Tuesday , July 25 2017
Home / Top Stories / امریکہ میں ہندوستانیوں پر حملوں پر اظہار افسوس

امریکہ میں ہندوستانیوں پر حملوں پر اظہار افسوس

ہرنیش پٹیل کی ہلاکت کی تحقیقات میں پیشرفت : سشما سواراج
نئی دہلی ۔ /5 مارچ (سیاست ڈاٹ کام) وزیر خارجہ سشما سوراج نے امریکی ریاست جنوبی کیرولینا میں ایک جنرل اسٹور کے ہندوستانی نژاد مالک کی ہلاکت پر تعزیت کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس واقعہ کی تحقیقات جاری ہیں ۔ سوراج نے مزید کہا کہ وہ ایک سکھ امریکی  دیپ رائے کے والد سے بھی بات کرچکی ہیں جنہیں واشنگٹن کے علاقہ کنٹ میں ان کے گھر کے باہر گولی مارکر زخمی کردیا گیا تھا اور اب وہ ایک دواخانہ میں زیرعلاج ہے ۔ امریکہ میں ایک ہفتہ کے دوران امریکہ میں ہندوستانی نژاد افراد کو شوٹنگ کا نشانہ بنانے کے واقعات پر سشما سوراج نے کئی سلسلہ وار ٹوئیٹس کرتے ہوئے کہا کہ ’’ہرنیش پٹیل کی ہلاکت کی اطلاع پر مجھے سخت صدمہ ہوا ہے ۔ وہ (ہرنیش) جنوبی کیرولینا کی لینکاسٹر کاؤنٹس میں مقیم ہند نژاد امریکی تھے ۔ ہمارے قونصل نے لینکاسٹر پہونچکر ہرنیش پٹیل کے ارکان خاندان سے ملاقات کی ‘‘ ۔ 39 سالہ دیپ رائے پر ہوئے حملے پر شدید ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے سشما سوراج نے کہا کہ ’’دیپ رائے پر ہوئے حملے پر مجھے سخت افسوس ہوا ہے وہ ہند نژاد امریکی شہری تھے ۔ میں اس زخمی کے والد سردار ہرپال سنگھ سے بات کرچکی ہوں ‘‘ ۔
ان دونوں حملوں سے چند دن قبل کنساس میں ایک امریکی سپاہی نے ایک ہندوستانی سافٹ ویر انجنیئر سرینواس کوچی بھوتلا کو گولی مارکر ہلاک اور دوسرے الوک مادر سانی کو زخمی کردیا تھا ۔ سرینواس کا تعلق تلنگانہ کے دارالحکومت حیدرآباد سے تھا ۔ الوک کا تعلق اس ریاست کے ضلع ورنگل سے ہے ۔

مسلم کے دھوکہ میں امریکہ میں سکھ کوزخمی کردیا گیا
واشنگٹن،5مارچ(سیاست ڈاٹ کام)امریکہ کے واشنگٹن میں ایک حملہ آور نے ہندوستانی نژادایک سکھ کو شخص کو گولی مارکر زخمی کردیا ہے ۔پولیس اور میڈیا رپورٹ کے مطابق جمعہ کی رات کو سیئٹل سے 24 کلومیٹر جنوب میں واقع کینٹ شہر سے دور ایک سکھ کو گولی مارکر زخمی کردیاگیا۔حملہ آور نے گولی مارنے کے دوران کہا کہ میرے ملک کو چھوڑ دو۔ کینٹ پولیس کے چیف کین تھامس نے ایک نامہ نگار کانفرنس میں کہا،”حملہ آور نے چلا کر کہا کہ ہمارے ملک سے واپس چلے جاؤ،جہاں سے آئے ہو وہاں واپس چلے جاؤاور اس کے بعد گولی ماردی۔”مسٹر تھامس نے کہا”ہمارے ملک میں ایسی واقعہ حیرت میں ڈالنے والے ہیں اور اس سے بہت مایوسی ہوئی۔”نسلی تشدد کے خلاف کام کرنے والی تنظیم نے کہا کہ کبھی کبھی حملہ آوروں نے سکھوں کو مسلمان سمجھ کر حملہ کیا ہے ۔سیئٹل ٹیلی ویژن اسٹیشن کرو کے مطابق سکھ شخص اپنی کار سے گھر جارہا تھا اس کے ہاتھ میں گولی ماری گئی۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT