Sunday , September 24 2017
Home / Top Stories / امریکہ میں گن کلچر پر جذبات سے مغلوب بارک اوباما روپڑے

امریکہ میں گن کلچر پر جذبات سے مغلوب بارک اوباما روپڑے

’’شوٹنگ میں ہلاک بچوں کے بارے میں جب سوچتا ہوں تو حواس باختہ ہوجاتا ہوں ‘‘

’’گن لابی ‘ کانگریس کو یرغمال بناسکتی ہے لیکن امریکہ کو نہیں ‘‘
’’  شوٹنگ کے واقعات نے عیسائیوں ‘ یہودیوں ‘ مسلمانوں اور سکھوں سے
عبادت کا حق چھین لیا ‘‘  :  امریکی صدر کا خطاب
واشنگٹن ۔ 6 جنوری ( سیاست ڈاٹ کام ) امریکہ کے صدر بارک اوباما نے اپنے ملک کی طاقتور ’’ گن لابی ‘‘ کے خلاف کانگریس کی تائید حاصل کرنے کیلئے نیوٹن کے ایک اسکول اور اویک کریک میں سکھ عبادت گذاروں پر بہیمانہ شوٹنگ کے واقعات کی یادیں تازہ کرتے ہوئے بندوق پر مبنی تشدد سے نمٹنے کیلئے اپنے اقدامات کا اعلان کیا ۔ انہوں نے کہا کہ امریکہ میں گذشتہ دہائی کے دوران شوٹنگ کے مختلف واقعات میں ایک لاکھ افراد کی جانیں تلف ہوئی ہیں ۔ آتشیں اسلحہ کی کھلے عام اور بلارکاوٹ فروخت اور استعمال پر کنٹرول کو سخت کرنے کے خلاف ری پبلکن پارٹی کے زیراثر کانگریس میں کی جانے والی شدید مزاحمت کے درمیان اوباما نے گذشتہ روز اپنے اس عہد کا اظہار کیا کہ وہ کانگریس کی تائید سے اس کے بغیر اس خون خرابہ کو روکیں گے ۔ شوٹنگ کے مختلف واقعات کے مہلوکین کے افراد خاندان کی موجودگی میں اوباما نے وہائٹ ہاؤز کے ایسٹ روم میں کہا کہ ’’ بالکل اسی کمرہ میں جو یہاں ہے ‘ اس کی کئی کہانیاں ہیں اور شدید درد دل بھی ہے ‘‘ ۔  انہوں نے خبردار کیا کہ گن لابی کو سرکاری اقدامات روکنے کی اجازت نہیں دی جائے گی ۔ ’’ گن لابی ممکن ہے کہ اب کانگریس کو اپنا یرغمال بنارہی ہے لیکن وہ امریکہ کو اپنا یرغمال نہیں بناسکتی ‘‘ ۔

 

صدر اوباما نے کہاکہ ’’ ہم سب کو چاہیئے کہ ہم سب کو ایک ایسا توازن تلاش کرنے کیلئے کام کرنا چاہیئے جو ( توازن) یہ اعلان کرتا ہے کہ ہمارے دیگر حقوق یکساں طور پر اہم ہیں ۔ دوسرے ترمیمی حقوق بھی اہم ہیں لیکن اپنے بھی حقوق ہیں جن پر اہم توجہ مرکوز کرنے ہیں اور ہمیں ان میں توازن پیدا کرنا ہوگا ‘کیونکہ ہمیں آزادی و حفاظت کے ساتھ عبادت کرنے کا حق بھی حاصل ہے لیکن عیسائیوں کو جنوبی کیروالاٹینا کے چارلسٹن میں اس حق سے محروم کردیا گیا ۔ ان ہی حقوق سے یہودیوں کو کنساس سٹی میں مسلمانوں کو چیپل مل میں سکھوں کو اوک کریک میں محروم کیا گیا ‘ ان سب کے بھی حقوق ہیں ۔ پُرامن طور پر جمع ہونا ہمارا حق ہے لیکن اورورا  اور لفاٹے میں سینما بینوں کا یہ حق غصب کرلیا گیا ‘‘۔ بارک اوباما نے کولمبائن ‘سانٹا باربرا ‘ نیوٹن اور دیگر مقامات پر اسکولوں اور کالجوں میں شوٹنگ کے مختلف واقعات میں درجنوں کمسن بچوں اور جواں سال لڑکے لڑکیوں کی بہیمانہ ہلاکتوں کا تذکرہ بھی کیا ۔ صدر اوباما شوٹنگ کے مختلف واقعات بیان کرتے ہوئے جذبات سے مغلوب ہوگئے اور ایک مرحلہ پر گلوگیر آواز کے ساتھ ان کی آنکھوں سے آنسو رواں ہوگئے ۔ اوباما نے اپنے جذبات پر قابو پانے کیلئے ایک لمحہ توقف کیا اور آنسو پونچھتے ہوئے کہا کہ ’’ جب کبھی میں ان ( مہلوک) بچوں کے بارے میں سوچتا ہوں‘ اپنے ہوش و حواس کھو بیٹھتا ہوں ۔ چنانچہ ہم سب کیلئے یہ ضروری ہے کہ ’’ گن لابی‘‘ کے جھوٹ کے خلاف کانگریس بھرپور جراتمندی کے ساتھ ثابت قد رہے ‘‘ ۔

TOPPOPULARRECENT