Monday , August 21 2017
Home / دنیا / امریکہ، عراق میں 217 زائد ٹروپس تعینات کریگا: ایشٹن کارٹر

امریکہ، عراق میں 217 زائد ٹروپس تعینات کریگا: ایشٹن کارٹر

ٹرمپ کا 9/11 کو 7/11 کہنا شرمناک، زبان کی لغزش پر بے نیاز

واشنگٹن ؍ نیویارک ۔ 19 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) امریکہ عراق میں 217 زائد امریکی ٹروپس روانہ کرے گا اور یہ اطلاع ایک ایسے وقت آئی ہے جب چند گھنٹوں قبل ہی اس بات کی توثیق ہوئی تھی کہ امریکی اور کرد فوجیوں نے موصل کے جنوبی علاقہ میں دولت اسلامیہ کے ایک سینئر جنگجو کو ہلاک کیا ہے۔ اضافہ شدہ امریکی ٹروپس کے ساتھ عراق میں اب امریکی فوجیوں کی تعداد 3870 سے بڑھ کر 4087 ہوجائے گی۔ ان میں عارضی ٹروپس شامل نہیں ہیں۔ یہ اعلان امریکی وزیردفاع ایشٹن کارٹر نے عراق کے اپنے غیرمعلنہ دورہ کے دوران کیا تھا۔ دوسری طرف وائیٹ ہاؤس پریس سکریٹری جوش ارنیسٹ نے اخباری نمائندوں سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ صدر موصوف بھی اس بات پر زور دے رہے ہیں کہ سیکوریٹی فورسیس امریکی مہم کے ان عناصر کو استحکام فراہم کرے جو اپنی ذمہ داریوں کو بخوبی نبھاتے ہوئے بیشرفت کررہے ہیں۔ عراق ایک مطلق العنان ملک ہے اور ایسے فیصلے جیسے دولت اسلامیہ کے قبضہ سے موصل شہر کو دوبارہ حاصل کرنا، عراقی حکومت کا ہی فیصلہ تھا۔ انہوں نے کہا کہ ایک طرف امریکہ دولت اسلامیہ سے نبردآزما ہے تو دوسری طرف امریکہ میں جاری صدارتی انتخابات کی مہم ہر گذرنے والے دن کے ساتھ عجیب و غریب صورتحال سے دوچار نظر آرہی ہے

جہاں کوئی بھی امیدوار چاہے وہ ری پبلکن کا ہو یا ڈیموکریٹ  کا، دولت اسلامیہ سے نمٹنے اپنی مستقبل کی حکمت عملی کے بارے میں کوئی بھی بیان دینے سے گریز کررہا ہے۔ آخر اس کی وجہ کیا ہے؟ آج عالمی سطح پر بڑے بڑے ممالک کو دولت اسلامیہ سے خطرہ لاحق ہے اور ایسی صورت میں مستقبل میں تشکیل دی جانے والی حکومت کے ممکنہ ارباب اقتدار کو دولت اسلامیہ کے قلع قمع کیلئے اپنی حکمت عملی وضع کرتے ہوئے اسے عوام کے سامنے لانا چاہئے۔ ری پبلکن امیدوار ڈونالڈ ٹرمپ متنازعہ ہوتے جارہے ہیں اور اب تو اناپ شناپ بیانات کے علاوہ ان سے لغزشیں بھی ہورہی ہیں۔ انہوں نے 9/11 کے دلدوز واقعہ کو 7/11 کہہ دیا جو دراصل نیویارک میں اسٹورس کا ایک سلسلہ ہے۔ ٹرمپ سے یہ لغزش اس وقت ہوئی جب وہ یہاں انتخابی مہم کے سلسلہ میں آئے تھے اور اس طرح انہوں نے نیویارک ورلڈ ٹریڈ سنٹر پر کئے گئے دہشت گرد حملوں کی تاریخ غلط بتادی۔ انہوں نے اس پورے واقعہ کا تذکرہ کرتے ہوئے کہا کہ کس طرح 7/11 کو فائر بریگیڈ کاعملہ، پولیس، سیکوریٹی فورسیس اور فوج ورلڈ ٹریڈ سنٹر پر پہنچ چکی تھی اور اس طرح انہوں نے بچاؤ کاری کے دوران کچھ عظیم ہستیوں کو بھی سرگرم دیکھا۔ یہ باتیں انہوں نے بفیلو میں فرسٹ نیاگرا سنٹر پر اپنی انتخابی ریالی کے دوران کہی۔ حیرت انگیز بات یہ ہیکہ انہیں اپنی غلطی کا احساس ہوا یا نہیں اس کا اندازہ نہیں لگایا جاسکتا کیونکہ انہوں نے اپنی غلطی سدھارنے کی کوشش نہیں کی۔ نیویارک ٹرمپ کا آبائی شہر ہے اور اس شہر میں ہوئے سب سے بڑے دہشت گرد حملوں کی تاریخ یاد نہ رکھنا ایک شرمناک حقیقت ہوسکتی ہے تاہم زبان کی لغزش سے ٹرمپ بے نیاز نظر آئے۔

TOPPOPULARRECENT