Friday , August 18 2017
Home / شہر کی خبریں / اقتدار کیلئے ٹی ہریش راؤ اور کے ٹی آر کے درمیان سردجنگ

اقتدار کیلئے ٹی ہریش راؤ اور کے ٹی آر کے درمیان سردجنگ

ٹی آر ایس حکومت کسی بھی وقت سیاسی بحران کا شکار ہوسکتی ہے
حیدرآباد ۔ 16 ۔ جون : ( سیاست نیوز ) : تلنگانہ پردیش کانگریس کمیٹی نے کہا کہ اقتدار کے لیے ہریش راؤ اور کے ٹی آر کے درمیان سرد جنگ جاری ہے ۔ ٹی آر ایس حکومت کسی بھی وقت سیاسی بحران کا شکار ہوسکتی ہے ۔ چیف منسٹر عہدے کے لیے اپنے فرزند کی دعویداری کو مضبوط کرنے کے لیے چیف منسٹر تلنگانہ کے سی آر دولت اور عہدوں کا لالچ دیتے ہوئے دوسری جماعتوں کے ارکان اسمبلی کو ٹی آر ایس میں شامل کررہے ہیں ۔ آج گاندھی بھون میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے تلنگانہ پردیش کانگریس کمیٹی کے نائب صدر مسٹر ملو روی نے کہا کہ 2014 کے عام انتخابات میں تلنگانہ کی عوام نے ٹی آر ایس کے 63 ارکان اسمبلی کو کامیاب بناتے ہوئے ٹی آر ایس کو حکومت تشکیل دینے کے لیے مکمل اکثریت فراہم کی ہے ۔ باوجود اس کے چیف منسٹر تلنگانہ کے سی آر غیر یقینی صورتحال کا شکار ہے ۔ چیف منسٹر کے ارکان خاندان میں بھانجے ہریش راؤ اور فرزند کے ٹی آر کے درمیان اقتدار کے لیے رسہ کشی شروع ہوگئی ہے ۔ ٹی آر ایس کے 63 کے منجملہ بیشتر ارکان اسمبلی کی تائید ہریش راؤ کو حاصل ہے جس سے چیف منسٹر کے سی آر بوکھلاہٹ کا شکار ہے ۔ انہیں ٹی آر ایس حکومت میں پھوٹ کے آثار نظر آرہے ہیں ۔ اپنے فرزند کے ٹی آر کے چیف منسٹر عہدے کی دعویداری کو مستحکم کرنے کے لیے کانگریس ، تلگو دیشم ، وائی ایس آر کانگریس پارٹی ، سی پی آئی اور بہوجن سماج پارٹی کے ارکان اسمبلی کو ٹی آر ایس میں شامل کررہے ہیں ۔ ٹی ار ایس میں پکنے والی کھچڑی سے عوام کی توجہ ہٹانے کے لیے چیف منسٹر نے کل کانگریس پر حکومت کا تختہ الٹنے کی سازش کا الزام عائد کیا ہے ۔ جو حقائق سے بعید اور بے بنیاد ہے ۔ کانگریس تلنگانہ میں اپوزیشن کا تعمیری رول ادا کررہی ہے ۔ عوامی مسائل کو اٹھاتے ہوئے اس کو حل کرانے کی کوشش کررہی ہے ۔ اگر عوامی مسائل پر حکومت کی ناکامی کے تعلق سے اگر حکومت کے خلاف تحریک عدم اعتماد پیش کرنے کی کوشش کی گئی تو اس کو تختہ الٹنے کی سازش کیسے قرار دی جاسکتی ہے ۔ مجلس کے رکن پارلیمنٹ اسد الدین اویسی کا حوالہ دیتے ہوئے کانگریس پر جو الزام عائد کیا گیا ہے وہ بے بنیاد ہے ۔ مسٹر ملو روی نے کہا کہ چیف منسٹر تلنگانہ سیاسی انحراف کو ترغیب دینے کے ساتھ ساتھ اس کی مداخلت کررہے ہیں جو دستور ہند کی کھلی خلاف ورزی ہے ۔ استحکام حکومت کا مطلب اپوزیشن کو کمزور کرنا ہے کیا چیف منسٹر اس کی وضاحت کریں ۔ چیف منسٹر کے سی آر کو ٹی آر ایس کے ارکان اسمبلی پر بھروسہ نہیں ہے کیوں کہ ٹی آر ایس ارکان اسمبلی کی اکثریت ہریش راؤ گروپ سے وابستہ ہے ۔ اس لیے دوسری جماعتوں کے ارکان اسمبلی ارکان پارلیمنٹ کو ٹی آر ایس میں شامل کرتے ہوئے حکومت میں پڑنے والی پھوٹ سے نمٹنے کی کوشش کی جارہی ہے ۔ ٹی آر ایس حکومت تمام محاذوں میں ناکام ہوچکی ہے ۔۔

TOPPOPULARRECENT