Tuesday , September 26 2017
Home / سیاسیات / اقتدار کی ہوس میں نظریات فراموش

اقتدار کی ہوس میں نظریات فراموش

کانگریس اور سی پی ایم میں مفاہمت پر ممتابنرجی کا الزام
کولکتہ ۔ 12 فبروری (سیاست ڈاٹ کام) مغربی بنگال میں اسمبلی انتخابات کے پیش نظر اپوزیشن سی پی ایم اور کانگریس میں مفاہمت کی کوششوں کا تمسخر اڑاتے ہوئے ترنمول کانگریس کی سربراہ ممتابنرجی نے انتخابی اتحاد، کو ایک فاش غلطی سے تعبیر کیا۔ سی پی ایم اور کانگریس کے درمیان اتحاد کی کوشش ایک غلطی ثابت ہوئی کیونکہ وہ انتخابی مفاہمت کی خاطر اپنے نظریات کو قربان کررہے ہیں۔ ترنمول کانگریس کے جنرل کونسل اجلاس کو مخاطب کرتے ہوئے ممتابنرجی نے کہا کہ اگر یہ لوگ اقتدار اور دولت کیلئے اپنے نظریات کو فراموش کردیں گے تو ان کے پاس کیا باقی رہے گا۔ میں نہ ہی دائیں بازو کی ہوں اور نہ ہی بائیں بازو کی ہوں (لیفٹ ۔ رائیٹ) میں صرف ترقی پسند ہوں۔ ایک شخص موت آنے پر دنیا سے گذر جاتا ہے لیکن اس کے نظریات زندہ رہتے ہیں لیکن کانگریس اور سی پی ایم ایک فاش غلطی کرنے جارہے ہیں۔ سی پی ایم تنقید کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ گذشتہ ایک ماہ سے اتحاد کی تجویز پر رپورٹس کا وہ گہرائی سے مطالعہ کررہی ہیں۔ یہ وہی سی پی ایم ہے جس نے کانگریس کو بوفورس گاندھی (بوفورس اسکام) اور ایمرجنسی کے وقت اندرا گاندھی کو فاشست قرار دیا تھا۔ ہمیں آج بھی وہ دن یاد ہے لیکن سی پی ایم ان تمام باتوں کو فراموش کرتے ہوئے کانگریس کے ساتھ اتحاد کی کوشش میں ہے۔ چیف منسٹر ممتابنرجی نے کہا کہ کانگریس اور سی پی ایم کے اتحاد سے ترنمول کانگریس کے امکانات پر اثر نہیں ہوگا۔ تم لوگ میری پارٹی کو کمزور نہیں کرسکتے اور میں جب زندہ رہوں گی شیرنی کی طرح رہوں گی۔

TOPPOPULARRECENT