Tuesday , August 22 2017
Home / Top Stories / اقوام متحدہ کی قرارداد پر ہندوستان دولت اسلامیہ کیخلاف کارروائی کیلئے تیار

اقوام متحدہ کی قرارداد پر ہندوستان دولت اسلامیہ کیخلاف کارروائی کیلئے تیار

NEW DELHI, DEC 16 (UNI):- Defence Minister Manohar Parrikar (C) interacting with the media persons at India Gate after paying homage to the martyrs on the occasion of Vijay Diwas on Wednesday.UNI PHOTO-52U

سربراہ فوج کا عہدہ جلد ہی حقیقت بن جائے گا ، وزیر دفاع منوہر پاریکر کی پریس کانفرنس ، انڈیا گیٹ پر شہیدوں کو خراج عقیدت
نئی دہلی ۔16 ڈسمبر ۔ (سیاست ڈاٹ کام ) ہندوستان نے آج کہا کہ وہ دولت اسلامیہ دہشت گرد گروپ کے خلاف کارروائی کرنے کیلئے تیار ہے بشرطیکہ اقوام متحدہ کے پرچم تلے اس سلسلے میں کوئی قرارداد منظور کی جائے ۔ وزیر دفاع منوہر پاریکر نے جو ایک اہم اجلاس کے بعد جو وزیر دفاع امریکہ کے ساتھ منعقد کیا گیا تھا ، واشنگٹن سے واپس آئے ہیں کہا کہ ہم نے واضح کردیا ہے کہ اگر اقوام متحدہ اپنے پرچم تلے کوئی مہم شروع کرنے کی قرارداد منظور کرتی ہے تو ہندوستان کی پالیسی اقوام متحدہ کے پرچم تلے کارروائی کرنے کی ہے ۔ ہم ایسی کسی بھی مہم میں شرکت کریں گے ۔ وہ انڈیا گیٹ پر امر جوان جیوتی پر وجئے دیوس کے موقع پر پھول چڑھاکر خراج عقیدت پیش کرنے کے بعد پریس کانفرنس سے خطاب کررہے تھے ۔ اس وضاحت طلبی پر کہ کیا ہندوستان دولت اسلامیہ کے خلاف امریکی پرچم تلے کے تحت کارروائی کرے گا ۔ انھوں نے کہا کہ اس کا انحصار اس بات پر ہے کہ کیا اقوام متحدہ ہی قرارداد منظور کرتا ہے ۔ ہندوستان قبل ازیں جاریہ ماہ بڑی عالمی معیشتوں کے ساتھ اولین عالمی اجلاس منعقدہ پیرس میں شرکت کرکے ایسا نظام قائم کرنے پر تبادلۂ خیال کرچکا ہے جو خفیہ طورپر اور بڑے پیمانہ پر ایسی دہشت گردی کے مالیہ فراہم کرنے کے نٹورک کے خلاف کارروائی پر آمادگی ظاہر کرچکا ہے ۔

ہندوستان کے صیانتی محکموں کا کہنا ہے کہ 20 ہندوستانی فی الحال عراق اور شام میں دولت اسلامیہ کے پرچم تلے جنگ کررہے ہیں ۔ اُن میں کلیان کے جو ممبئی کا مضافاتی علاقہ ہے دو نوجوان بھی شامل ہیں۔ آسٹریلیا میں مقیم ایک کشمیری ، ایک نوجوان جو تلنگانہ کا متوطن ہے اور ایک کرناٹک کا ہے ۔ ایک عمان کا ساکن ہندوستانی شہری اور ایک سنگاپور کا ساکن ہندوستانی شہری بھی دولت اسلامیہ میں شامل ہیں۔ گزشتہ سال کلیان کا نوجوان اپنے گھر واپس آیا تھا جبکہ اُس نے 6 ماہ داعش کے ساتھ گذارے تھے ۔ اُسے ممبئی میں آمد پر گرفتار کرلیا گیا تھا ۔ چھ ہندوستانیوں میں سے جو دولت اسلامیہ کے شانہ بشانہ جنگ کررہے تھے تین ہندوستانی مجاہدین دہشت گرد بشمول سلطان اجمیر شاہ اور بڑا ساجد جو دولت اسلامیہ میں پاکستان سے روانہ ہوکر شامل ہوئے تھے ایک مہاراشٹرا کا اور دوسرا تلنگانہ کا متوطن تھا 15 سپٹمبر کو متحدہ عرب امارات نے چار ہندوستانیوں کو جن پر شبہ تھا کہ وہ داعش سے روابط رکھتے ہیں ہندوستان کی تحویل میں دیدیا تھا ۔ متحدہ عرب امارات نے سپٹمبر میں ایک 37 سالہ خاتون افشاء جبین عرف نکی جوزف کو بھی جو مبینہ طورپر دولت اسلامیہ کیلئے نوجوانوں کی بھرتی کررہی تھی ملک سے خارج کردیا تھا ۔ جنوری میں حیدرآباد کا سلمان محی الدین ، حیدرآباد ایرپورٹ پر گرفتار کرلیا گیا جبکہ وہ دوبئی جانے کیلئے طیارے میں سوار ہورہا تھا۔ وہ ترکی کے راستہ سے شام جانے والا تھا ۔ تاحال 17 نوجوان جن میں سے بیشتر تلنگانہ کے ہیں شام کے سفر سے روک دیئے گئے ہیں۔ وہ مبینہ طورپر داعش میں شمولیت کیلئے جانے والے تھے ۔ وزیر دفاع نے اشارہ دیا کہ سربراہ افواج کا عہدہ عنقریب حقیقت بن جائے گا ۔ ایک دن قبل وزیراعظم نریندر مودی نے محکمہ دفاع میں اصلاحات کو اپنی ترجیح قرار دیا تھا ۔

TOPPOPULARRECENT