Friday , September 22 2017
Home / شہر کی خبریں / اقلیتی امیدواروں کو سیول سروسیس کی کوچنگ

اقلیتی امیدواروں کو سیول سروسیس کی کوچنگ

6 نامور اداروں کے انتخاب کی تجویز ، پروفیسر ایس اے شکور
حیدرآباد۔/15 جون، ( سیاست نیوز) سیول سرویسیس میں اقلیتی طلبہ کی نمائندگی میں اضافہ کیلئے محکمہ اقلیتی بہبود نے گزشتہ سال کی طرح جاریہ سال بھی ریاست کے نامور کوچنگ اداروں میں اقلیتی طلبہ کو داخلہ دلانے کا فیصلہ کیا ہے۔ گزشتہ سال طلبہ کی مرضی کے مطابق 3 نامور کوچنگ سنٹرس میں داخلے کا اہتمام کیا گیا تھا تاہم 2017 سیول سرویسیس کیلئے 6 نامور اداروں کے انتخاب کی تجویز ہے۔ کوچنگ کا اہتمام سنٹر فار ایجوکیشنل ڈیولپمنٹ آف میناریٹیز ( سی ای ڈی ایم ) کی جانب سے کیا جائے گا۔ ڈائرکٹر سی ای ڈی ایم پروفیسر ایس اے شکور نے بتایا کہ جاریہ سال 100 طلبہ کے انتخاب کیلئے اسکریننگ ٹسٹ منعقد کیا گیا جس میں 329 طلبہ نے شرکت کی۔ تقریباً 450 طلبہ نے فارم داخل کئے تھے جبکہ 329 نے اسکریننگ ٹسٹ میں حصہ لیا۔ یہ ٹسٹ حیدرآباد اور 9 دیگر اضلاع میں منعقد کیا گیا تھا۔ حیدرآباد سنٹر میں 189 طلبہ نے اسکرین ٹسٹ میں حصہ لیا۔ سی ای ڈی ایم کی جانب سے 22 مئی کو داخلوں کے سلسلہ میں اعلامیہ جاری کیا گیا تھا۔ پروفیسر ایس اے شکور کے مطابق گزشتہ سال بھی 100 طلبہ کے انتخاب کی مساعی کی گئی تاہم 88 طلبہ نے ہی داخلہ لیا۔ انہوں نے بتایا کہ گزشتہ سال جن 88 طلبہ کو تین نامور اداروں میں داخلہ دیا گیا ان کی کوچنگ مکمل ہوچکی ہے اور 18 جون کو پریلمس امتحان ہے۔ انہوں نے بتایا کہ جاریہ سال بھی منتخب طلبہ کو ان کی پسند کے ادارہ میں داخلہ کی سہولت فراہم کی جائے گی اور کوچنگ کی فیس حکومت ادا کرے گی۔ اسکریننگ ٹسٹ کے نتائج 3 جولائی کو جاری کئے جائیں گے اور منتخب 100 طلبہ کیلئے خانگی کوچنگ مراکز میں 15 جولائی سے کوچنگ کا آغاز ہوگا۔ گزشتہ سال جن تین اداروں میں کوچنگ کا اہتمام کیا گیا تھا ان میں آر سی ریڈی ، برین ٹری اور حیدرآباد اسٹڈی سرکل شامل ہیں۔ حکومت نے اس مرتبہ مزید تین اداروں کو اس فہرست میں شامل کرنے کا فیصلہ کیا ہے جس کے لئے تین عہدیداروں پر مشتمل کمیٹی تشکیل دی گئی۔ اس کمیٹی میں کلکٹر حیدرآباد راہول بوجا اور آئی پی ایس افسران شاہنواز قاسم اور جیول ڈیوڈ شامل ہیں۔ یہ کمیٹی مختلف اداروں کا دورہ کرتے ہوئے ان کی کوچنگ اور نتائج کا جائزہ لے گی اور 27 جون تک حکومت کو اپنی رپورٹ پیش کردے گی۔ پروفیسر ایس اے شکور کے مطابق حکومت چاہتی ہے کہ سیول سرویسیس میں اقلیتوں کی نمائندگی میں اضافہ ہو اور توقع کی جارہی ہے کہ گزشتہ سال جن 88 طلبہ کو کوچنگ فراہم کی گئی تھی ان کے بہتر نتائج برآمد ہو گے۔ سابق میں سی ای ڈی ایم کے ذریعہ کوچنگ کا اہتمام کیاجاتا رہا ہے تاہم بہتر نتائج کو یقینی بنانے کیلئے حکومت نے اپنے خرچ پر خانگی کوچنگ سنٹرس میں طلبہ کو داخلہ دلانے کا فیصلہ کیا۔ انہوں نے کہا کہ یہ ملک میں اپنی نوعیت کی منفرد اسکیم ہے۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT