Thursday , September 21 2017
Home / ہندوستان / امام ٹیپو سلطان مسجد کے فتوی پر جماعت اسلامی کا اعتراض

امام ٹیپو سلطان مسجد کے فتوی پر جماعت اسلامی کا اعتراض

کلکتہ9جنوری (سیاست ڈاٹ کام)نوٹ بندی کی وجہ سے وزیر اعظم نریندر مودی کے خلاف فتویٰ جاری کرنے والے کلکتہ کے ٹیپو سلطان مسجد کے امام مولانا نور الرحمن کے خلاف بی جے پی بنگال نے پولیس میں شکایت درج کراتے ہوئے فوری گرفتار ی کا مطالبہ کیا ہے ۔ ٹیپو سلطان مسجد کے امام مولانا نور الرحمن برکتی نے ہفتہ کو نوٹ بندی کی وجہ سے عوام کو درپیش مشکلات کے پیش نظر وزیر اعظم مودی کا چہر ہ کالا کرنے والے فرد کو 25لاکھ روپے انعام دینے کا اعلان کیا تھا ۔ امام موصوف نے اپنے اس بیان کو فتویٰ کا خود ہی عنوان دے کر پورے معاملے کو مذہبی رنگ دینے کی کوشش کی ہے ۔خیال رہے کہ مولانا نور الرحمن برکتی وزیر اعلیٰ ممتا بنرجی کے قریبی لوگوں میں شمار کئے جاتے ہیں۔ دوسری جانب کلکتہ شہر کے مسلم حلقوں میں بھی ٹیپو سلطان مسجد کے امام کے اس فتویٰ کی سخت تنقید ہورہی ہے ۔جماعت اسلامی مغربی بنگال نے امام کے اس فتویٰ کو غیر ضروری قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ فتویٰ کا لفظ ایک خاص اصطلاح میں استعمال کیا جاتا ہے اور شرعی معاملات میں ہی سائل کے سوال پر قرآن و حدیث کی روشنی میں جواب دیا جاتا ہے ۔اس لیے ملکی معاملات میں فتویٰ کا لفظ استعمال نہیں کیا جانا چاہیے ۔ جماعت اسلامی کے سینئر رکن نے کہا کہ نریندر مودی ملک کے منتخب وزیر اعظم ہیں۔ ان کی پالیسیوں اور طریقہ کار کی مخالفت ہم سب کا جمہوری حق ہے مگر وزیر اعظم ہند کے چہرے پر سیاہی لگانے والوں کو انعام دینے کااعلان کرنا غیر ذمہ دارانہ حرکت ہے اور اس سے پولرائزیشن کی سیاست کرنے والوں کو تقویت پہنچے گی ۔ بی جے پی کے ریاستی صدر دلیپ گھوش نے کہا کہ یہ صرف وزیر اعظم مودی کی توہین نہیں بلکہ ملک کے عوام کی توہین ہے ۔ہم برکتی کے خلاف قانونی کارروائی کریں گے ۔بی جے پی کے ریاستی سیکریٹری رتیش تیواری نے جوڑا سانکو پولس اسٹیشن میں شکایت درج کرائی ہے ۔ مسٹرتیواری نے کہا کہ ہم نے جوڑا سانکو پولس انتظامیہ سے کہا کہ ان کے خلاف ایف آئی آر درج کرے ۔بی جے پی کے جنرل سیکریٹری سدھارت ناتھ سنگھ جو بنگال بی جے پی کے انچارج بھی ہیں نے کہا کہ ہم وزیر اعلیٰ ممتا بنرجی سے مطالبہ کرتے ہیں کہ وزیر اعظم مودی کے خلاف فتویٰ جاری کرنے والے مولانا برکتی کو گرفتار کیا جائے۔ خیال رہے کہ 2016میں بھی مولانابرکتی نے وزیرا علیٰ ممتا بنرجی کے خلاف توہین آمیزبیان دینے والے بی جے پی کے ریاستی صدر دلیپ گھوش کے خلاف فتویٰ جاری کیا تھا۔اس پر بھی تنازعہ کھڑا ہوگیا ہے اور اب انہوں نے وزیر اعظم مودی کے خلاف فتویٰ جاری کیا ہے ۔

TOPPOPULARRECENT