Friday , September 22 2017
Home / سیاسیات / اقرباء پروری کے الزام پر کیرالا کے وزیر صنعت مستعفی

اقرباء پروری کے الزام پر کیرالا کے وزیر صنعت مستعفی

سی پی ایم کی زیر قیادت ایل ڈی ایف حکومت کو پشیمانی
تھروننتھاپورم ۔ 14 ۔ اکٹوبر : ( سیاست ڈاٹ کام ) : کیرالا میں5 ماہ قدیم سی پی ایم کی زیر قیادت ایل ڈی ایف حکومت کو آج اس وقت پشیمانی اٹھانی پڑی جب وزیر صنعت ای پی جیہ راجن نے سرکاری عہدہ پر تقرر کے تنازعہ کے پیش نظر کابینہ سے استعفیٰ دیدیا ۔ سی پی ایم کی ریاستی سکریٹریٹ کے اجلاس کے بعد انہوں نے پی وجین کابینہ سے استعفیٰ کا اعلان کردیا ۔ جب کہ پارٹی نے استعفیٰ کا فیصلہ وزیر موصوف کے صوابدید پر چھوڑ دیا تھا۔ اجلاس سے باہر آتے ہوئے جیہ راجن نے رپورٹروں سے کہا کہ ’ اب تو خوش ہو ‘ سی پی ایم کے ریاستی سکریٹری کے بالاکرشنن نے بتایا کہ پارٹی اصولوں کی پاسداری کے لیے جیہ راجن سے استعفیٰ کا فیصلہ کیا ہے ۔ کنور کے مضبوط لیڈر اور کابینہ میں دوسرے نمبر کے وزیر جیہ راجن نے سکریٹریٹ اجلاس میں شرکت سے قبل یہ اعتراف کیا ہے کہ محکمہ صنعت میں اپنے ایک رشتہ دار کا تقرر کر کے انہوں نے فاش غلطی کا ارتکاب کیا ہے ۔ چیف منسٹر پی وجین کے بااعتماد رفیق جیہ راجن اپنے بھتیجہ سدھیر نمبیار جو کہ کنور کے رکن پارلیمنٹ پی کے شریمتی کے فرزند ہیں کیرالا انڈسٹریل انٹرپرائزس لمٹیڈ میں منیجنگ ڈائرکٹر کی حیثیت سے تقرر کر کے تنازعہ میں پھنس گئے تھے ۔ تاہم حکومت نے بعد ازاں اس تقرر کو منسوخ کردیا تھا ۔ علاوہ ازیں جیہ راجن کے بھائی کی بہو دیپتی نشاد کا تقرر بھی تنازعہ کا شکار ہوگیا ۔ انہوں نے 2 یوم قبل استعفیٰ دیدیا تھا ۔ یہ دریافت کیے جانے پر کہ جیہ راجن کے خلاف کوئی تادیبی کارروائی کی جاسکتی ہے ؟ کے بالا کرشنن نے کہا کہ وہ پارٹی کی مرکزی کمیٹی کے رکن ہیں اور مرکزی قیادت ہی کوئی فیصلہ کرسکتی ہے ۔۔

TOPPOPULARRECENT