Wednesday , September 20 2017
Home / شہر کی خبریں / اندرون سال سرکاری محکمہ جات میں مخلوعہ جائیدادوں پر تقررات : ایٹالہ راجندر

اندرون سال سرکاری محکمہ جات میں مخلوعہ جائیدادوں پر تقررات : ایٹالہ راجندر

تقررات میں تاخیر پر اسمبلی میں گرماگرم مباحث، کانگریس، تلگودیشم کا احتجاج، وزیرفینانس کا جواب

حیدرآباد۔/12مارچ، ( سیاست نیوز) وزیر فینانس ای راجندر نے اسمبلی کو تیقن دیا کہ اندرون ایک سال سرکاری محکمہ جات میں تمام مخلوعہ جائیدادوں پر تقررات کا عمل مکمل کرلیا جائے گا۔ ریاست میں مخلوعہ جائیدادوں پر تقررات میں تاخیر کے مسئلہ پر آج قانون ساز اسمبلی میں گرما گرم مباحث ہوئے۔ تلگودیشم، کانگریس اور بی جے پی کے ارکان نے مخلوعہ جائیدادوں پر تقررات سے متعلق وعدے سے انحراف کا الزام عائد کیا۔ ان کا کہنا تھا کہ انتخابی مہم کے دوران چندر شیکھرراؤ نے ایک لاکھ مخلوعہ جائیدادوں پر تقررات اور ہر گھر میں ایک فرد کو روزگار فراہم کرنے کا وعدہ کیا تھا لیکن دو سال گزرنے کے بعد حکومت نے مخلوعہ جائیدادوں کی تعداد کو کم کردیا ہے۔ وزیر فینانس کے جواب سے غیر مطمئن کانگریس اور تلگودیشم نے اپنا احتجاج درج کرایا۔ ارکان کے سوالات کا جواب دیتے ہوئے وزیر فینانس نے تیقن دیا کہ تمام مخلوعہ جائیدادوں پر اندرون ایک سال تقررات مکمل کرلئے جائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ تلنگانہ تحریک کے دوران روزگار، پانی اور وسائل جیسے اہم موضوعات پر عوام  نے جدوجہد میں حصہ لیا تھا اور تلنگانہ جدوجہد میں نوجوانوں کا اہم رول ہے۔ انہوں نے بتایا کہ حکومت نے نوجوانوں کو روزگار کی فراہمی کا جو وعدہ کیا ہے اس پر قائم ہے۔ سرکاری محکمہ جات کے علاوہ آر ٹی سی اور سنگارینی کالریز میں بھی تقررات کئے گئے۔ آر ٹی سی میں 3000 سے زائد جائیدادوں پر تقررات کئے گئے جبکہ سنگارینی  کالریز میں 4500 تقررات عمل میں آئے۔ انہوں نے کہا کہ تلنگانہ پبلک سرویس کمیشن کے ذریعہ 14789 جائیدادوں پر تقررات کئے جائیں گے۔ 25589 کنٹراکٹ ملازمین کو باقاعدہ بنایا جائے گا۔ وزیر فینانس نے اپوزیشن جماعتوں پر تقررات کے مسئلہ کو سیاسی رنگ نہ دینے کی اپیل کی۔ انہوں نے بتایا کہ 56150 مخلوعہ جائیدادوں کے بارے میں محکمہ جات سے حکومت کو اطلاع ملی ہے۔ حکومت نے راست تقررات کے ذریعہ 18423 جائیدادوں پر تقررات کے احکامات جاری کئے اور 14789 جائیدادوں کیلئے اعلامیہ جاری کردیا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ محکمہ جات میں ضرورت کے اعتبار سے تقررات کئے جائیں گے۔ انہوں نے بتایا کہ متحدہ آندھرا پردیش میں ایک لاکھ 7745 مخلوعہ جائیدادوں کی نشاندہی کی تھی جو تقسیم کے بعد تلنگانہ کو وراثت میں ملے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ حکومت انسانیت کے نظریہ کے ساتھ کام کررہی ہے اور پیسہ بچانا اس کا کوئی مقصد نہیں ہے۔ انہوں نے بتایا کہ اقلیتوں کیلئے 70اقامتی اسکولس قائم کئے جارہے ہیں۔ انہوں نے اساتذہ کی مخلوعہ جائیدادوں پر بھی تقررات کا تیقن دیا۔ راجندر نے اپوزیشن کے ان الزامات کو مستردکردیا کہ حکومت نے مخلوعہ جائیدادوں کی تعداد میں کمی کردی ہے۔ انہوں نے کہا کہ انتخابی منشور میں ٹی آر ایس نے نوجوانوں کے ساتھ جو وعدہ کیا ہے اس پر عمل ہوگا اور ٹی آر ایس نے کوئی دھوکہ نہیں دیا برخلاف اس کے کانگریس نے گزشتہ 10برسوں میں نوجوانوں کو دھوکا دیا ہے۔ انہوں نے سوال کیا کہ دس برسوں میں کانگریس نے تقررات کیوں نہیں کئے۔ انہوں نے کہا کہ کنٹراکٹ ملازمین دراصل کانگریس کی دین ہیں۔ وزیر فینانس نے اپوزیشن سے مسائل کی یکسوئی کے سلسلہ میں سیاست سے بالاتر ہونے کی اپیل کی۔ وقفہ سوالات کے دوران تلگودیشم کے آر کرشنیا نے الزام عائد کیا کہ حکومت 2 لاکھ مخلوعہ جائیدادوں پر تقررات سے گریز کررہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ریاست میں 2لاکھ مخلوعہ جائیدادیں ایسی ہیں جو منظورہ جائیدادیں ہیں اور ان پر تقررات سے سرکاری خزانہ پر کوئی بوجھ نہیں پڑے گا۔ انہوں نے بتایا کہ اساتذہ کی جائیدادیں بھی مخلوعہ ہیں اور حکومت نے ڈی ایس سی کے انعقاد کا بارہا دعویٰ کیا لیکن اس پر عمل نہیں کیا گیا۔ کرشنیا کے مطابق 5لاکھ سے زائد مختلف زمروں کے اہل ٹیچرس ڈی ایس سی کا انتظار کررہے ہیں اور ریاست میں 40ہزار اساتذہ کی جائیدادیں مخلوعہ ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اساتذہ کی کمی کے سبب سرکاری مدارس میں تعلیم ترک کرنے کا رجحان زیادہ ہے اور معیار تعلیم بھی متاثر ہورہا ہے۔ انہوں نے مخلوعہ جائیدادوں پر اندرون چھ ماہ تقررات کیلئے قانون سازی کا مطالبہ کیا۔ کانگریس کے ڈاکٹر چناریڈی نے حکومت پر بیروزگار نوجوانوں کو نظر انداز کرنے کا الزام عائد کیا۔ کانگریس کے اتم کمار ریڈی نے گزشتہ اسمبلی میں مخلوعہ جائیدادوں سے متعلق اعداد و شمار کا حوالہ دیتے ہوئے بتایا کہ حکومت نے آج کے اجلاس میں اپنا موقف تبدیل کرلیا ہے جو ایوان کی توہین کے مترادف ہے۔ ایک مرحلہ پر تلگودیشم اور کانگریس ارکان نے اسپیکر کے پوڈیم کے پاس پہنچ کر احتجاج کیا۔

TOPPOPULARRECENT