Friday , August 18 2017
Home / شہر کی خبریں / انٹر میڈیٹ امتحانات ، سٹی کالج امتحانی مرکز میں ناقص صاف صفائی

انٹر میڈیٹ امتحانات ، سٹی کالج امتحانی مرکز میں ناقص صاف صفائی

حالات انتہائی ناگفتہ بہ ، کالج بیت الخلاء سے محروم ، سوچھ بھارت ابھیان کی ضرورت
حیدرآباد۔3 مارچ (سیاست نیوز) انٹر میڈیٹ امتحانات کا سلسلہ جاری ہے اور طلبہ جوش و خروش کے ساتھ امتحانات میں شرکت کررہے ہیں لیکن پرانے شہر میں واقع تاریخی سٹی کالج میں امتحان تحریر کرنے والے انٹرمیڈیٹ امیدواروں کی حالت انتہائی نا گفتہ بہ ہے ۔ سٹی کالج کی عمارت میں جو امتحانی مرکز قائم کیا گیا ہے اس مرکز میں جو صورتحال ہے وہ کسی بھی اعتبار سے امتحانی مرکز کی صورتحال نہیں کہی جا سکتی کیونکہ اس تاریخی کالج میں جو سنٹر ہے اس میں نہ صاف صفائی کا کوئی انتظام ہے اور نہ ہی کوئی مناسب فرنیچر طلبہ کو فراہم کیا گیا ہے۔ دونوں شہروں حیدرآباد و سکندرآباد میں معروف اس کالج کے امتحانی مرکز کی یہ حالت ہے تو دیگر سرکاری کالجس میں قائم مراکز کی حالت زار کا اندازہ لگانا دشوار نہیں ہے۔ پرانے شہر میں واقع اس کالج میں جن طلبہ کیلئے امتحانی مرکز قائم کیا گیا ہے وہ طلبہ خود کو سب سے زیادہ بد نصیب تصور کر رہے ہیں کیونکہ ان طلباء و طالبات کو کالج میں بیت الخلاء کی بھی معیاری سہولت دستیاب نہیں ہے ۔ انٹر میڈیٹ کا امتحان تحریر کر رہے اس مرکز کے طلبہ نے بتایا کہ کالج میں ہی مناسب صفائی کا انتظام نہیں ہے اور نہ ہی بیٹھنے کیلئے کوئی مناسب فرنیچر موجود ہے جس کے سبب انہیں کافی مایوسی ہورہی تھی لیکن جب بیت الخلاء کی ضرورت کا احساس ہوا تب پتہ چلا کہ اس کالج میں بڑے پیمانے پر سوچھ بھارت ابھیان کی ضرورت ہے۔حکومت کی جانب سے ملک اور ریاست کے علاوہ مجلس بلدیہ عظیم تر حیدرآباد میں سوچھ بھارت‘ سوچھ تلنگانہ اور سوچھ حیدرآباد کی مہم چلائی جا رہی رہے لیکن شائد حکومت کو یہ سرکاری کالج نظر نہیں آیا کیونکہ انٹرمیڈیٹ کے اس امتحانی مرکز میں گذشتہ تین یوم سے امتحانات کے جاری رہنے کے باوجود بھی اب تک صفائی نہیں ہو پائی ہے اور نہ ہی فرنیچر کے متعلق کوئی حکمت عملی اختیار کی گئی ہے۔ اس مرکز پر خدمات انجام دینے والے اساتذہ ‘ ممتحن اور نگران نے بھی اس بات کی شکایت کی ہے کہ اس امتحانی مرکز کی حالت انتہائی ابتر ہے جس کے سبب طلبہ کے امتحان متاثر ہونے کے ساتھ ساتھ خدمات انجام دینے والوں کو بھی شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ بتایا جاتا ہے کہ امتحانی مرکز کی اس صورتحال سے مجاز عہدیداروں کو واقف کروائے جانے کے باوجود حالات جوں کے توں ہیں جبکہ ماہرین تعلیم کا کہنا ہے کہ امتحانات کے لئے طلبہ کو بہترین صاف ستھرا ماحول فراہم کیا جانا از حد ضروری ہے کیونکہ طلبہ کے ذہن اطراف و اکناف کے ماحول کے اثرات فوری قبول کرنے لگتے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT