Saturday , July 22 2017
Home / ہندوستان / امرناتھ یاتریوں پر حملے کیخلاف جموں میں ہڑتال و مظاہرے

امرناتھ یاتریوں پر حملے کیخلاف جموں میں ہڑتال و مظاہرے

جموں۔ 11 جولائی ۔(سیاست ڈاٹ کام) جنوبی کشمیر کے ضلع اننت ناگ میں امرناتھ یاتریوں کی گاڑی پر ہلاکت خیز حملے کے خلاف آج جموں میں ہڑتال کی گئی۔ ہڑتال کی اپیل جموں چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹریز نے کی تھی جبکہ اپوزیشن جماعتوں نیشنل کانفرنس اور پنتھرس پارٹی نے اس کی حمایت کا اعلان کیا تھا۔ ہڑتال کے دوران جموں میں مختلف مقامات پر احتجاجی دھرنے بھی کئے گئے ۔اس دوران جموں میں سرکاری احکامات پر تمام تعلیمی اداروں میں درس وتدریس کی سرگرمیاں معطل رہیں۔ اس کے علاوہ افواہ کو روکنے کیلئے انٹرنیٹ خدمات بند رہیں۔ہڑتال کے دوران نیشنل کانفرنس، کانگریس، وی پی ایچ، بجرنگ دل اور ٹیم انڈیا کے کارکنوں نے جموں شہر میں احتجاجی ریلیاں نکال کر حکومت مخالف نعرے بازی کی۔احتجاجی کارکنوں نے جن کو مقامی لوگوں کی بھی حمایت حاصل ہوئی، قومی شاہراہ پر گاڑیوں کے ٹائر جلاکر اسے کچھ دیر کیلئے گاڑیوں کی آمدورفت کیلئے بند کیا۔ٹیم جموں کے چیئرمین زورآور سنگھ جموال نے احتجاجیوں سے خطاب کرتے ہوئے الزام لگایا کہ ریاستی حکومت امرناتھ یاتریوں کو سیکورٹی فراہم کرنے میں ناکام ثابت ہوئی۔ جموں وکشمیر نیشنل پنتھرس پارٹی نے چیئرمین اور سابق وزیر ہرش دیو سنگھ کی قیادت میں احتجاجی ریلی نکال کر جنگجویانہ حملے کے خلاف شدید احتجاج کیا۔وی پی ایچ، بجرنگ دل اور شیو سینا کے کارکنوں نے بھی امرناتھ یاتریوں پر حملے کے خلاف سڑکوں پر نکل کر احتجاج کیا۔ ان جماعتوں کے کارکنوں نے ریاستی حکومت کے خلاف شدید نعرے بازی کرتے ہوئے حکومت کا علامتی پتلا نذر آتش کیا۔ تاہم کہیں سے کسی ناخوشگوار واقعہ کی خبر نہیں ہے ۔

 

امرناتھ حملہ، دہشت گردوں کی گرفتاری کے لئے مہم تیز
سرینگر۔ 11 جولائی ۔(سیاست ڈاٹ کام) جموں وکشمیر کے اننت ناگ میں ایک مسافر بس پر حملے کیلئے ذمہ دار دہشت گردوں کی گرفتاری کیلئے وادی کشمیر، خاص طور پر جنوبی کشمیر میں وسیع پیمانے پرتلاشی مہم شروع کی گئی ہے ۔ اس حملے میں پانچ خواتین سمیت سات یاتری کی موت ہو گئی اور 21 دیگر زخمی ہوئے ہیں۔ اب تک کسی دہشت گرد تنظیم نے اس حملے کی ذمہ داری قبول نہیں کی ہے ۔ اطلاعات کے مطابق اس حملے کے پیچھے دہشت گرد تنظیم لشکر طیبہ کا ہاتھ ہے ۔انہوں نے کہا کہ اس بات کی بھی تحقیقات کی جا رہی ہے کہ شام 7:00بجے کے بعد روڈ اوپننگ پارٹی کو ہائی وے اور سفر کے دیگر راستوں سے ہٹانے کے بعد بس کو جانے کی اجازت کیسے ملی۔سرکاری ذرائع نے کہا کہ وادی میں پہلے ہی سیکورٹی فورسز ہائی الرٹ پرہے اور دہشت گردوں کی گرفتاری کیلئے مہم زوروں پر ہے ۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT