Tuesday , September 26 2017
Home / Top Stories / امریکہ میں دو مسلم خواتین کو طیارہ سے اتار دیا گیا

امریکہ میں دو مسلم خواتین کو طیارہ سے اتار دیا گیا

محض گھور کر دیکھنے کی غلط شکایت پر کارروائی، دونوں خواتین نے کچھ نہیں کیا تھا، ایک مسافر کا بیان
لاس اینجلس ۔ 9 مارچ (سیاست ڈاٹ کام) ایک انتہائی عجیب اور تکلیف دہ واقعہ میں پولیس نے دو مسلم خواتین کو طیارہ سے اتار دیا جب عملہ کی ایک رکن نے ان (مسلم خواتین) پر گھورنے اور مسلسل دیکھتے رہنے کا الزام عائد کیا۔ عینی شاہدین نے کہا کہ یہ دونوں خواتین کسی واقعہ کے بغیر پرسکون انداز میں بوسٹن سے لاس اینجلس روانہ ہورہی تھیں لیکن جٹ بلو طیارہ کی لینڈنگ کے بعد ان دونوں کو اتار لیا گیا۔ ’دی سن‘ نے خبر دی ہے کہ رکن عملہ کو اپنی ایک ساتھی سے یہ کہتے ہوئے سنا گیا کہ اس نے ان خواتین کی جانب سے مسلسل دیکھے جانے یا گھورنے کو پسند نہیں کیا۔ طیارہ میں سوار ایک مسافر شارون کسلر نے کہا کہ ’’فلائٹ اٹینڈنٹ اپنی ساتھی سے بار بار یہ کہہ رہی تھی کہ وہ اس کو مسلسل دیکھا جانا پسند نہیں کرتی لیکن وہ خوفزدہ یا پریشان نظر نہیں آرہی تھی، صرف الجھن زدہ تھی‘‘۔ کسلر نے مزید کہا کہ ’’بعدازاں ہم نے لینڈنگ کی۔ اس (رکن عملہ) نے اعلان کیا کہ حکام اس طیارہ میں پہنچ رہے ہیں اور ہمیں اپنی نشستوں پر سیٹ بلٹس کے ساتھ بیٹھے رہنے کی ترغیب دی‘‘۔ اس واقعہ کا ایک ویڈیو یوٹیوب پر پوسٹ کیا گیا۔

کسلر نے فیس بک پر لکھا کہ ’’یہ ایک عجیب پریشان کن لمحہ تھا۔ ایمانداری کی بات تو یہ ہے کہ یہ (مسلم) خواتین ، خاموش بیٹھی، فلمیں دیکھ رہی تھیں۔ ایسا محسوس ہوتا ہے کہ کسی اس فلائٹ اٹنڈنٹ کے رویہ سے وہ بہت زیادہ مجروح ہوئی ہیں‘‘۔ جٹ بلو نے ایک بیان میں کہا کہ فلائٹ اٹنڈنٹ کا تاثر تھا کہ ان میں سے ایک خاتون طیارہ کی پرواز کے ضابطوں اور طریقہ کی فلمبندی کررہی ہے۔ اس ایرلائن نے مزید کہا کہ ’’اگر کوئی رکن عملہ سمجھتا ہے کہ کوئی مسافر، حفاظتی ضابطوں کی فلمبندی کررہا ہے تو وہ مزید غور و جائزہ کیلئے ادارہ کو اس کی اطلاع دے سکتا ہے۔ اس معاملہ میں ہمارے ارکان عملہ نے سیکوریٹی ضابطوں کے مطابق کام کیا ہے۔ ہم اپنے صارفین کے صبر تحمل اور تعاون کی ستائش کرتے ہیں اور دو مسلم خاتون مسافرین کو ہونے والی اس تکلیف کیلئے معذرت خواہی کرتے ہیں‘‘۔

فرانسیسی طیارہ میں ایک بیاگ سے بچہ برآمد
پیرس ۔ 9 ۔ مارچ (سیاست ڈاٹ کام) ایک فرانسیسی طیارہ کے مسافر کے بیاگ میں چھپا کر رکھے گئے ایک بچہ کی دستیابی کے بعد فرانسیسی حکام نے تحقیقات کا آغاز کردیا ہے ۔ فرانسیسی کمپنی نے اپنے ایک بیان میں کہا کہ پیر کو استنبول سے پیرس روانہ ہونے والے ایک فرانسیسی فلائیٹ 1891 ء میں ایک لڑکا کسی بالغ مسافر کے ساتھ سفر کر رہا تھا جس (بچہ) کا ٹکٹ نہیں تھا ۔ ایر فرانس نے کہا کہ اس مسئلہ سے نمٹنے کیلئے اس نے فرانسیسی حکام کو طیارہ میں پہونچنے کی درخواست کی تھی ۔ تاہم بچہ کی شناخت کے بارے میں تفصیلات کا انکشاف نہیں کیا گیا۔

TOPPOPULARRECENT