Sunday , August 20 2017
Home / Top Stories / امیت شاہ ۔ اویسی ملاقات ،سچ ہے تو یہ ایک خطرناک رجحان

امیت شاہ ۔ اویسی ملاقات ،سچ ہے تو یہ ایک خطرناک رجحان

مودی حکومت پر مرکز ۔ دہلی تعلقات کو ہند ۔ پاک جیسی صورتحال میںتبدیل کرنے کا الزام ، ا :اروند کجریوال
نئی دہلی۔ 17 جولائی (سیاست ڈاٹ کام) دہلی کے چیف منسٹر اروند کجریوال نے مختلف مسائل پر مرکز کے ساتھ تلخ لفظی جنگ کے درمیان آج نریندر مودی حکومت پر حکومت دہلی کے ساتھ اپنے تعلقات کو ’ہند۔ پاک تعلقات‘ جیسی صورتحال میں تبدیل کردینے کا الزام عائد کیا اور کہا کہ ان کے کاموں میں اگر رکاوٹیں نہ ہوئیں تو انہیں اس شہر کیلئے اب تک کئے جاچکے اقدامات سے چار گنا زائد اقدامات کرنے میں مدد مل سکتی تھی۔ کجریوال نے ’’ٹاک ٹو اے کے‘‘ کے پہلے شو میں کئی حساس مسائل کو موضوع بنایا جن میں 21 پارلیمانی سیکریٹریز کے تقررات، سی بی آئی کی جانب سے ایک سرکردہ سرکاری افسر اور سرکاری افسران کے تبادلے جیسے موضوعات بھی شامل ہیں۔ عام آدمی پارٹی (عآپ) کے قومی سطح پر رابطہ میں اضافہ کی کوشش سمجھے جانے والے اس ’’ٹاک شو‘‘ میں کجریوال نے وزیراعظم پر طنز کرتے ہوئے کہا کہ ’’نریندر مودی کی نظر میں وہ (کجریوال) ہی ملک کے واحد رشوت خور چیف منسٹر ہیں۔ دہلی کے چیف منسٹر نے بشمول سوال جواب کے دو گھنٹے کے اس سیشن میں الزام عائد کیا کہ مرکز ی حکومت، دہلی کی عام آدمی پارٹی حکومت کو توڑنے کی کوشش کررہی ہے اور بی جے پی کے صدر امیت شاہ سی بی آئی کے نگران کے طور پر تمام انتظامات کررہے ہیں۔

لیکن قسمت چند دن ہی کسی کا ساتھ دیتی ہے اور بہت جلد یہ صورتحال ختم ہوجائے گی۔ کجریوال نے کہا کہ اگر وہ (مودی حکومت) مرکز اور دہلی کے درمیان ہند۔ پاک جیسی صورتحال پیدا نہیں کرتی تو آج تک جو کچھ کام کرچکے ہیں، اس سے چار گنا زائد کام کرسکتے تھے‘‘۔ دہلی کے چیف منسٹر نے جذبات سے مغلوب لب و لہجہ میں کہا کہ ’’میں نے ان (وزیراعظم) سے کہا تھا کہ اگر مجھ سے کوئی غلطی ہوئی ہے تو مجھے معاف کردیں لیکن برائے مہربانی اس قسم کی رکاوٹیں پیدا نہ کیجئے‘‘۔ کجریوال کا ’’ٹاک شو‘‘ دراصل وزیراعظم مودی کے ماہانہ ریڈیو خطاب ’’من کی بات‘‘ کا جواب سمجھا جارہا ہے جس میں انہوں نے الزام عائد کیا کہ دہلی اب مرکز کے متصادم رویہ کی شکار اور متاثرہ ریاست بن گئی ہے کیونکہ عآپ کے ارکان اسمبلی کو غلط الزامات کے تحت گرفتار کیا جارہا ہے۔ گجرات سے تعلق رکھنے والے بی جے پی کے ایک سابق رکن اسمبلی یاتین اوزا کی جانب سے انہیں روانہ کردہ ایک مکتوب کے بارے میں جس میں 2015ء کے بہار اسمبلی انتخابات سے قبل مجلس اتحادالمسلمین کے رکن اسمبلی اکبرالدین اویسی سے بی جے پی صدر امیت شاہ کی ملاقات کا الزام عائد کیا گیا ہے۔ کجریوال نے کہا کہ اگر یہ دعویٰ صحیح ہے تو یہ ایک انتہائی خطرناک بات ہوگی۔ انہوں نے کہا کہ ’’اوزا ایک سینئر وکیل ہیں جو امیت شاہ سے بہت قریب تھے چنانچہ مکتوب میں جو کچھ بیان کیا گیا ہے اگر وہ درست ہے تو یہ انتہائی خطرناک ہے۔ عوام اُنہیں سبق سکھانے کا فیصلہ کرچکے ہیں۔ اگر عوام چاہیں تو ہم گجرات اسمبلی انتخابات میں حصہ لیں گے۔

TOPPOPULARRECENT