Sunday , April 23 2017
Home / شہر کی خبریں / اوقافی اراضی کے تحفظ کیلئے قانونی لڑائی میں تیزی

اوقافی اراضی کے تحفظ کیلئے قانونی لڑائی میں تیزی

درگاہ حضرت حسین شاہ ولی ؒ کی اراضی سے متعلق سپریم کورٹ میں مقدمہ کی پیشرفت کا جائزہ
حیدرآباد۔6 مارچ (سیاست نیوز) تلنگانہ وقف بورڈ نے درگاہ حضرت حسین شاہ ولیؒ کی اوقافی اراضی کے تحفظ کے سلسلہ میں قانونی لڑائی میں تیزی پیدا کرنے اور ضرورت پڑنے پر وکلاء کی تبدیلی کا فیصلہ کیا ہے۔ اس سلسلہ میں حکومت کے مشیر اقلیتی امور اے کے خان کے پاس آج جائزہ اجلاس منعقد ہوا جس میں صدرنشین وقف بورڈ محمد سلیم، سکریٹری اقلیتی بہبود سید عمر جلیل، چیف ایگزیکٹیو آفیسر وقف بورڈ محمد اسد اللہ اور وقف بورڈ کی خاتون رکن صوفیہ بیگم نے شرکت کی۔ اجلاس میں سپریم کورٹ میں جاری مقدمہ کی پیشرفت کا جائزہ لیا گیا۔ صدرنشین وقف بورڈ نے بتایا کہ مختلف تجاویز کو منظور دی گئی ہے تاہم انہیں وقف بورڈ کے اجلاس میں رکھتے ہوئے باقاعدہ فیصلے کیئے جائیں گے۔ انہوں نے بتایا کہ اراضی کے تحفظ کے لیے درکار ہر ممکن اقدامات کئے جائیں گے اور سپریم کورٹ میں وقف بورڈ کے ایڈوکیٹ آن ریکارڈ کو حیدرآباد مدعو کرتے ہوئے ان سے تفصیلات حاصل کی جائیں گی۔ واضح رہے کہ گزشتہ ماہ درگاہ حضرت حسین شاہ ولیؒ کی اراضی سے متعلق سپریم کورٹ میں سماعت مقرر تھی تاہم خانگی کمپنیوں کے وکلاء کی خواہش پر آئندہ سماعت 8 ہفتوں کے لیے ملتوی کردی گئی۔ مقدمہ کی یکسوئی میں تاخیر کے سبب منی کونڈا میں اسلامک سنٹر کی تعمیر کا مسئلہ بھی تعطل کا شکار ہوچکا ہے۔ صدرنشین وقف بورڈ جناب محمد سلیم نے بتایا کہ بورڈ کے ایڈوکیٹ آن ریکارڈ کے علاوہ حیدرآباد سے نمائندگی کرنے والے ایڈوکیٹ سے بھی بات چیت کی جائے گی۔ وقف بورڈ میں موجود ایڈوکیٹ ارکان سے بھی رائے حاصل کی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ اس بات کی کوشش کی جارہی ہے کہ سپریم کورٹ میں مقدمہ کی عاجلانہ سماعت ہو تاکہ وقف بورڈ کو اوقافی اراضی کے حصول میں مدد ملے۔ بورڈ کو اس بات کا اختیار رہے گا کہ وہ اگر چاہے تو وکلاء کو تبدیل کرسکتا ہے۔ جائزہ اجلاس میں اسلامک سنٹر کی تعمیر میں حائل قانونی رکاوٹوں اور دیگر امور کے سلسلہ میں حکومت کے مشیر نے وضاحتیں طلب کی ہیں۔ صدرنشین وقف بورڈ کے مطابق بورڈ کے آئندہ اجلاس میں اہم اوقافی اراضیات سے متعلق امور کا جائزہ لیا جائے گا۔ بورڈ کے اجلاس کی تاریخ کا تعین ابھی نہیں ہوا کیوں کہ حکومت کی جانب سے صدرنشین کے رینک اور اختیارات کے بارے میں جی او کی اجرائی باقی ہے۔ اسی دوران جناب محمد سلیم نے بورڈ کے عہدیداروں کو ہدایت دی کہ وہ اوقافی جائیدادوں کے سلسلہ میں عوام سے ملنے والی شکایات و نمائندگیوں پر فوری کارروائی کریں۔ انہوں نے کہا کہ عام طور پر یہ تاثر پایا جاتا ہے کہ وقف بورڈ میں مسائل کی یکسوئی میں تاخیر کی جاتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ بورڈ کے عہدیداروں اور ملازمین کو یہ تاثر تبدیل کرتے ہوئے کارکردگی کے ذریعہ اوقافی جائیدادوں کے تحفظ کو یقینی بنانا ہوگا۔ جناب محمد سلیم نے کہا کہ وہ وقف بورڈ کی کارکردگی میں بہتری کے ساتھ ساتھ ملازمین کے لیے تمام درکار سہولتوں کی فراہمی کے اقدامات کریں گے تاکہ بورڈ کی کارکردگی کا معیار بہتر ہوسکے۔ شہر کے مختلف علاقوں اور اضلاع سے تعلق رکھنے والے اداروں کے نمائندوں نے آج حج ہائوز پہنچ کر جناب محمد سلیم کو صدرنشین منتخب ہونے پر مبارکباد پیش کی۔ تنظیم کے ذمہ داروں نے امید ظاہر کی کہ سابق کی طرح جناب محمد سلیم کی کارکردگی وقف بورڈ کا نام روشن کرے گی اور اوقافی جائیدادوں کے تحفظ میں مدد ملے گی۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT