Saturday , August 19 2017
Home / Top Stories / انتخابی ناکامیوں کافردِ واحد ذمہ دار نہیں:کانگریس

انتخابی ناکامیوں کافردِ واحد ذمہ دار نہیں:کانگریس

آسام، کیرالا میں شکست، مغربی بنگال و ٹاملناڈو میں پیشرفت میں ناکامی پر راہول گاندھی کا ردعمل

نئی دہلی ۔ 19 مئی (سیاست ڈاٹ کام) راہول گاندھی کے اطراف عملاً حفاظتی حصار قائم کرنے کی کوشش کرتے ہوئے کانگریس نے آج ایسی باتیں مسترد کردیئے کہ نائب صدر پارٹی کو چار ریاستوں میں اس کی ناکامی کی ذمہ داری قبول کرلینی چاہئے۔ پارٹی کے ترجمان اعلیٰ رندیپ سرجے والا نے جنرل سکریٹری مکل واسنک اور ترجمان آر پی این سنگھ کے ساتھ میڈیا سے بات چیت میں کہا کہ ہر الیکشن کے اپنے مسائل ہوتے ہیں۔ ہم ریاستی انتخابات کو کسی فرد واحد کی اصطلاح میں نہیں دیکھتے چاہے وہ ترون گوگوئی ہوں یا اومن چنڈی۔ ہم اسباب کا تجزیہ کریں گے کہ ہمیں ان شعبوں میں بہتری لانے کی ضرورت ہے۔ ہم یہ کام دوستانہ ماحول میں کریں گے اور تمام موضوعات پر سیرحاصل گفتگو کی جائے گی۔ سرجے والا نے کہا کہ وہ ایسی نامناسب بات کو بالکلیہ مسترد کرتے ہیں، جب ان سے دریافت کیا گیا کہ آیا راہول کو ذمہ داری قبول کرنا چاہئے جیسا کہ صدر کانگریس سونیا گاندھی نے لوک سبھا چناؤ کے بعد کیا تھا جس میں پارٹی نے اپنا بدترین مظاہرہ درج کرایا تھا۔ 2014ء میں کانگریس 543 رکنی لوک سبھا میں محض 44 نشستوں تک گھٹ گئی۔ سرجے والا نے کہا کہ یہ بات ذہن نشین کرنا چاہئے کہ کانگریس آسام میں 15 سال سے برسراقتدار تھی اور کیرالا میں گذشتہ 5 سال سے پارٹی کی حکمرانی چل رہی تھی اور دونوں جگہ پارٹی نے معقول حکمرانی فراہم کی۔ انہوں نے ایک سوال کو ’’غیرمتعلقہ‘‘ قرار دیتے ہوئے خارج کردیا کہ آیا پرینکا گاندھی ان ناکامیوں کے پیش نظر پارٹی میں عظیم تر رول ادا کرنے والی ہیں۔  انہوں نے راہول کی جانب سے ذمہ داری قبول کئے جانے کے بارے میں متعدد سوالات کے جواب میں یہی کہا کہ ہر الیکشن مختلف مسائل پر لڑا جاتا ہے اور انہیں کسی فرد واحد سے نہیں جوڑا جانا چاہئے۔ اس دوران خود راہول نے کہا کہ ہم عوام کا فیصلہ خندہ پیشانی کے ساتھ قبول کرتے ہیں۔ ان پارٹیوں کیلئے میری نیک تمنائیں پیش ہیں جنہیں انتخابات میں کامیابی ملی ہے۔ انہوں نے ٹوئیٹر کے ذریعہ اپنے ردعمل میں کہا کہ ’’میں اس موقع پر ہر کانگریس ورکر اور لیڈر اور ہمارے اتحادیوں کا ان انتخابات میں ان کی کوششوں کیلئے شکریہ ادا کرتا ہوں۔ ہم مزید سخت محنت کریں گے تاوقتیکہ ہم عوام کا اعتماد جیتنے میں کامیاب ہوجائیں۔ راہول کا ردعمل پانچ ریاستوں میں رائے شماری کے رجحانات ظاہر ہونے کے فوری بعد سامنے آیا جبکہ یہ اندازہ ہوچلا تھا کہ کانگریس کیرالا اور آسام میں ہار جائے گی اور مغربی بنگال اور ٹاملناڈو میں اتحاد قائم کرنے کے باوجود وہ کوئی فائدہ اٹھانے میں ناکام ہوچکے ہیں۔ گزشتہ انتخابات میں کانگریس کو جملہ ووٹوں کا 12 فیصد حاصل ہوا تھا لیکن اب اس کے ووٹوں کا فیصد کم ہوکر صرف 7 فیصد باقی رہ چکا ہے ۔ جبکہ پارٹی میں قیادت کی تبدیلی کے مطالبے میں زور پیدا ہوگیا ہے ۔

TOPPOPULARRECENT