Tuesday , August 22 2017
Home / شہر کی خبریں / انسداد غیر مجاز تعمیرات کے لیے ٹاون پلاننگ ٹریبونل کے فوری قیام کی ضرورت

انسداد غیر مجاز تعمیرات کے لیے ٹاون پلاننگ ٹریبونل کے فوری قیام کی ضرورت

سیاسی سرپرستی کی بلڈر لابی کی رکاوٹ ، حکومت کی کوتاہی سے بلڈرس کے حوصلے بلند
حیدرآباد۔9۔جنوری (سیاست نیوز) حکومت کی جانب سے مجلس بلدیہ عظیم تر حیدرآباد کے حدود میں غیر مجاز تعمیرات کو روکنے کیلئے ٹاؤن پلاننگ ٹریبونل کے قیام کی منصوبہ بندی اور جلد تشکیل کا اعلان کیا گیا تھا لیکن اس اعلان کے بعد 6ماہ کا عرصہ گذر گیا لیکن اس پر کوئی پیشرفت نہ ہونے پر جاریہ اسمبلی سیشن میں پیش کئے گئے بل کے بعد آثار نمایاں ہونے لگے ہیں۔ جی ایچ ایم سی کے اعلی عہدیداروں کے بموجب حکومت نے جب ٹاؤن پلاننگ ٹریبونل کی تشکیل کا ارادہ ظاہر کیا تو اس کے فوری بعد تجاویز روانہ کردی گئیں اور جلد از جلد ٹریبونل کے قیام کی سفارش کی گئی تاکہ عدالتوں میں زیر دوراں مقدمات کو ٹریبونل منتقل کرتے ہوئے عاجلانہ یکسوئی کو یقینی بنایا جا سکے۔بتایا جاتا ہے کہ اگسٹ 2016کے اوائل میں حکومت نے مجلس بلدیہ عظیم تر حیدرآباد کے حدود میں غیر مجاز تعمیرات کی برخواستگی اور ان کے متعلق جلد فیصلوں کیلئے ٹریبونل کے قیام کا ارادہ ظاہر کرتے ہوئے اعلان کیا تھا لیکن ا س کے بعد سے اب تک کوئی پیشرفت نہ ہونے سے غیر مجاز تعمیرات کے مرتکب بلڈرس کے حوصلے بلند ہونے لگے تھے۔عہدیداروں کے بموجب غیر مجاز تعمیرات کے متعلق ہائی کورٹ میں 3263مقدمات زیر دوراں ہیں علاوہ ازیں مجلس بلدیہ عظیم تر حیدرآباد کے خلاف ہائی کورٹ میں 150سے زائد توہین عدالت کے مقدمات زیر دوراں ہیں اور لوک آیوت میں بھی اس طرح کی کئی شکایات موجود ہیں جن کی تعداد 200سے تجاوز کرچکی ہیں۔بتایا جاتا ہے کہ مجلس بلدیہ عظیم تر حیدرآباد کے قوانین میں ٹاؤن پلاننگ ٹریبونل کے قیام کی گنجائش موجود ہے اور اس سلسلہ میں حکومت کی جانب سے جلد فیصلہ کیا جا تا ہے تو ایسی صورت میں شہر میں تعمیر کی جانے والی غیر مجاز عمارتوں کے متعلق مقدمات کی عاجلانہ یکسوئی ممکن ہو سکے گی۔عدالتی اختیارات کے حامل ٹریبونل کے احکام اور ٹریبونل میں مقدمات کی سنوائی روزانہ کے اساس پر ممکن بنائی جا سکتی ہے۔حیدرآباد ہائی کورٹ نے بھی اس سلسلہ میں احکام جاری کرتے ہوئے حکومت کو ہدایت دی کہ وہ فوری مجلس بلدیہ عظیم تر حیدرآباد میں ٹاؤن پلاننگ ٹریبونل قائم کرے تاکہ عدالتوں پر سے بوجھ کم ہو سکے اور شکایت کنندگان کو مناسب فورم میں شکایت کا موقع دیا جا سکے ان احکامات کے باوجود ٹریبونل کی تشکیل میں کونسی چیز رکاوٹ ہے اس کے متعلق ماہرین کا کہنا ہے کہ سیاسی سرپرستی کی حامل بلڈر لابی اس طرح کے کسی بھی ٹریبونل کی تشکیل کی مخالف ہے جو تعمیرات پر فوری اثر کے ساتھ امتناع عائد کرنے یا غیر مجاز تعمیرات کو منہدم کرنے کی ہدایت دینے کا مجاز ہو۔اسی وجہ سے حکومت اور بلدیہ کی جانب سے ٹریبونل کے قیام میں کوئی دلچسپی کا مظاہرہ نہیں کیا جا رہا ہے اور شہر میں غیر مجاز تعمیرات کا سلسلہ تیزی سے جاری ہے جنہیں فوری روکا جانا ضروری ہے۔

TOPPOPULARRECENT