Saturday , September 23 2017
Home / اضلاع کی خبریں / اوورسیز اسکالر شپ کی اجرائی میں تساہلی

اوورسیز اسکالر شپ کی اجرائی میں تساہلی

ضلع کریم نگر کے طلبہ دفاتر کے چکر کاٹنے پر مجبور، امدادی رقم میں اضافہ کی ستائش
جگتیال۔/10اگسٹ، ( سیاست ڈسٹرکٹ نیوز) تلنگانہ حکومت اقلیتوں کی تعلیمی ترقی کیلئے انہیں دیگر بچھڑے طبقات کے مماثل تعلیمی امداد فراہم کرنے کا فیصلہ کرتے ہوئے گذشتہ سال حکومت کی جانب سے احکامات جاری کرتے ہوئے اوورسیز اسکالر شپ بیرون ممالک تعلیم حاصل کرنے والے طلباء کیلئے 10لاکھ روپئے کی منظوری عمل میں لائی ، جس کے تحت طلباء کو پہلی قسط نصف رقم 5 لاکھ اور ایک طرفہ ایر ٹکٹ کی رقم جاری کی گئی ۔ لیکن محکمہ اقلیتی بہبود ضلع کریم نگر میں عہدیداروں کی لاپرواہی اور تساہلی کا شکار ہیں۔ حکومت کی جانب سے دوسری قسط کی اجرائی عمل میں آکر کئی دن کا عرصہ ہورہا ہے ابھی تک ضلع کریم نگر بیرون ممالک زیر تعلیم طلباء کے اکاؤنٹس میں رقم جمع نہیں کی گئی ہے۔ جبکہ حکومت کی جانب سے فوری طلباء کے اکاؤنٹس میں رقم جمع کرنے کے احکامات جاری کئے گئے۔ باوجود اس کے ضلع کریم نگر محکمہ اقلیتی بہبود کے عہدیداران پر کسی قسم کا کوئی اثر نہیں اور یہی نہیں بعض طلباء کو پہلی قسط میں 5 لاکھ روپیوں کے بجائے تین لاکھ روپئے ہی منظور کئے گئے۔ دریافت کرنے پر طلباء کی جانب سے غلطی بتائی جارہی ہے اب جبکہ طلباء کو مکمل 10لاکھ روپیوں کی منظوری کے مکتوب وصول ہوئے ہیں لیکن ابھی دوسری قسط جاری نہیں کی گئی۔ گذشتہ سال کے طلباء کا یہ حال ہے تو اس تعلیمی سال منظور شدہ طلباء کو کسی قسم کی رقم جاری نہیں ہوئی ہے۔ گذشتہ روز حکومت کی جانب سے بیرون ملک تعلیم حاصل کرنے والے طلباء اوورسیز اسکالر شپ کی امداد میں دس لاکھ سے بڑھا کر 20لاکھ روپئے کردی گئی ہے تلنگانہ حکومت کا قابل ستائش اقدام ہے وہیں اقلیتی بہبود کے عہدیداران کی لاپرواہی سے طلباء اور اولیائے طلباء کو مشکلات کا سامنا ہے۔ تلنگانہ حکومت نے پیشہ وارانہ کورسیس میں اقلیتی طلباء کیلئے ایمسیٹ کی 10 ہزار رینک کی حد کو ختم کردیاہے اور دیگر اہلیتی امتحانات میں بھی 10 ہزار رینک کے طلباء کو 35000 روپئے ادا کئے جاتے تھے اور فیس کی باقی رقم طلباء کو ادا کرنی پڑتی تھی لیکن حکومت نے اس حد کو بھی ختم کردیا ہے اور مکمل فیس حکومت ادا کرنے کا جو قدم اٹھائی ہے قابل ستائش ہے لیکن یہاں  قابل غور بات یہ ہے کہ ریاستی حکومت فیس کے بقایا جات کی رقم کالجس کو کبھی کے ادا کردی ہے بیرون ملک جانے کیلئے طلباء نے اسنادات کے حصول کیلئے کالج سے رجوع ہونے پر کالج فیس 35000 روپئے ادا کرنے پر سرٹیفکیٹ ادا کئے گئے اور حکومت سے ادا کرنے کے بعد واپس کرنے کا وعدہ کرتے ہوئے رسید دی گئی لیکن ایک سال کا عرصہ ہورہا ہے۔ مفخم جاہ انجینئرنگ کالج کے طلباء کی ادا کردہ فیس حکومت سے ملنے کے باوجود واپس لوٹانے اولیاء طلباء کو بہانے بناکر ستارہے ہیں۔ ارباب مجاز اس جانب توجہ دے کر طلباء کی جانب سے ادا کردہ فیس کو واپسی کیلئے اقدامات کرتے ہوئے کالج انتظامیہ کو احکامات جاری کریں۔

TOPPOPULARRECENT