Wednesday , May 24 2017
Home / ہندوستان / الیکٹرک وہیکلس سے 2030ء تک ایندھن میں 60 بلین ڈالر کی بچت ممکن

الیکٹرک وہیکلس سے 2030ء تک ایندھن میں 60 بلین ڈالر کی بچت ممکن

نئی دہلی ، 12 مئی (سیاست ڈاٹ کام) الیکٹرک اور اشتراک والی گاڑیوں کے تیزتر رجحان کے نتیجے میں ڈیزل اور پٹرول کی لاگت میں 60 بلین امریکی ڈالر کی بچت ہوسکتی ہے جبکہ 2030ء تک ہندوستان کے معاملہ میں 1 گیگاٹن کاربن اخراج تک کمی ہوسکتی ہے۔ نیتی آیوگ کی آج جاری کردہ ایک جوائنٹ رپورٹ میں یہ بات کہی گئی۔ تاہم ملک کو بعض چیلنجوں کا سامنا ہے جو خانگی گاڑیوں کے تجاذبی کھینچاؤ کا اشارہ دیتے ہیں۔ رپورٹ کا تخمینہ ہے کہ انڈیا احتیاط سے کام لیتے ہوئے مسافرین کی ممکنہ نقل و حرکت سے متعلق توانائی کی طلب کا 64 فیصد تک بچا سکتا ہے اور 2030ء تک کاربن اخراج میں 37 فیصد تک کمی ہوسکتی ہے۔ نیتی آیوگ اور راک ماؤنٹین انسٹی ٹیوٹ کی پیش کردہ رپورٹ میں کہا گیا کہ 2030ء تک سالانہ طور پر 156 ملین ٹن تیل کے مماثل ڈیزل اور پٹرول کی کھپت میں کمی واقع ہوگی۔ تیل کی موجودہ قیمتوں کے اعتبار سے ایندھن کیلئے معمول کی لاگت میں اس طرح کی بچت سے 2030ء تک لگ بھگ 3.9 لاکھ کروڑ روپئے کا فرق ہوگا۔ نیتی آیوگ سی ای او امیتابھ کانت نے کہا کہ کوئی چاہیں یا نہ چاہیں الیکٹرک وہیکلس (EVs) انڈیا میں حقیقت بن جائیں گے اور یہ ناگزیر ہے۔ انھوں نے نشاندہی کی کہ بیاٹری کی لاگت ہر پانچ سال میں تقریباً نصف ہورہی ہے اور اس کے نتیجے میں آئندہ چار تا پانچ سال میں بیاٹری والی الیکٹرک وہیکلس بھی پٹرول یا ڈیزل والی گاڑیوں کے مقابل زیادہ مہنگی نہ ہوں گے۔ اور اس کو چلانے کا خرچ پٹرول والی گاڑی کا محض 20 فیصد ہوگا۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT