Wednesday , October 18 2017
Home / شہر کی خبریں / اقامتی اسکولس میں تعلیم کے آغاز کے لیے تاخیر

اقامتی اسکولس میں تعلیم کے آغاز کے لیے تاخیر

اضلاع میں اسکولس کی کشادگی کے لیے عہدیدار سرگرم : اے کے خاں کی ٹیلی کانفرنس
حیدرآباد۔/14جون، ( سیاست نیوز) ڈائرکٹر جنرل اینٹی کرپشن بیورو و نائب صدر نشین میناریٹی ریسیڈنشیل اسکولس سوسائٹی اے کے خاں نے آج ٹیلی کانفرنس کے ذریعہ اقلیتی بہبود کے عہدیداروں سے بات چیت کی جو مختلف اضلاع میں اقامتی اسکولس کے دورہ پر ہیں۔ اقلیتی اداروں کے اعلیٰ عہدیداروں کو مختلف اضلاع میں اسکولس روانہ کیا گیا جہاں انہوں نے طلبہ اور سرپرستوں کے ساتھ مشاورتی اجلاس میں شرکت کی۔ اے کے خاں نے عہدیداروں کو بتایا کہ  اقامتی اسکولس میں تعلیم کے آغاز کو مزید 10تا 15دن کا وقت لگے گا اور باقاعدہ تعلیم کے آغاز سے 3 دن قبل سرپرستوں کو اطلاع دی جائے گی تاکہ وہ بچوں کو اسکول بھیج سکیں۔ ریاست کے تمام 71 اقامتی اسکولس میں آج طلباء اور ان کے سرپرستوں کے ساتھ اجلاس ہوا جس میں اسکولس میں فراہم کی جارہی سہولتوں سے واقف کرایا گیا۔ جن عہدیداروں نے مختلف اضلاع میں اسکولوں کا دورہ کیا ان میں محمد اسد اللہ ضلع کھمم، پروفیسر ایس اے شکور کریم نگر، معصومہ بیگم محبوب نگر، بی وکٹر عادل آباد کے علاوہ ڈسٹرکٹ میناریٹی ویلفیر آفیسرس اور ایکزیکیٹو ڈائرکٹرس اقلیتی فینانس کارپوریشن شامل ہیں۔ اے کے خاں نے ٹیلی کانفرنس کے ذریعہ اسکولوں میں عہدیداروں کی موجودگی اور وہاں طلباء اور سرپرستوں کے ردعمل کے بارے میں معلومات حاصل کی۔ انہوں نے اسٹاف کے رپورٹ کرنے کا بطور خاص جائزہ لیا۔ اے کے خاں نے عہدیداروں کو مشورہ دیا کہ وہ سرپرستوں کو معیاری تعلیم اور تغذیہ بخش غذا کی فراہمی سے واقف کرائیں۔ ٹیچرس کو بھی ضروری ہدایات دی جائیں کہ وہ طلباء کے ساتھ دوستانہ اور مشفقانہ رویہ برقرار رکھیں تاکہ طلباء کو تعلیم کے حصول میں دلچسپی برقرار رہے۔ انہوں نے بتایا کہ رمضان المبارک کے دوران طلباء اور طالبات کے لئے سحر و افطار کا انتظام کیا جائے گا۔ اقامتی اسکولس کیلئے متعین کئے گئے سیکورٹی گارڈز ڈیوٹی پر پہنچ چکے ہیں اور گرلز اقامتی اسکولس میں خاتون سیکورٹی گارڈز کو تعینات کیا گیا ہے۔ سرپرستوں نے اسکول میں دی جانے والی سہولتوں کے بارے میں مختلف سوالات کئے جن کا عہدیداروں نے جواب دیا۔ روزانہ 3 وقت فراہم کی جانے والی غذا کا مینو بھی والدین کے روبرو پیش کیا گیا۔ بتایا جاتا ہے کہ داخلوں کا عمل مکمل ہونے کے باوجود ابھی بھی کئی سرپرست رجوع ہورہے ہیں۔ اسکولوں میں جن طلباء کو داخلہ حاصل ہوا اُن میں تلگو ، انگلش اور اردو میڈیم کے علاوہ خانگی اور سرکاری مدارس کے طلباء شامل ہیں لہذا ان تمام میں تعلیمی قابلیت کے اعتبار سے یکسانیت پیدا کرنے کیلئے ابتداء میں 3 ماہ کا برج کورس شروع کیا جائے گا۔ اے کے خاں نے کہا کہ کارپوریٹ طرز کی تعلیم فراہم کی جائے گی اور پبلک سرویس کمیشن کے ذریعہ مستقل طور تدریسی اسٹاف کے تقررات عمل میں لائے جائیں گے۔اسکول سوسائٹی نے آج سے باقاعدہ تعلیم کے آغاز کا فیصلہ کیا تھا تاہم انفراسٹرکچر کی فراہمی میں تاخیر کے سبب آج صرف طلباء اور سرپرستوں کے ساتھ اجلاس منعقد کرتے ہوئے تفصیلات سے آگاہ کیا گیا۔

TOPPOPULARRECENT