Tuesday , October 24 2017
Home / Top Stories / امرتسر میںمودی ۔ عزیز مصافحہ ، پاکستانی ذرائع ابلاغ کے تبصرے

امرتسر میںمودی ۔ عزیز مصافحہ ، پاکستانی ذرائع ابلاغ کے تبصرے

ہندوستان اور پاکستان میں دونوں ممالک کے ذرائع ابلاغ کی جانب سے باہمی مصافحے کو نمایاں اہمیت
اسلام آباد 4 ڈسمبر (سیاست ڈاٹ کام) پاکستانی ذرائع ابلاغ نے آج امرتسر میں وزیراعظم نریندر مودی اور پاکستانی وزیراعظم کے مشیر برائے خارجی اُمور سرتاج عزیز کے امرتسر میں مصافحہ اور نیک خواہشات کے تبادلے کو نمایاں اہمیت دی۔ اِس سرحد پر جھڑپیں اور لفاظی عروج پر ہے۔ سرتاج عزیز کل شام امرتسر پہونچے تھے تاکہ ہارٹ آف ایشیاء چوٹی کانفرنس میں شرکت کریں۔ آج صبح اُن کی آمد متوقع تھی۔ لیکن علی الصبح گہرے کہر سے بچنے کے لئے وہ کل شام ہی قبل ازوقت امرتسر پہونچ گئے۔ پروگرام کی تبدیلی ایک اہم موقع تھا جس میں وزیراعظم نریندر مودی سے اُنھوں نے مصافحہ کیا اور نیک خواہشات کا باہم تبادلہ کیا۔ مودی نے پاکستانی وفد کے اعزاز میں عشائیہ ترتیب دیا تھا۔ روزنامہ اکسپریس ٹریبیون نے اپنے پہلے صفحہ پر سرخی لگائی ہے ’’عزیز ۔ مودی مصافحہ سے ذرائع ابلاغ جنون کا شکار‘‘ کئی ماہ کی زبانی تکرار اور سرحد پر مہلک جھڑپوں کے بعد ہندوستانی و پاکستانی عہدیداروں نے باہم نیک خواہشات کا تبادلہ کیا۔ جس سے ہفتہ کے دن ذرائع ابلاغ نے تحریر کیا ہے کہ وزیراعظم ہند نریندر مودی نے ایک مسکراہٹ کے ساتھ پاکستان کے مشیر برائے اُمور خارجہ وزیراعظم پاکستان سرتاج عزیز سے گلدستہ کے ساتھ مصافحہ کیا اور امرتسر میں ہارٹ آف ایشیاء کانفرنس میں شرکت پر پاکستانی وفد کا استقبال کیا۔

اخبار نے اطلاع دی ہے کہ مودی نے وزیراعظم پاکستان نواز شریف کی خیریت بھی دریافت کی کیوں کہ حال ہی میں لندن میں اُن کی اوپن ہارٹ سرجری ہوئی ہے۔ سرتاج عزیز نے شریف کی جانب سے وزیراعظم ہند کو نیک خواہشات پیش کیں۔ روزنامہ ڈان کی خبر کے بموجب سرتاج عزیز کا استقبال پاکستان کے سفیر برائے ہندوستان عبدالباسط اور جوائنٹ سکریٹری وزارت خارجہ ہندوستان نے کیا۔ سرتاج عزیز نے وزیر خارجہ ہند سشما سوراج کو اُن کی قیامگاہ پر ایک گلدستہ روانہ کرتے ہوئے اُن کی مکمل اور تیز رفتار صحت یابی کے لئے اپنی نیک خواہشات پیش کیں۔ روزنامہ دی نیوز انٹرنیشنل کی خبر کے بموجب مودی نے سرتاج عزیز سے مصافحہ کیا اور وزیراعظم نواز شریف کی خیریت دریافت کی۔ عزیز نے کہاکہ نواز شریف صحت مند ہیں اور اُنھوں نے اُن (مودی) کو نیک خواہشات پیش کی ہیں۔ پاکستان ہند ۔ پاک عہدیداروں کی چوٹی کانفرنس کے موقع پر علیحدہ ملاقات کی تائید کررہا ہے تاکہ جاری باہمی کشیدگی دور کی جاسکے۔ ہندوستانی ذرائع ابلاغ کی اطلاعات کے بموجب دعوت کے دوران کوئی بات چیت نہیں ہوئی صرف روایتی مصافحے کئے گئے۔ ذرائع ابلاغ نے پاکستانی وفد کی ہندوستانی عہدیداروں کے ساتھ مصافحہ پر کافی اہمیت ظاہر کی ہے۔ روزنامہ اکسپریس ٹریبیون کے بموجب ہندوستان اور پاکستان کے تعلقات اُری دہشت گرد حملے کے بعد جو ستمبر میں ہوا تھا اور جس میں 19 ہندوستانی سپاہی ہلاک ہوگئے تھے، کشیدہ ہوگئے تھے۔

TOPPOPULARRECENT