Friday , September 22 2017
Home / ہندوستان / انصاف کی خاطر کہیں تک بھی جاؤں گا

انصاف کی خاطر کہیں تک بھی جاؤں گا

مرحوم اخلاق کے فرزند سرتاج سیفی کا اعادہ
لکھنو ۔ 7 ۔ ڈسمبر (سیاست ڈاٹ کام) حکومت اترپردیش کے اس دعویٰ پر کہ دادری واقعہ میں جاں بحق محمد اخلاق احمد کے افراد خاندان اس واقعہ کی مزید تحقیقات کے خواہشمند نہیں ہے ۔ایک دن بعد مرحوم کے فرزند نے کہا کہ وہ حصول انصاف کیلئے کسی بھی حد تک جانے کیلئے تیار ہیں۔ ہم نے کبھی نہیں کہا کہ مزید تحقیقات کی ضرورت نہیں ہے ۔ متوفی محمد اخلاق کے فرزند سرتاج سیفی نے بتایا کہ میں نے صرف یہ کہا تھا کہ مجھے سی بی آئی تحقیقات کی ابھی کوئی ضرورت نہیں ہے لیکن انصاف کیلئے مجھے کہیں تک بھی جانا پڑا تو میں جاؤں گا۔ انہوں نے آج اپنے ٹوئیٹر پر یہ اعادہ کیا اور بتایا کہ حکومت اترپردیش کے ذریعہ کی گئی پولیس کارروائی سے ابھی تک مطمئن ہوں۔ مسٹر سرتاج سیفی جو کہ انڈین ایر فورس میں ایک سپاہی ہیں، بتایا کہ اپنا یہ پیام بذریعہ ٹوئیٹر چیف منسٹر الیکشن یادو کے آفس روانہ کردیا ہے ۔ حکومت اترپردیش کے ترجمان نے کل بتایا تھا کہ ضلع گوتم بدھ نگر میں بساڈر گاؤں کے متوطن اخلاق احمد جنہیں ماہ ستمبر میں بیف رکھنے کے شبہ میں ایک ہجوم نے مارپیٹ کر کے ہلاک کردیا تھا ۔ ان کے والدہ ، بھائیوں اور دیگر رشتہ داروں نے چیف منسٹر سے ان کی قیامگاہ پر ملاقات کی تھی اور اس کیس میں حکومت کے اقدامات اور 45 لاکھ روپئے مصارف کی ادائیگی پر طمانیت کا اظہار کیا ہے اور کہاکہ اس معاملہ میں مزید تحقیقات کی ضرورت نہیں ہے ۔ واضح رہے کہ دادری کے واقعہ پر سیاسی حلقوں میں بحث کے دوران مرکزی حکومت نے پارلیمنٹ جاریہ اجلاس میں کہا تھا کہ اگرچیکہ مرکزی وزارت داخلہ نے اس واقعہ کی تحقیقات شروع نہیں کی لیکن ریاستی حکومت سے ا یک رپورٹ طلب کی ہے۔

TOPPOPULARRECENT