Saturday , July 22 2017
Home / شہر کی خبریں / اوقافی جائیدادوں کے تحفظ کے لیے دو خصوصی ٹاسک فورس ٹیمیں تشکیل

اوقافی جائیدادوں کے تحفظ کے لیے دو خصوصی ٹاسک فورس ٹیمیں تشکیل

ناجائز قبضوں کی برخاستگی اور جائیدادوں کے کرایہ جات کی اصولی ، ٹیمیں اضلاع کا بھی دورہ کریں گی
حیدرآباد ۔ 9۔ مئی (سیاست نیوز) اوقافی جائیدادوں کے تحفظ ، ناجائز قبضوں کی برخواستگی اور جائیدادوں کے کرایہ جات وصول کرنے کیلئے دو خصوصی ٹاسک فورس ٹیمیں تشکیل دی گئی ہیں، جنہیں نئی گاڑیاں فراہم کی گئیں۔ صدرنشین تلنگانہ وقف بورڈ محمد سلیم نے آج دونوں گاڑیوں کو جھنڈی دکھاکر روانہ کیا۔ یہ ٹاسک فورس ٹیمیں نہ صرف حیدرآباد بلکہ اضلاع کا دورہ کرتے ہوئے اوقافی جائیدادوں کا تحفظ کریں گی۔ ایک ٹیم میں تقریباً 5 عہدیدار شامل ہوں گے ، جن میں سرویئر، وقف انسپکٹر اور دیگر افراد رہیں گے۔ جس علاقہ سے بھی اوقافی جائیداد پر قبضہ کے بارے میں شکایت موصول ہوگی ، ٹاسک فورس ٹیم فوری روانہ ہوجائے گی۔ صدرنشین وقف بورڈ محمد سلیم نے میڈیا کے نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ اوقافی جائیدادوں کی تباہی کو روکنے کیلئے یہ منفرد ٹیمیں تشکیل دی گئی ہیں۔ یہ ٹیمیں ہمیشہ اپنی خدمات کیلئے تیار رہیں گی۔ ان میں شامل عہدیدار وقف ایکٹ پر عبور رکھنے والے ہوں گے اور پولیس اور ریونیو میں شکایت درج کرنے کے طریقہ کار سے بھی واقف رہیں گے۔ انہوں نے بتایا کہ دو نئی گاڑیاں اس مقصد سے خریدی گئی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ٹاسک فورس ٹیمیں اوقافی جائیدادوں کے کرایے حاصل کرنے کیلئے بھی خصوصی مہم کا آغاز کریں گے۔ وقف بورڈ نے رمضان المبارک سے قبل کرایہ جات کی وصولی کیلئے خصوصی مہم چلانے کا فیصلہ کیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ شہر میں کئی اہم اوقافی جائیدادوںکے کرایہ وقف بورڈ کو حاصل نہیں ہورہے ہیں۔ اس کے علاوہ اضلاع میں بھی کرایوں کی وصولی کی رفتار غیر اطمینان بخش ہے۔ ٹاسک فورس ٹیموں کے ذریعہ کرایہ داروں کو بروقت کرایہ ادا کرنے کیلئے راضی کیا جائے گا ۔ انہوں نے کہا کہ وقف بورڈ میں آمدنی کم اور خرچ زیادہ ہورہا ہے۔ گزشتہ برسوں میں کرایوں سے وصول ہونے والی آمدنی کافی حد تک گھٹ چکی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ کرایہ جات کے از سر نو تعین کے لئے قائم کردہ رینٹ ریویو کمیٹی کا احیاء عمل میں آئے گا ۔ کمیٹی کے بعض فیصلوں کو کرایہ داروں میں قبول کرنے سے انکار کردیا ہے ۔ ایسے کرایہ داروں سے بات چیت کرتے ہوئے درمیانی حل تلاش کیا جائے گا۔ صدرنشین وقف بورڈ نے کہا کہ مارکٹ ریٹ کے اعتبار سے کرایہ جات کی وصولی کی صورت میں بورڈ کی آمدنی میں خاطر خواہ اضافہ ہوسکتا ہے ۔ انہوں نے ٹاسک فورس ٹیم میں شامل عہدیداروں سے کہا کہ وہ اوقافی جائیدادوں کے تحفظ کے سلسلہ میں سنجیدگی کا مظاہرہ کرے۔ انہوں نے کہا کہ اوقافی جائیدادیں دراصل اللہ تعالیٰ کی جائیدادیں ہیں اور ہر کسی کو مذہبی جذبہ کے ساتھ ان کا تحفظ کرنا چاہئے۔ چیف اگزیکیٹیو آفیسر ایم اے منان فاروقی نے کہا کہ ٹاسک فورس ٹیموں کی تشکیل سے بورڈ کو بڑی حد تک مدد ملے گی۔ روزانہ کسی نہ کسی جائیداد کے بارے میں شکایت موصول ہوتی ہے ، لہذا ان ٹیموں کو فوری روانہ کیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ اضلاع میں موجود وقف کامپلکسوں کے کرایہ داروں سے بات چیت کی جارہی ہے ، تاکہ تنازعات کی یکسوئی ہو۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT