Friday , October 20 2017
Home / دنیا / افغان قائدین پر اتحادکیلئے امریکہ کا اصرار

افغان قائدین پر اتحادکیلئے امریکہ کا اصرار

وزرائے خارجہ امریکہ و جاپان کی ملاقات ‘تعینات امریکی فوجیوں میں تبدیلی کی تردید
کابل۔10اپریل ( سیاست ڈاٹ کام ) صدر افغانستان اشرف غنی نے آج اصلاحات میں پیشرفت کا تیقن دیا جب کہ اٹارنی جنرل اور وزیر داخلہ کابینہ کی توثیق حاصل ہوگئی جس کی ایک عرصہ سے خواہش کی جارہی تھی ۔ وزیر خارجہ امریکہ جان کیری نے حکومت افغانستان سے اصرار کیا کہ اقتدار میں شراکت داری کیلئے گروہ واری اختلافات کو بالائے طاق رکھ دیا جائے ۔ انہوں نے کہا کہ یہی ملک کے مفاد میں ہوگا ۔ اس کے باوجود صدر افغانستان چیف ایگزیکٹیو عبداللہ عبداللہ کے ساتھ اپنے تلخ اختلافات کو ترک کرنے پر آمادہ نہیں معلوم ہوتے ۔عبداللہ عبداللہ حکومت افغانستان میں گذشتہ 18مہینے سے شامل ہیں ۔ جان کیری نے اس اتحاد کیلئے کوشش کی تھی ۔ بائیں بازو کے وزرائے داخلہ اہم موقف رکھتے ہیں جب کہ امریکہ کے حلیف قانون کی ناقص حکمرانی ‘ کرپشن اور طالبان کی مزاحمت کا سامنا کررہے ہیں ۔ شورش پسندی میں اضافہ ہوچکا ہے ۔ وزرائے خارجہ کی ایک ملاقات کے دوران جان کیری نے کہا کہ جمہوریت کیلئے قابل اعتبار محکموں کی ضرورت ہے ‘ وہ ایک پریس کانفرنس سے خطاب کررہے تھے

جب کہ وزیر خارجہ افغانستان سے ملاقات کے بعد جاپان روانہ ہونے والے تھے ۔ انہوں نے کہا کہ عوام کو سیاسی ‘ نسلی اور جغرافیائی گروہ بندی ترک کردینی چاہیئے اور متحد ہوکر مشترکہ بھلائی کیلئے جدوجہد کرنی چاہیئے ۔ غیر مستحکم صیانتی صورتحال کی اہمیت پر زور دیتے ہوئے جان کیری نے کہا کہ امریکہ سفارت خانہ کابل میں واقع ہے جو دھماکوں کے مقام سے جو کئی مرحلوں پر مشتمل تھے ‘ صرف 650فٹ دوری پر ہے ۔ ایک امریکی عہدیدار ان دھماکوں کو چھوٹے دھماکے قرار دیا اور کہا کہ وزیر خارجہ ان دھماکوں کا نشانہ تھے ۔ ایسی کوئی اطلاع نہیں ملی ہے ۔ مقامی ذرائع ابلاغ کی اطلاع کے بموجب ان دھماکوں سے کوئی بھی زخمی نہیں ہوا ۔ صدر افغانستان اشرف غنی نے ایک پریس کانفرنس میں پارلیمنٹ میں کابینی ووٹوں کو اہم سیاسی موڑ قرار دیتے ہوئے کہا کہ اس سمت میں پیشرفت کی جائے گی اور ترمیم کیلئے جدوجہد کی جائے گی ۔ جامع اصلاحات نافذ کی جائے گی ۔ جان کیری نے اشرف غنی اور عبداللہ عبداللہ کے درمیان اختلافات ختم کردینے کی ضرورت پر زور دیا جو گذشتہ دو سال کے عرصہ میں صدارتی انتخابات کے بعد مزید شدت اختیار کرگئے ہیں ۔ آئندہ مہینوں میں ناٹو اور عطیہ دہندہ ممالک کا اجلاس مقرر ہے جس میں طویل مدتی صیانت کی تاریخ کا تعین کیا جائے گا  اور حکومت افغانستان کی برقراری کیلئے اہم امداد دینے کا بھی تیقن دیا جائے گا ۔ جان کیری نے طالبان کی حکومت کے خلاف مزاحمت ختم کرنے کے مقصد سے کہا کہ طالبان کو مذاکرات میں شرکت کرناچاہیئے اور مزاحمت ترک کردینی چاہیئے ۔ انہوں نے کہا کہ صدر امریکہ بارک اوباما افغانستان میں تعینات فوجیوں کی تعداد میں تبدیلی کرنا نہیں چاہتے ۔ افغانستان میں فی الحال 9800 فوجی تعینات ہیں جو آئندہ سال کم ہوکر 5500رہ جائیں گے ۔ اشرف غنی نے صدر امریکہ سے فوجیوں کی افغانستان میں تعیناتی کے مسئلہ پر تبادلہ خیال کا امریکی کمانڈر برائے افغانستان کو تیقن دیا ۔

TOPPOPULARRECENT