Friday , August 18 2017
Home / سیاسیات / اندور میں سی پی ایم کارکنوں کی گرفتاری

اندور میں سی پی ایم کارکنوں کی گرفتاری

پولیس انکاؤنٹر کی سپریم کورٹ کو زیرنگرانی، تحقیقات کا مطالبہ
بھوپال ۔ 7 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) سی پی ایم نے آج بھوپال کے قریب سیمی کے 8 کارکنوں کے مبینہ انکاؤنٹر واقعہ کی سپریم کورٹ کی زیرنگرانی تحقیقات کے مطالبہ پر اندور میں احتجاجی مظاہرے قبل پارٹی کارکنوں اور دیگر کی گرفتاری پر حکومت مدھیہ پردیش کو تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔ سی پی ایم پولیٹ بیوو سبھاشنی علی نے ایک صحافتی بیان میں کہا کہ ریاست میں بی جے پی حکومت، عوام کی آواز دبادینے کی کوشش میں ہے۔ انہوں نے اندور میں 5 نومبر کو احتجاجی مظاہرہ کرنے سے قبل ہی سی پی ایم اور حقوق انسانی کارکنوں کوگرفتار کرلیا گیا جوکہ بھوپال پولیس انکاؤنٹر کی سپریم کورٹ کی زیرنگرانی تحقیقات کا مطالبہ کررہے تھے اور یہ مظاہرہ این ڈی ٹی وی نیوز چیانل پر تحدیدات کے خلاف بھی تھا۔ اس مظاہرہ کی قیادت 90 سالہ آنند موہن ماتھر، سابق ایڈوکیٹ جنرل اور سینئر وکیل کرنے والے تھے۔ احتجاج سے قبل ہی پولیس کارروائی کرتے ہوئے سی پی ایم آفس میں داخل ہوئی اور وہاں موجود تمام لوگوں کو غیرجمہوری طریقہ سے گرفتار کرلیا گیا  جبکہ ماتھر کو ان کے مکان میں زبردستی ڈھکیل دیا گیا اور پولیس نے ان کے ڈرائیور سے کار کی چابی چھین لیں حتیٰ کہ اندور میں احتجاج کے مقام ریگل اسکوائر کا پولیس نے محاصرہ کرلیا۔

TOPPOPULARRECENT