Saturday , September 23 2017
Home / شہر کی خبریں / اقلیتی بہبود کی اسکیمات پر موثر عمل آوری کیلئے اعلیٰ سطحی اجلاس کا فیصلہ

اقلیتی بہبود کی اسکیمات پر موثر عمل آوری کیلئے اعلیٰ سطحی اجلاس کا فیصلہ

اسکالر شپس اسکیم پر تعطل کو ختم کیا جائے گا ، محمد محمود علی ڈپٹی چیف منسٹر کا بیان
حیدرآباد ۔  9  ستمبر  (سیاست  نیوز) تلنگانہ میں اقلیتی بہبود کی اسکیمات پر موثر عمل آوری کو یقینی بنانے کیلئے ڈپٹی چیف منسٹر محمد محمود علی نے اقلیتی بہبود کے اعلیٰ عہدیداروں کے ساتھ اجلاس منعقد کرنے کا فیصلہ کیا۔ اس اجلاس میں اسکیمات پر عمل آوری کا جائزہ لیا جائے گا اور اوورسیز اسکالرشپ اسکیم کے بارے میں پیدا شدہ تعطل کو ختم کرنے کی کوشش کی جائے گی۔ ڈپٹی چیف منسٹر نے مذکورہ امور پر اقلیتی بہبود کے عہدیداروں سے ابتدائی مرحلہ کی بات چیت کی ہے ۔ انہوں نے بہت جلد اعلیٰ سطحی اجلاس طلب کرنے کا فیصلہ کیا ہے ۔ انہوں نے بتایا کہ حکومت اقلیتی بہبود کے بجٹ کے مکمل خرچ کی خواہاں ہے تاکہ اسکیمات کے فوائد حقیقی مستحقین  تک پہنچ سکیں۔ انہوں نے کہا کہ مختلف گوشوں سے شکایات موصول ہوئی ہیں کہ اقلیتی بہبود کی اسکیمات پر عمل آوری کی رفتار سست ہے۔ حالانکہ حکومت نے تمام اسکیمات کے لئے مناسب بجٹ جاری کردیا ہے۔ بجٹ کی اجرائی کے باوجود اسکیمات کی سست رفتاری باعث تشویش ہے اور جائزہ اجلاس میں وجوہات کا پتہ چلانے کی کوشش کی جائے گی۔ محمد محمود علی کے مطابق حکومت اوورسیز اسکالرشپ اسکیم کیلئے مختص کردہ 25 کروڑ روپئے جلد ہی جاری کرے گی ۔ اسکیم کے استفادہ کنندگان کے انتخاب کیلئے ریاستی سطح کی سلیکشن کمیٹی کا بہت جلد اجلاس منعقد ہوگا جس میں تمام درخواستوں کی از سر نو جانچ کی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ حکومت اس اسکیم پر کامیابی سے عمل آوری چاہتی ہے تاکہ غریب خاندانوں سے تعلق رکھنے والے اقلیتی امیدوار بیرون ملک کی نامور یونیورسٹیز میں اعلیٰ تعلیم حاصل کریں۔ تلنگانہ حکومت نے اس منفرد اسکیم کا آغاز کیا ہے جبکہ سابق میں یہ اسکیم درج فہرست اقوام و قبائل کیلئے تھی۔ محمود علی نے بتایا کہ وہ اس سلسلہ میں اقلیتی بہبود کے عہدیداروں سے ربط میں ہیں اور زیادہ سے زیادہ اقلیتی طلبہ کو اس اسکیم کے دائرہ کار میں شامل کرنے کی کوشش کی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ تلنگانہ حکومت اقلیتوں کی ترقی کے سلسلہ میں سنجیدہ ہے جس کا اندازہ بجٹ میں اضافہ اور نئی اسکیمات کے آغاز سے ہوتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ تلنگانہ پبلک سرویس کمیشن اور دیگر اداروں کے ذریعہ ہونے والے 50,000 سے زائد تقررات میں مسلم اقلیت کی نمائندگی میں اضافہ کیلئے جاریہ 4 فیصد تحفظات پر عمل کیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ سرکاری اداروں ، بالخصوص پولیس میں اقلیتوں کی نمائندگی میں اضافہ ہوگا۔ انہوں نے اقلیتی امیدواروں سے اپیل کی کہ وہ تقررات کے اس مرحلہ سے استفادہ کریں۔ انہوں نے بتایا کہ حکومت دوسرے مرحلہ میں مزید 50,000 جائیدادوں پر تقررات عمل میں لائے گی۔ ڈپٹی چیف منسٹر کے مطابق اقلیتی بہبود کے اداروں اور عہدیداروں میں بہتر تال میل کے ذریعہ اسکیمات پر موثر عمل آوری کو یقینی بنایا جائے گا۔

TOPPOPULARRECENT