کا خاتمہ ہوتا ہوتا دیکھ کر بوکھلاہٹ کا شکار اسد الدین اویسی میر چوک علاقہ میں شبیر علی اور اتم کمار ریڈی پر ان کے کارکنوں کے ذریعہ حملہ کروایا اور یہ راست طور پر بھی اس حملہ میں شریک رہے اورایک غنڈہ کی طرح سلوک کیا۔ رکن پارلیمنٹ کے عہدہ پر داغ لگایااور مجلس کی بڑھتی ہوئی غنڈہ گردی کو روکنے کیلئے محمد علی شبیر کی کامیابی پر مجلس حملوں پر اتر آرہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ مجلس کے کارکن دہشت گردوں کی طرح سلوک کررہے ہیںاور مجلس ایک دہشت گرد جماعت ہے جس کی وجہ سے اس پر پابندی عائد کرنا ضروری ہے۔ الیکشن کمیشن سے مطالبہ کیا کہ مجلس ہمیشہ دہشت گردی کے ذریعہ دھاندلیاں کرتے ہوئے کامیابی حاصل کررہی ہے لہذا مجلس پر پابندی عائد کرتے ہوئے انتخابات میں حصہ لینے سے روکنے اور رکن پارلیمنٹ اسد الدین اویسی کی رکنیت کو برخواست کردینے کا مطالبہ کیا۔مجلس کو اگر جمہوریت پر یقین ہے تو آزادانہ و منصفانہ طور پر انتخابات حصہ لیتے ہوئے کامیابی حاصل کرے دہشت گردوں کی طرح حرکت کرتے ہوئے عوام میں خوف پیدا کرتے ہوئے ووٹ حاصل کرنے کے بجائے آزادانہ طورپر ووٹ حاصل کرے تو بہتر ہوگا۔ انہوں نے مجلسی قائدین کو انتباہ دیا کہ آنے والے دنوں میں مجلس کو اس کا خمیازہ بھگتنا پڑیگا۔ مسٹر کیلاش سرینواس رائو نے پولیس کے رویہ پر بھی سخت تنقید کرتے ہوئے کہا کہ پولیس کانگریسی قائدین پر حملے کے وقت خاموش تماشائی بنی رہی ہے جو عہدیدار اس وقت ڈیوٹی پر تعینات تھے ان پولیس عہدیداروں کیخلاف بھی کارروائی ناگزیر قرار دیتے ہوئے انہیں فوری معطل کرنے کا مطالبہ کیااور اسد الدین اویسی پر سنگین مقدمات درج کرتے ہوئے فوری گرفتاری کرنے کا مطالبہ کیا۔

TOPPOPULARRECENT