Wednesday , August 16 2017
Home / شہر کی خبریں / اوورسیز اسکالر شپ کی امداد کو 20 لاکھ روپئے کردیا گیا

اوورسیز اسکالر شپ کی امداد کو 20 لاکھ روپئے کردیا گیا

جی او 29 جاری ، پیشہ وارانہ کورسیس میں داخلہ کے لیے فیس کی مکمل ادائیگی
حیدرآباد ۔ 9۔ اگست (سیاست  نیوز) تلنگانہ حکومت نے اقلیتوں کے تعلیمی ترقی کیلئے انہیں ایس سی ، ایس ٹی طبقات کے مماثل تعلیمی امداد فراہم کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ حکومت کی جانب سے جاری کردہ دو علحدہ احکامات کے مطابق اوورسیز اسکالرشپ کی امداد کو 10 لاکھ روپئے سے بڑھاکر 20 لاکھ روپئے کردیا گیا۔ ایس سی طبقہ کے طلبہ کو 20 لاکھ روپئے اس اسکیم کے تحت جاری کئے جاتے ہیں، حکومت نے یہ سہولت اقلیتی طلبہ کو فراہم کرنے کا فیصلہ کیا جس کے تحت بیرون ملک یونیورسٹیز میں پوسٹ گریجویشن اور ڈاکٹریٹ کے کورسس میں داخلہ حاصل کرنے والے اقلیتی طلبہ کو جاریہ تعلیمی سال سے 10 لاکھ کے بجائے 20 لاکھ روپئے ادا کئے جائیں گے ۔ یہ رقم دو مرحلوں میں جاری کی جائے گی۔ محکمہ اقلیتی بہبود کی جانب سے اس سلسلہ میں آج جی او ایم 29 جاری کیا گیا۔ اسی طرح حکومت نے ایس سی ، ایس ٹی طلبہ کے مماثل اقلیتی طلبہ کو بھی رینک کی حد کی بغیر فیس باز ادائیگی کی رقم جاری کرنے کا فیصلہ کیا ہے ۔ سابق میں اقلیتی طلبہ کیلئے 10,000 رینک کی حد مقرر کی گئی تھی لیکن اب اقلیتی طلبہ کیلئے اس حد کو ختم کردیا گیا ہے اور تمام اقلیتی طلبہ اس سہولت سے استفادہ کرپائیں گے۔ ایمسٹ اور دیگر اہلیتی امتحانات میں 10,000 رینک کے طلبہ کو 35,000 روپئے ادا کئے جاتے تھے اور فیس کی باقی رقم طلبہ کو ادا کرنی پڑتی تھی لیکن اب اس حد کو ختم کردیا گیا ہے اور پیشہ ورانہ کورسس میں داخلہ کی اہل تمام اقلیتی طلبہ مکمل فیس حاصل کرپائیں گے۔ ڈپٹی چیف منسٹر محمد محمود علی نے آج پریس کانفرنس میں ان دونوں اسکیمات کی تفصیلات جاری کیں۔

انہوں نے چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ سے اظہار تشکر کیا کہ انہوں نے ایس سی ، ایس ٹی طبقات کے مماثل اقلیتی طلبہ کیلئے بھی مماثل سہولتیں فراہم کی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اس اسکیم پر تعلیمی سال 2015-16 ء سے عمل آوری ہوگی۔ اگر تعلیمی اداروں نے طلبہ سے زائد فیس حاصل کرلی ہیں تو اسے لوٹادیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ تعلیمی اداروں کی جانب سے طلبہ سے فیس حاصل کرنے کے بارے میں مختلف شکایات موصول ہوئی ہیں۔ اس سلسلہ میں تمام یونیورسٹیز کو اطلاع دی گئی ہے کہ وہ کالجس کو اس اقدام سے باز رکھیں۔ اضافی فیس طلبہ کو واپس کرنے کی ہدایت دی گئی ہے۔ ڈپٹی چیف منسٹر نے بتایا کہ اسکالرشپ اور فیس باز ادائیگی کیلئے 300 کروڑ روپئے جاری کئے گئے جس میں سے 219 کروڑ فیس باز ادائیگی کیلئے کالجس کو جاری کئے جاچکے ہیں  جبکہ اسکالرشپ کے لئے 48.45 کروڑ روپئے جاری کئے گئے ۔ گزشتہ تین برسوں کے اسکالرشپ اور فیس باز ادائیگی بقایہ جات جاری کئے گئے ہیں۔ اندرون ایک ہفتہ یہ رقم کالجس کے اکاؤنٹ میں پہنچ جائے گی ۔ محمود علی نے کالجس کو مشورہ دیا کہ وہ حکومت سے رقم کی وصولی کا انتظار کئے بغیر طلبہ کو ہراسانی کا سلسلہ بند کریں۔ تعلیمی سال 2012-13 ء اور 2013-14 ء کے بقایہ جات کے بارے میں بعض شبہات پائے جاتے ہیں

