Wednesday , June 28 2017
Home / سیاسیات / الیکشن کمیشن کی ٹیم جموں وکشمیر روانہ، سرینگر کے ضمنی انتخابات کا جائزہ

الیکشن کمیشن کی ٹیم جموں وکشمیر روانہ، سرینگر کے ضمنی انتخابات کا جائزہ

کاروان امن بس پی او کے کیلئے روانہ،امرناتھ یاترا میں خاتون عقیدت مندوں کو ’شلوار قمیص ‘پہننے کا مشورہ
نئی دہلی، 24 اپریل (یو این آئی) جموں و کشمیر میں اننت ناگ لوک سبھا سیٹ کے ضمنی الیکشن کو دوبارہ ملتوی کرنے کے ریاستی حکومت کی درخواست کے مدنظر صورت حال کا جائزہ لینے کے لئے الیکشن کمیشن کی ایک اعلی سطحی ٹیم وہاں جائے گی۔خیال رہے کہ اننت ناگ سیٹ پر ضمنی الیکشن 25مئی کو ہونا ہے لیکن گذشتہ نو اپریل کو سری نگر لوک سبھا سیٹ پر ضمنی الیکشن کے دوران زبردست تشدد اور اس میں نو افراد کی ہلاکت کے مارے جانے کے مدنظر ریاستی حکومت نے اننت ناگ کا الیکشن ملتوی کرنے کیلئے الیکشن کمیشن سے ایک بار پھر درخواست کی ہے ۔کمیشن کی ٹیم جموں کشمیر میں اپنے دو دن کے قیام کے دوران متعلقہ فریقین سے بات چیت کرکے حالات کا جائزہ لے گی۔ کمیشن نے پہلے اننت ناگ کا الیکشن 12 اپریل کو منعقد کرانے کا فیصلہ کیا تھا لیکن سری نگر ضمنی الیکشن میں تشدد کے مدنظر اسے 25 مئی کو کرانے کا فیصلہ کیا تھا۔ ریاستی حکومت نے الیکشن کمیشن کو خط لکھ کر ازسرنو درخواست کی ہے کہ اس الیکشن کی تاریخ میں توسیع کردے ۔ الیکشن کمیشن نے ریاستی حکومت کی اس درخواست کے مدنظر صورت حال کا از سر نو جائزہ لینے کے لئے وہاں اپنی ٹیم بھیجنے کا فیصلہ کیا ہے ۔خیال رہے کہ سری نگرضمنی انتخآبات میں صرف سات فیصد رائے دہندگان نے ووٹ ڈالے تھے ۔اس الیکشن میں سابق وزیر اعلی فاروق عبداللہ فاتح قرا ردئے گئے تھے ۔دریں اثنا آج یہاں وزیر اعلی محبوبہ مفتی نے وزیر اعظم نریندر مودی اور وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ سے ملاقات کرکے وادی میں امن و قانون سے متعلق کئی امور پر بات چیت کی۔دریں اثناء جموں و کشمیر کے سری نگر سے پاک مقبوضہ کشمیر (پی او کے ) کی راجدھانی مظفر آباد جانے والی کاروان امن بس آج یہاں سے روانہ ہوئی۔سرکاری ذرائع نے یو این آئی کوبتایا ‘کنٹرول لائن کے اس پار ہندستانی فوجی چوکی کمان سے علی الصبح بس روانہ کی گئی۔’ انہوں نے کہاکہ بس تجارتی سہولت مرکز (ٹی ایف سی)، اسلام آباد، اڑی سے پی او کے کی جانب جائے گی۔ بس میں کتنے لوگ سوار تھے ، اس کے بارے میں دوپہر بعد اطلاع مل پائے گی۔واضح رہے کہ 1999 کی کارگل جنگ کے بعد ہندستان اور پاکستان کے مابین باہمی اعتماد بڑھانے کیلئے سات اپریل 2005 کو اس ہفتہ وار بس سروس کی شروعات کی گئی تھی۔ اس بس سروس کو گزشتہ سال کشمیر میں بدامنی کے باوجود اور پاکستان کی جانب سے جنگ بندی کی خلاف ورزی کے سبب کنٹرول لائن پر کشیدگی اور سرجیکل اسٹرائک کے باوجود جاری رکھا گیا تھا۔ امرناتھ شرائن بورڈ نے امرناتھ یاترا میں شامل ہونے والی خاتون عقیدت مندوں کو ساڑی نہ پہننے کا مشورہ دیتے ہوئے آج کہا کہ شلوار قمیص، پینٹ شرٹ یا ٹریک سوٹ اس سالانہ یاترا کے لئے بہتر اور مناسب ملبوسات ہیں۔امرناتھ یاترا کا آغاز 29 جون کو ہوگا اور رکشا بندھن کے دن سات اگست کو یہ یاترا ختم ہوگی۔ اس دوران یاتری روایتی پہلگام اور کم فاصلے والے راستے بال تل کا استعمال کریں گے ۔امرناتھ شرائن بورڈ کی جانب سے جاری ایڈوائزری میں چھ ہفتے سے زیادہ عرصہ سے حاملہ عورتوں کو بھی یاترا کی اجازت نہیں دی جائے گی۔ اس کے علاوہ 13 سال سے کم عمر کے بچوں اور 75 سال سے زیادہ بزرگوں کو یاترا کی اجازت نہیں ہو گی۔ایس اے ایس بی کے حکام نے درجہ حرارت میں کبھی کبھی گراوٹ کو دیکھتے ہوئے یاتریوں کو مناسب اونی کپڑے ساتھ رکھنے کی صلاح دی ہے ۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT