Friday , August 18 2017
Home / Top Stories / انتخابی تشددکا مقدمہ‘ اسدالدین اویسی کی پولیس میںخودسپردگی

انتخابی تشددکا مقدمہ‘ اسدالدین اویسی کی پولیس میںخودسپردگی

پولیس نے ضابطہ کی کارروائی کی ، عدالت میں پیشی کے بعد ضمانت کی منظوری اور رہائی
حیدرآباد ۔ 8 فبروری ۔ ( سیاست نیوز ) رکن پارلیمنٹ حیدرآباد اسدالدین اویسی نے کانگریس قائدین پر حملے کیس میں ساؤتھ زون پولیس کے روبرو خودسپردگی اختیارکرلی جس پر انھیں عدالت میں پیش کیا گیا جہاں پر اُن کی ضمانت منظور کی گئی ۔ آج صبح 10:15 بجے رکن پارلیمنٹ نے ڈپٹی کمشنر پولیس ساؤتھ زون مسٹر وی ستیہ نارائنا کے دفتر پہونچ کر خود کو خود سپرد کیا جس پر میرچوک پولیس کی ایک ٹیم وہاں پہونچ کر ضابطہ کی کارروائی مکمل کرنے کے بعد اُنھیں بغرض طبی معائنہ عثمانیہ ہاسپٹل منتقل کیا اور بعد ازاں انھیں نامپلی کریمنل کورٹ منتقل کیا گیا ۔ اسدالدین اویسی کو میرچوک پولیس نے آٹھویں ایڈیشنل چیف میٹرو پولیٹن مجسٹریٹ کے اجلاس پر پیش کیا جہاں پر اُن کی ضمانت منظور کی گئی اور انھیں 5,000/- کی دو ضمانتیں جمع کرنے کی ہدایت دی جس کے بعد اُن کی رہائی عمل میں آئی ۔ 2 فبروری کو جی ایچ ایم سی انتخابات کے دوران رکن پارلیمنٹ نے اپنے حامیوں کے ہمراہ تلنگانہ پردیش کانگریس کمیٹی صدر اتم کمار ریڈی اور لیڈر آف اپوزیشن قانون ساز کونسل محمد علی شبیر پر مبینہ طورپر حملہ کرنے اور اُن کی گاڑی کو نقصان پہنچانے پر میرچوک پولیس نے تعزیرات ہند کی دفعات 143،341، 427، 506 اور 188 کے تحت مقدمہ درج کیا تھا اور اس سلسلے میں حملے میں ملوث سید عبدہو قادری عرف کشف (سوشل میڈیا انچارج مجلس پارٹی ) ، محمد مصیح الدین ، مصباح الدین خان عابد کو گرفتار کرکے عدالت میں پیش کردیا تھا ۔ واضح رہے کہ انتخابات کے دن پرانا پل کے کانگریسی امیدوار محمد غوث کی احتیاطی گرفتاری کے خلاف مسٹر اُتم کمار ریڈی اور مسٹر محمد علی شبیر میرچوک پولیس اسٹیشن پہونچ کر پولیس کے اس رویہ کے خلاف اعتراض کیا تھا جہاں اُن پر مجلسی کارکنوں نے حملہ کیا تھا ۔ اس حملے میں مسٹر شبیر علی زخمی ہوگئے تھے جبکہ اُن کی کار کو بھی نقصان پہنچا تھا ۔

TOPPOPULARRECENT