اور درخواستوں کے حقیقی ہونے پر رقم جاری کی جائے گی ۔ محمود علی نے کہا کہ وقف بورڈ کو جوڈیشل اختیارات کی فراہمی کے سلسلہ میں محکمہ قانون سے رائے حاص لکی گئی ہیں۔ اوقافی جائیدادوں کے تحفظ کے سلسلہ میں وقف بورڈ کو زائد اختیارات دیئے جائیں گے جس کا حکومت نے وعدہ کیا تھا ۔ انہوں نے کہا کہ محکمہ قانون سے منظوری کے بعد وقف بورڈ ایک طاقتور ادارہ میں تبدیل ہوجائے گا اور اوقافی اراضیات و جائیدادوں کے تحفظ میں کوئی رکاوٹ حائل نہیں ہوگی۔ محمود علی نے بتایا کہ چیف منسٹر کی جانب سے اسمبلی میں کئے گئے وعدہ کے مطابق منی کونڈہ میں لینکو ہلز کے قریب 800 ایکر کھلی اواقافی اراضی کو وقف بورڈ کے حوالے کیا جائے گا۔ چیف منسٹر نے اس سلسلہ میں ایوان کی کمیٹی تشکیل دینے کا اعلان کیا ہے اور توقع ہے کہ جلد ہی چیف منسٹر کے دونوں اعلانات پر عمل کیا جائے گا ۔ انہوں نے کہا کہ حکومت کو اس بات کا احساس ہے کہ اوقافی جائیدادوں کے تحفظ کیلئے بورڈ کو مضبوط کیا جانا چاہئے ۔ زائد اختیارات کے علاوہ زائد عملہ بھی فراہم کیاجائے گا۔ ایک سوال کے جواب میں ڈپٹی چیف منسٹر نے بتایا کہ ایس سی ، ایس ٹی طبقات کے مماثل فیس باز ادائیگی سے 40834 طلبہ کو فائدہ ہوگا اور حکومت پر 167 کروڑ کا زائد مالی بوجھ عائد ہوگا۔

انہوں نے کہا کہ اوورسیز اسکالرشپ کیلئے بے سہارا اور یتیم طلبہ کو ترجیح دی جائے گی جن کے سرپرستوں کی آمدنی  سالانہ دو لاکھ روپئے سے کم ہونی چاہئے ۔ اقلیتی فینانس کارپوریشن کی قرض فراہمی اسکیم کے سلسلہ میں ڈپٹی چیف منسٹر نے بتایا کہ اس اسکیم کیلئے 150 کروڑ روپئے مختص کئے گئے تاہم 2800 کروڑ مالیت کی درخواستیں داخل کی گئی ہیں۔ عہدیداروں کو ہدایت دی گئی ہیں کہ وہ ایک لاکھ سے کم قرض کی 25,000 درخواستوں کی فوری طور پر یکسوئی کردیں اور قرعہ اندازی کے ذریعہ استفادہ کنندگان کا انتخاب کیا جائے ۔ انہوں نے کہا کہ مکہ مکرمہ میں حیدرآباد رباطوں کے معاوضہ کے عوض عمارتوں کے حصول کیلئے سعودی حکام سے نمائندگی کرنے حج کے بعد اعلیٰ سطحی وفد سعودی عرب روانہ ہوگا۔ محمود علی کی قیادت میں اس وفد میں ایک کے خاں ، عمر جلیل اور ایس اے شکور شامل ہوں گے۔  محمود علی نے بتایا کہ تلنگانہ کیلئے حج کوٹہ میں اضافہ کے سلسلہ میں مرکز سے نمائندگی کی گئی ہے اور ایران کے منسوخ شدہ کوٹہ کی تقسیم کی صورت میں تلنگانہ میں مزید ایک ہزار نشستوں کا اضافہ ہوسکتا ہے ۔ انہوں نے شادی مبارک اسکیم کی تمام زیر التواء درخواستوںکی اندرون ایک ماہ یکسوئی کا تیقن دیا۔

TOPPOPULARRECENT