Sunday , October 22 2017
Home / ہندوستان / اقوام متحدہ کی غیر مؤثر کارکردگی سب کیلئے نقصاندہ ، ہندوستان کا تاثر

اقوام متحدہ کی غیر مؤثر کارکردگی سب کیلئے نقصاندہ ، ہندوستان کا تاثر

نئی دہلی،13نومبر (سیاست ڈاٹ کام) اقوام متحدہ سلامتی کونسل کی کارکردگی پر شدید تنقید کرتے ہوئے ہندوستان نے آج کہا کہ اس عالمی ادارے کی غیر مؤثر کارکردگی سب کیلئے نقصاندہ ثابت ہورہی ہے۔ ہم تمام کو بھاری قیمت چکانی پڑرہی ہے۔ ہندوستان نے اقوام متحدہ کو دہشت گردی سے نمٹنے میں ناکام ادارہ قرار دیا اور کہا کہ اس کی برقراریٔ امن فوج صرف آلہ کار قوت بن کر رہ گئی ہے۔ اقوام متحدہ میں ہندوستان کے مستقل نمائندہ سفیر اشوک مکرجی نے سلامتی کونسل کی سالانہ رپورٹ کو غیرجوابدہ اور غیر ذمہ دارانہ قرار دیا اور اسے ’’ادھورا مکان‘‘ سے تعبیر کیا۔ انہوں نے کہا کہ اس رپورٹ میں ان سوالات کا کوئی جواب نہیں دیا گیا کہ آخر بین الاقوامی امن اور سلامتی کی برقراری کیلئے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی اولین ذمہ داریاں کیا ہیں۔ آیا یہ ادارہ ساری دنیا کو مزید تشدد اور جنگ و جدال کی راہ پر ڈھکیل دے گا؟ آج کے بحران سے آخر 60 ملین سے زائد افراد متاثر کیوں ہیں؟ آخر اس دنیا کو بحران کی صورتحال سے بھاگنے والے لاکھوں پناہ گزینوں کو دیکھنے کیلئے کیوں مجبور کیا جارہا ہے۔ مکرجی نے جنرل اسمبلی کے کھلے اجلاس سے خطاب میں کہا کہ ہم جنرل اسمبلی میں ہیں لیکن اس سوال کا کوئی جواب نہیں ملتا اور نا ہی اس معاملہ پر کوئی رائے فراہم کی جاتی ہے کہ کیا عوام الناس کو کونسل کی کی خرابیوں کا خمیازہ بھگتنا پڑے گا۔ قیام امن کے تین شعبوں پر توجہ مرکوز کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ دہشت گردی کا منہ توڑ جواب دیا جانا چاہئے۔ متنازعہ مسائل کو پرامن طریقہ سے حل کیا جانا چاہئے لیکن کونسل کی غیرمؤثر کارکردگی کی وجہ سے ہم تمام خاص کر ترقی پذیر ممالک کو بھاری قیمت چکانی پڑرہی ہے۔ اقوام متحدہ سلامتی کونسل کی سالانہ رپورٹ کا جائزہ لیتے ہوئے کونسل از خود ترقی پذیر ممالک کو درپیش سماجی اور معاشی چیلنجس کی نوعیت کا اندازہ لگانے میں ناکام ہے۔ خاص کر اس وقت جب ہم ایجنڈہ 2030ء کو متفقہ طور پر منظور کرتے ہوئے اسے روبہ عمل لانے جارہے ہیں۔ اس ایجنڈے کو ایک نسل کی مدت میں غربت کے خاتمہ کے مقصد سے بروئے کار لایا جارہا ہے۔ اس حقیقت کے باعث کہ گزشتہ 70 سال میں صرف ایک ترقی پذیر ملک کو کونسل میں مستقل رکنیت دی گئی جبکہ ہماری مکمل رکنیت اس اسمبلی میں 134ہے۔ انہوں نے سلامتی کونسل کی فوری توسیع کرتے ہوئے زیادہ سے زیادہ ترقی پذیر ممالک کو نمائندگی دینے پر زور دیا۔

TOPPOPULARRECENT