Wednesday , September 20 2017
Home / کھیل کی خبریں / اولمپک میڈل کیلئے کوئی کسر نہیں چھوڑوں گی: دیپا

اولمپک میڈل کیلئے کوئی کسر نہیں چھوڑوں گی: دیپا

اندراگاندھی انڈور اسٹیڈیم میں دستیاب سہولیات سے مطمئن
نئی دہلی ۔21اپریل ( سیاست ڈاٹ کام) اولمپک میں ملک کی نمائندگی کا دیرینہ خواب حاصل کرنے والی اور ہندوستان کیلئے تاریخ بنانے والی جمناسٹک دیپا کرماکر نے آج کہا ہے کہ وہ رواں برس ریو اولمپکس میں میڈل کے حصول کیلئے کوئی کسر باقی نہیں چھوڑیں گی ۔ برازیل کے شہر ریو میں منعقدہ اولمپک کوالیفائنگ ایونٹ میں شاندار مظاہرہ کرنے والی ہندوستانی اتھیلیٹ دیپا آج صبح دہلی پہنچی ہیں‘ جہاں ان کا شاندار استقبال کیا گیا ہے ۔ ہندوستان پہنچنے کے بعد میڈیا نمائندوں سے اظہار خیال کرتے ہوئے 22سالہ دیپا نے کہا ہے کہ جب میں نے جمناسٹک کا آغاز کیا تب سے ہی میں اولمپکس میں شرکت کی خواہشمند رہی ہوں اور مجھے خوشی ہے کہ میں اب اولمپک کیلئے کوالیفائی ہوچکی ہوں ۔ علاوہ ازیں میں ہندوستان کیلئے میڈل لانے میں کوئی کسر باقی نہیں چھوڑوں گی ۔ دیپانے مزید کہا ہے کہ وہ اب وہ پہلے سے کہیں زیادہ سخت محنت کریں گی اور انہیں امید ہیکہ ریو اولمپکس میں وہ ہندوستان کیلئے میڈل حاصل کرے گی اور ایک نئی تاریخ بنائیں گی ۔ 36برس بعد اولمپکس میں رسائی حاصل کرنے والی ہندوستانی اتھیلیٹ نے کہا ہے کہ ریو اولمپکس میں ہندوستان کیلئے میڈل حاصل کرنا ان کا مقصد ہے ۔ تریپورہ سے تعلق رکھنے والی خاتون اتھیلیٹس سے جب سوال کیا گیا کہ کوالیفائی ایونٹ میںشرکت کیلئے ان کی تیاریاں کیسی تھی ‘ تو انہوں نے کہا کہ گذشتہ نومبر میں ورلڈ چمپئن شپ میں شرکت کی ان کی خواہش تھی لیکن کوالیفائنگ ایونٹ میں وہ پانچواں مقام ہی حاصل کرپائی ۔ جس کے بعد انہوں نے ریو میں رسائی پر تمام تر توجہ مرکوز کردی تھی ۔ دیپا نے مزید کہا کہ سب سے پہلے ان کا مقصد ریو اولمپک میں کسی بھی قیمت پر رسائی کا تھا اور وہ کافی خوش ہیںکہ انہوں نے اولمپکس میں رسائی حاصل کرلی ہے

۔ دیپا کوالیفائی ایونٹ میں 52.698 نشانات حاصل کئے جس کی بدولت وہ نہ صرف اولمپک میں شرکت کی اہل قرار دی گئیں بلکہ 52 برس کے طویل عرصہ کے بعد ہندوستان سے اولمپک میں اپنے ملک کی نمائندگی کرنے والی پہلی اتھیلیٹ بنی ہے ۔ ہندوستان کو آزادی ملنے کے بعد سے تاحال 11ہندوستانی مرد اتھیلیٹ نے اولمپکس میں ملک کی نمائندگی کی ہے جیسا کہ 1952ء دو ‘ 1956 تین اور 1964میں چھ اتھیلیٹس نے اپنے ملک کی نمائندگی کی تھی جس کے بعد دیپا اب ایسی پہلی ہندوستانی جمناسٹ ہوں گی جو ریو اولمپک میں ملک کی نمائندگی کررہی ہوگی ۔ دیپا نے کہا کہ وہ کوئی اسٹار نہیں ہے اور نہ ہی وہ اس زاویہ سے کچھ سوچتی ہے بلکہ ان کا کام صرف سخت محنت کرنا ہے اور ملک کیلئے اعزاز حاصل کرنا ہے ۔ دیپا نے اعتراف کیاہے کہ فوری طور پر ان کا مقصد اولمپک میں کامیابی حاصل کرنا ہے اور وہ اپنی تمام تر توجہ اسی مقصد کے حصول پر مرکوز کرچکی ہیں ۔ اسپورٹس اتھاریٹی آف انڈیا کی جانب سے فراہم کی جانے والی سہولیات اولمپک میں میڈل حاصل کرنے کیلئے کافی ہیں ؟ اس سوال کا جواب دیتے ہوئے اندرا گاندھی انڈو ر اسٹیڈیم میں موجودہ انفراسٹرکچر اطمینان بخش ہے اور اُمید ہے کہ یہاں دستیاب سہولیات کے ذریعہ وہ بہتر پریکٹس کر پائیں گی ۔ دوسری جانب اسپورٹس اتھاریٹی آف انڈیا نے مجھ سے وعدہ بھی کیا ہے کہ وہ اندرون چند یوم یہاں اسپرنگ بورڈ نصب کریں گے ۔ دیپا نے کہا ہے کہ اب ان کی تمام تر توجہ اپنی سخت محنت پر مرکوز ہوچکی ہیں تاکہ ریو اولمپک میں ہندوستان کیلئے اعزاز حاصل کیا جائے اوراس کیلئے وہ ہر ہندوستانی سے نیک تمناؤں کی اُمید بھی رکھتی ہیں ۔

TOPPOPULARRECENT