Thursday , September 21 2017
Home / دنیا / اقوام متحدہ کے نئے سکریٹری جنرل کے انتخاب کے عمل کا آغاز

اقوام متحدہ کے نئے سکریٹری جنرل کے انتخاب کے عمل کا آغاز

193 رکن ممالک سے خاتون امیدوار نامزد کرنے پر زور
اقوام متحدہ ۔ 16 ڈسمبر (سیاست ڈاٹ کام) اقوام متحدہ میں آئندہ سکریٹری جنرل کے انتخاب کیلئے سرگرمیوںکا آغاز ہوگیا ہے کیونکہ سلامتی کونسل اور جنرل اسمبلی نے تمام رکن ممالک سے یہ اپیل کی ہیکہ اب کی بار اس باوقار عہدہ کیلئے کسی خاتون امیدوار کی تائید کی جائے۔ گذشتہ 70 سال سے اس باوقار عہدہ پر صرف مرد حضرات کی اجارہ داری رہی ہے۔ پہلی بار ایسا ہورہا ہے کہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے صدر برائے ڈسمبر امریکی سفارتکار سامنتا پاور اور جنرل اسمبلی صدر موگینس لائکیٹاف نے 193 رکن ممالک میں ایک مکتوب گشت کروایا ہے جس میں انہوں نے سکریٹری جنرل کے عہدہ کے لئے انتخابی میدان میں قسمت آزمائی کرنے والے امیدواروں کے نام پیش کئے جانے کی خواہش کی ہے اور ساتھ ہی ساتھ یہ طمانیت بھی دی ہے کہ سکریٹری جنرل کے انتخابی عمل کو انتہائی شفاف بنایا جائے گا۔ اس بات پر خصوصی زور دیا گیا ہے کہ خاتون امیدواروں کو نامزد کیا جائے۔ اقوام متحدہ کی تشکیل کے 70 سال بعد بھی اب تک کوئی خاتون سکریٹری جنرل کے باوقار عہدہ پر فائز نہیں ہوئی ہے۔ دوسری طرف رکن ممالک کو یہ بھی باور کروایا جارہا ہیکہ خواتین و مرد کو فیصلہ سازی کیلئے یکساں مواقع فراہم کئے جانے چاہئے لہٰذا خاتون امیدواروں کو نامزد کرنا وقت کی اہم ضرورت ہے۔ اس کا مطلب یہ نہیں کہ مرد امیدواروں کو نامزد نہ کیا جائے

بلکہ کوشش یہ ہونی چاہئے کہ خواتین کو بھی باوقار عہدہ کیلئے قسمت آزمائی کا موقع ملنا چاہئے اور اگر خاتون امیدوار منتخب ہوتی ہے تو اقوام متحدہ کی ایک نئی تاریخ رقم کی جائے گی۔ مسٹر لائکٹیاف نے کہا کہ اب تک دو خاتون امیدواروں کو پیش کرنے کا ذہن بنایا جاچکا ہے، جن میں کروشیا کی خاتون وزیرخارجہ ویسناپیوزک اور اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کی سابق صدر سروجان کریم کے نام قابل ذکر ہیں جن کا تعلق مخدونیہ سے ہے۔ یہاں اس بات کا تذکرہ بھی ضروری ہیکہ اقوام متحدہ کے موجودہ سکریٹری جنرل بان کی مون پانچ پانچ سال کی دو میعادیں مکمل کرچکے ہیں جبکہ آئندہ سال کے اوائل میں وہ اپنے عہدہ سے سبکدوش ہورہے ہیں۔ خود بان کی مون نے بھی ہمیشہ عوامی پلیٹ فارمس سے اپنا موقف ظاہر کرتے ہوئے کہا ہیکہ اب کی بار سکریٹری جنرل کے عہدہ پر خاتون کو فائز ہونا چاہئے۔ آئندہ سکریٹری جنرل بھی آئندہ سال جنوری سے اپنے فرائض کی انجام دہی شروع کریں گے۔ ان کی میعاد پانچ سالہ ہوگی جبکہ پہلی میعاد کی تکمیل کے بعد اگر رکن ممالک چاہیں تو ان کی میعاد میں مزید پانچ سال کی توسیع کرسکتے ہیں۔ اقوام متحدہ کے چارٹر کے مطابق سکریٹری جنرل کی تقرری سلامتی کونسل کی سفارش کے بعد جنرل اسمبلی کی جانب سے کی جاتی ہے۔ اب تک ایسا ہوتا رہا ہے کہ سکریٹری جنرل کی تقرری سیکوریٹی کونسل کے ذریعہ بند کمرے میں انتہائی رازداری کے ساتھ کی جاتی تھی اور جس میں ویٹو رکھنے والے پانچ مستقل رکن ممالک کے فیصلوں کو ہی پتھر کی لکیر سمجھا جاتا تھا۔

TOPPOPULARRECENT