Monday , September 25 2017
Home / شہر کی خبریں / اقلیتی اقامتی اسکولس میں آئندہ سال سے مزید اضافہ

اقلیتی اقامتی اسکولس میں آئندہ سال سے مزید اضافہ

کارکردگی میں بہتری کی مساعی، اے کے خان کا اعلیٰ عہدیداروں کے ساتھ اجلاس
حیدرآباد۔/22اکٹوبر، ( سیاست نیوز) تلنگانہ میں قائم کردہ اقلیتی اقامتی اسکولس کی کارکردگی بہتر بنانے اور آئندہ تعلیمی سال سے مزید 89 اسکولوں کے آغاز کو یقینی بنانے کیلئے ڈائرکٹر جنرل اینٹی کرپشن اے کے خاں نے آج اعلیٰ عہدیداروں کا اجلاس طلب کیا۔ اقلیتی اقامتی اسکولس سوسائٹی کے عہدیداروں کے علاوہ اسٹیٹ آفیسرس، ڈسٹرکٹ میناریٹی ویلفیر آفیسرس، ہر ضلع کے آفیسر آن اسپیشل ڈیوٹی اور ویجلنس ٹیم کے عہدیداروں نے شرکت کی۔ سکریٹری اقلیتی بہبود عمر جلیل کے علاوہ اقلیتی اقامتی اسکولس سوسائٹی کے سکریٹری بی شفیع اللہ، اسپیشل آفیسر حج کمیٹی پروفیسر ایس اے شکور، سروے کمشنر وقف معصومہ بیگم اور منیجنگ ڈائرکٹر کرسچین فینانس کارپوریشن بی وکٹر نے موجودہ اسکولوں کی کارکردگی کے بارے میں اپنے مشاہدات سے واقف کرایا۔ اے کے خاں نے تمام 71 موجودہ اسکولوں کی کارکردگی کے بارے میں رپورٹ حاصل کرتے ہوئے عہدیداروں کو ہدایت دی کہ معیار تعلیم اور بنیادی سہولتوں کی فراہمی کے مسئلہ پر کوئی سمجھوتہ نہ کریں۔ انہوں نے اسکولوں سے طلبہ کی تعلیم ترک کرنے کے واقعات پر روک لگانے کی خواہش کی اور کہا کہ بچوں میں تعلیم کا شوق اس قدر پیدا کیا جائے کہ وہ اسکول چھوڑنے کیلئے تیار نہ ہوں۔ انہوں نے اسکولوں کی کارکردگی کے اچانک معائنہ کیلئے قائم کردہ 3 ویجلنس ٹیموں کے عہدیداروں سے تفصیلات حاصل کی۔ ان ٹیموں میں ریٹائرڈ پولیس عہدیدار اور ایک ریٹائرڈ محکمہ تعلیم کے عہدیدار کو شامل کیا گیا ہے۔ اجلاس میں بتایا گیا کہ 71 کے منجملہ 55 اسکولوں کیلئے ذاتی عمارت کی تعمیر کے سلسلہ میں اراضی کے حصول کا کام مکمل ہوچکا ہے۔ ہر اسکول کیلئے دیہی علاقوں میں 5  اور شہری علاقوں میں 3 ایکر اراضی کے حصول کا منصوبہ ہے۔ اے کے خاں نے بتایا کہ مابقی اسکولوں کیلئے اراضی کے الاٹمنٹ سے متعلق فائیل کلکٹرس کے پاس زیر التواء ہیں۔ آئندہ دس دنوں میں ان کی یکسوئی کرلی جائے گی۔ آئندہ تعلیمی سال سے 89 اقامتی اسکولس کے آغاز کا حکومت نے فیصلہ کیا ہے۔ عہدیداروں کو ہدایت دی گئی کہ وہ 20نومبر تک ان اسکولوں کیلئے عمارتوں کا انتخاب مکمل کرلیں۔ سرکاری عمارتوں کو ترجیح دی جائے اور دوسری ترجیح خانگی عمارت ہو۔ ابتداء میں کرایہ کی عمارتوں میں یہ اسکولس قائم کئے جائیں گے۔ انہوں نے بتایا کہ اپریل تک نئے اسکولوں کے اساتذہ اور دیگر افراد کے تقررات کا عمل مکمل کرلیا جانا چاہیئے۔ نئے اسکولوں کے قیام سے متعلق علاقوں کے تعین کا کام جلد ہی مکمل کرلیا جائے گا۔

TOPPOPULARRECENT